\u0631\u0648\u0633 \u0646\u06d2 \u06cc\u0648\u06a9\u0631\u06cc\u0646 \u06a9\u06d2 \u0627\u06cc\u06a9 \u0627\u0648\u0631 \u0627\u06c1\u0645 \u0634\u06c1\u0631 \u067e\u0631 \u0642\u0628\u0636\u06c1 \u06a9\u0631\u0644\u06cc\u0627

27/06/2022 6:50:00 AM

روسی فوج نے سیوردونیتسک پر مکمل قبضہ کرلیا ہے،یوکرین #SamaaTV #War

روسی فوج نے سیوردونیتسک پر مکمل قبضہ کرلیا ہے،یوکرین SamaaTV War

\u0631\u0648\u0633\u06cc \u0641\u0648\u062c \u0646\u06d2 \u0633\u06cc\u0648\u0631\u062f\u0648\u0646\u06cc\u062a\u0633\u06a9 \u067e\u0631 \u0645\u06a9\u0645\u0644 \u0642\u0628\u0636\u06c1 \u06a9\u0631\u0644\u06cc\u0627 \u06c1\u06d2\u060c\u06cc\u0648\u06a9\u0631\u06cc\u0646

سماء ویب ڈیسک Jun 26, 2022 یوکرین نے اعلان کیا کہ روسی فوج نے شدید لڑائی کے بعد اہم مشرقی شہر سیوردونیتسک پر مکمل طور پر قبضہ کر لیا ہے۔ ویڈیو خطاب میں یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلینسکی نے ایک مرتبہ پھر روس کے قبضے سے تمام شہر واپس لینے کا اعادہ کیا۔ ولادیمیر زیلینسکی کا کہنا تھا کہ روس کے ساتھ جنگ جذباتی طور پر مشکل مرحلے میں داخل ہو گئی اور وہ نہیں جانتے کہ انھیں مزید کتنے دھچکے اور نقصانات اٹھانے ہوں گے۔ برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق اس شہر پر روس کے قبضے کا مطلب یہ ہے کہ روس اب لوہانسک خطے کو مکمل طور پر کنٹرول کرتا ہے اور اس کے ہمسایہ دونیتسک کے بڑے علاقے پر اس کا کنٹرول ہے۔ اس سے قبل جمعے کی رات روس نے یوکرین کے شمال اور مغربی علاقوں میں میزائلوں کے ذریعے اہداف کو نشانہ بنایا جبکہ اتوار کی صبح کیئو کے میئر کے مطابق شہر میں متعدد دھماکے رپورٹ ہوئے۔.0 اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی طرف سے سلمان اکرم راجا نے اپیل دائر کی ہے—فائل فوٹو: اے پی پی اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے وفاقی شرعی عدالت کے ملک میں رائج سودی نظام کو غیرشرعی قرار دیے جانے کے فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا ہے، وفاقی شرعی عدالت نے فیصلے میں حکومت کو ہدایت کی تھی کہ دسمبر 2027 تک معاشی نظام کو سود سے پاک کیا جائے۔ اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی طرف سے سلمان اکرم راجا نے اپیل دائر کی ہے جبکہ چار نجی بنکوں نے بھی شرعی عدالت کے فیصلے کے خلاف اپیل دائر کی ہے۔ اپیل میں وزارت خزانہ، وزارت قانون، چیئرمین بینکنگ کونسل اور دیگر کو فریق بنایا گیا ہے۔ اپیل میں کہا گیا ہے کہ وفاقی شرعی عدالت نے سپریم کورٹ ریمانڈ آرڈر کے احکامات کو مد نظر نہیں رکھا۔ یہ بھی پڑھیں: سینیٹ کی قائمہ کمیٹی کا سود سے پاک اقتصادی نظام بنانے پر زور اپیل کے مطابق شرعی عدالت نے سیونگ سرٹیفکیٹس سے متعلق رولز کو خلاف اسلام قرار دیا ہے اور شرعی عدالت نےرولز میں ترمیم کا حکم دیا ہے۔ اپیل میں استدعا کی گئی ہے کہ شرعی عدالت کے فیصلہ کے خلاف اپیل کو منظور کیا جائے۔ اپیل میں مزید استدعا کی گئی ہے کہ شرعی عدالت کے فیصلہ میں اٹھائے نکات کی حد تک ترمیم کی جائے۔ خیال رہے 28 اپریل کو وفاقی شرعی عدالت نے ملک میں رائج سودی نظام کے خلاف درخواستوں پر 19سال بعد فیصلہ سناتے ہوئے اسے غیرشرعی قرار دے دیا تھا اور حکومت کو ہدایت کی تھی کہ تمام قرض سود سے پاک نظام کے تحت لیے جائیں اور دسمبر 2027 تک معاشی نظام کو سود سے پاک کیا جائے۔ مزید پڑھیں: ریاست شریعت کے مطابق قانون سازی سے کیوں ہچکچا رہی ہے، وفاقی شرعی عدالت چیف جسٹس شرعی عدالت نور محمد مسکانزئی، جسٹس محمد انور اور جسٹس خادم حسین پر مشتمل تین رکنی بینچ نے معاشی نظام کو سود سے پاک کرنے کے حوالے سے دائر درخواستوں پر کیس کی سماعت کی تھی۔ وفاقی شرعی عدالت نے کہا تھا کہ کیس میں اٹارنی جنرل سمیت تمام فریقین کی رائے لی گئی اور تمام فریقین نے سود سے پاک بینکنگ نظام کے بارے میں رائے دی۔ وفاقی شرعی عدالت نے سود کے خلاف درخواستوں پر 19 سال بعد فیصلہ سناتے ہوئے قرض ادائیگی میں تاخیر پر انٹرسٹ (سود) لینے پر پابندی عائد کردی تھی اور ویسٹ پاکستان منی لانڈر ایکٹ کو بھی خلافِ شریعت قرار دے دیا تھا۔ جسٹس سید محمد انور نے فیصلہ پڑھ کر سناتے ہوئے کہا تھا کہ معاشی نظام سے سود کا خاتمہ شرعی اور قانونی ذمہ داری ہے اور ملک سے ربا (سود) کا خاتمہ ہر صورت کرنا ہو گا۔ انہوں نے کہا تھا کہ بینکوں کی جانب سے قرض کی رقم سے زیادہ وصولی ربا کے زمرے میں آتا ہے اور اسلامی بینکاری نظام رسک سے پاک اور استحصال کے خلاف ہے۔ یہ بھی پڑھیں: سودی نظام کے خاتمے سے متعلق درخواستیں سماعت کیلئے مقرر شرعی عدالت نے حکومت کو اندرون و بیرونی قرض سود سے پاک نظام کے تحت لینے کی ہدایت کی تھی۔ عدالت نے انٹرسٹ ایکٹ 1839 اور سود کے لیے سہولت کاری کرنے والے تمام قوانین اور شقوں کو غیرشرعی قرار دیتے ہوئے قرض ادائیگی میں تاخیر پر انٹرسٹ (سود) لینے پر پابندی عائد کر دی تھی۔ شرعی عدالت نے یکم جون 2022 سے انٹرسٹ لینے سے متعلق تمام شقوں کو غیرشرعی قرار دیتے ہوئے ہدایت کی کہ حکومت تمام قوانین میں سے ’انٹرسٹ‘ کا لفظ فوری حذف کرے۔ فیصلے میں کہا گیا تھا کہ اسلامی اور سود سے پاک بینکاری نظام کے لیے پانچ سال کا وقت کافی ہے اور توقع ہے کہ حکومت سود کے خاتمے کی سالانہ رپورٹ پارلیمنٹ میں پیش کرے گی۔ فیصلے میں کہا تھا کہ اسلامی بینکنگ کا ڈیٹا عدالت میں پیش کیا گیا اور سود سے پاک بینکاری دنیا بھر میں ممکن ہے۔ انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت کی جانب سے سود سے پاک بینکنگ کے منفی اثرات سے متفق نہیں اور معاشی نظام سے سود کا خاتمہ شرعی اور قانونی ذمہ داری ہے لہٰذا وفاقی شرعی عدالت کے فیصلے پر من و عن عمل کیا جائے۔ مزید پڑھیں: وفاقی شرعی عدالت نے ’سوارہ‘ کو غیر اسلامی قرار دے دیا عدالت نے کہا تھا کہ دو دہائیاں ہو چکیں لیکن سود کے خلاف حکومتوں نے کوئی اقدامات نہیں کیے اور حکم دیا کہ وفاقی اور صوبائی حکومتیں 31 دسمبر 2022 تک قوانین میں تبدیلی کریں۔ وفاقی شرعی عدالت نے عدالتی فیصلے پر عمل درآمد کے لیے پانچ سال کا وقت دیتے ہوئے حکومت کو حکم دیا تھا کہ وہ 31 دسمبر 2027 تک ملک کا معاشی نظام سودی نظام سے پاک تشکیل دے۔ اس حوالے سے مزید کہا گیا تھا کہ سودی نظام کے خلاف قوانین کے بارے میں پارلیمنٹ میں سالانہ رپورٹس پیش کی جائیں گی۔ واضح رہے کہ وفاقی شرعی عدالت میں سودی نظام کے خلاف کیس کئی دہائیوں تک زیر سماعت رہا تھا۔ عدالت میں جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق اور کئی رہنما بھی موجود تھے، فیصلہ آتے ہی عدالت میں لوگوں نے تکبیر کے نعرے لگانا شروع کردیے تھے.0 امریکی صدر اور ان کے اتحادی ممالک روس کے حملے کے خلاف یوکرین کی مزید حمایت کا عزم کریں گے — فوٹو: اے ایف پی دنیا کی 7 اہم معیشتوں ’جی 7‘ کے سربراہان نے یوکرین کی حمایت کے عزم کا اعادہ کرتے ہوئے روس کی مالی لائف لائن کو منقطع کرنے کے لیے ماسکو سے سونے کی برآمدات پر پابندی پر اتفاق کرلیا۔ غیر ملکی خبر رساں ایجنسی ’اے ایف پی‘ کی رپورٹ کے مطابق امریکی صدر جو بائیڈن اور دنیا کے اہم صنعتی ممالک کے ان کے ہم منصب نیٹو شراکت داروں کے ساتھ بات چیت کے لیے میڈرڈ جانے سے قبل باویرین الپس کے ایلماؤ کیسل میں ملے۔ مزید پڑھیں: روس، یوکرین جنگ کے باعث پاکستان کو ایل این جی کی خریداری میں مشکلات کا سامنا امریکی صدر اور ان کے اتحادی ممالک روس کے حملے کے خلاف یوکرین کی مزید حمایت کا عزم کریں گے جبکہ جنگ کے تیز ہوتے ہوئے عالمی نتائج سے نمٹنے کے لیے بھی کوشش کریں گے۔ روس کی یوکرین کے خلاف جنگ، جو کہ اب پانچویں مہینے میں ہے، کی وجہ سے عالمی سطح پر توانائی اور اشیائے خورونوش کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے اقتصادی ترقی متاثر ہو رہی ہے اور مہنگائی اور تیز ہوتے خوراک کے بحران سے لے کر توانائی کی قلت نے دنیا کو مزید دیگر بحرانوں میں ڈھکیل دیا ہے۔ دنیا کی بڑی معیشتوں کے سربراہان معاشی بحران کے رونما ہونے کے خطرات سمیت موسمیاتی تبدیلی پر بڑھتے ہوئے دباؤ جیسے معاملات پر بات چیت کریں گے۔ اپنے مسائل کا حل تلاش کرنے کے لیے ماسکو پر دباؤ بڑھانے کی کوششوں میں اضافہ کرتے ہوئے سات بڑی معیشتوں نے روس سے درآمد ہونے والے سونے پر پابندے عائد کرنے پر رضامندی ظاہر کی ہے، جس کا دوسرا بڑا برآمد کنندہ امریکا ہے جو کہ روسی صدر ولادیمیر پیوٹن اور ان کے اتحادیوں کے لیے رونیو پیدا کرنے کا اہم ذریعہ ہے۔ وائٹ ہاؤس کے مطابق سال 2020 میں روس نے مجموعی طور پر 5 فیصد سونے کی برآمدات کی اور روس کا 90 فیصد سونا ’جی 7‘ ممالک خاص طور پر برطانیہ کے پاس گیا۔ یہ بھی پڑھیں: روس، یوکرین جنگ کئی برسوں تک جاری رہ سکتی ہے، نیٹو سربراہ ’ہار مت مانیں‘ جب سے روس نے 24 فروری کو یوکرین میں فوجی حملہ شروع کیا ہے تب سے مغربی اتحادی اس پر اپنے ردعمل کو مربوط کرنے کی جدوجہد کر رہے ہیں۔ تاہم انہوں نے روس کی معیشت کو کمزور کرنے کے لیے متعدد پابندیاں عائد کر رکھی ہیں اور روسی صدر کی افواج جنگ سے پیچھے ہٹنے سے انکاری ہیں۔ جرمنی میں بات چیت شروع ہونے سے قبل برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن نے تمام اتحادیوں پر زور دیا کہ وہ یوکرین کی حمایت سے پیچھے نہ ہٹیں۔ برطانوی وزیر اعظم نے کہا کہ یوکرین جنگ جیت سکتا ہے اور وہ ضرور جیتے گا مگر جنگ جیتنے کے لیے ان کو ہماری مدد کی ضرورت ہے اور یہ وقت نہیں ہے کہ یوکرین کی حمایت سے پیچھے ہٹیں۔ برطانیہ نے اس سال کے آخر میں عالمی بینک کے قرضے کے لیے مزید ساڑھے 52 کروڑ ڈالر کی ضمانتوں کا اعلان کیا ہے۔ اس بات کی بھی توقع کی جارہی ہے کہ پیر کو ہونے والے اجلاس میں وڈیو لنک کے ذریعے شرکت کرتے ہوئے یوکرینی صدر ولودیمیر زیلنسکی بھی اس بات کی درخواست کریں گے کہ ان کی مدد کی جائے۔ وائٹ ہاؤس میں قومی سلامتی کونسل کے ترجمان جان کربی نے کہا کہ جی 7، روس کو جوابدہ ٹھہرانے اور صدر پیوٹن اور ان کی معیشت کے خلاف جنگ کے اخراجات اور نتائج کو بڑھانے کی کوشش جاری رکھے گا۔ مزید پڑھیں: روس، یوکرین جنگ پر پاکستان ’غیر جانبدار‘ ہے، وز یر خارجہ ساتھ ہی ان کا مقصد یہ بھی ہوگا کہ تیل کی بڑھتی ہوئی قیمتوں اور جس طرح روس نے توانائی کو ہتھیار بنایا ہوا ہے اس کے اثرات کو جتنا ممکن ہو کم سے کم کیا جائے۔ جی 7 کے افتتاحی سیشن کا مرکز معاشی بحران سے پیدا ہوتی صورتحال ہوگا۔ صرف 6 ماہ قبل عالمی معیشت وبائی مرض ’کورونا وائرس‘ کے بعد تیزی سے بحالی کی طرف گامزن تھی لیکن اب معیشت بحران کی طرف بڑھ رہی ہے۔ جان کربی نے کہا کہ ہم سب کے ذہن میں جو بنیادی مسائل ہیں وہ بڑھتی ہوئی قیمتیں، عالمی سطح پر سپلائی چین میں درپیش رکاوٹیں ہیں جو کہ یوکرین میں جاری جنگ کی وجہ سے مزید بڑھ گئے ہیں۔ منظم بدلہ دنیا کی بڑی معیشتین روسی توانائی پر انحصار سے خوفزدہ ہیں جس نے جرمنی اور اٹلی سمیت متعدد یورپی ممالک کو روس کے خلاف اقدام کرنے سے روکنے کی ہر ممکن کوشش کی ہے، اس صورتحال میں اب جی 7 بھی توانائی کے لیے چین کی طرف دیکھ رہا ہے اور اس عمل کو وہ ایک ’منظم بدلے‘ کے طور پر دیکھتا ہے۔ جان کربی نے مزید کہا کہ چین کے جبری معاشی طریقوں، جبری مشقت کے استعمال اور دانشوارانہ چوری جیسے عوامل جی 7 کے سامنے اور مرکز ہیں انہوں نے کہا کہ جیسے جیسے روس اور چین سے مغربی اتحادیوں کو الگ کرنے والا خلا وسیع ہوتا جارہا ہے تو اب جی 7 دیگر بڑے کھلاڑیوں کو بھی اپنے ساتھ شامل کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ یہ بھی پڑھیں: روس-یوکرین جنگ کے نتائج پر امریکا نے پاکستان کو خبردار کردیا جرمن چانسلر اولاف شولز نے ارجنٹائن، بھارت، انڈونیشیا، سینیگال اور جنوبی افریقہ کے رہنماؤں کو بھی الپائن میں ہونے والے سربراہی اجلاس میں مدعو کیا ہے جبکہ ارجنٹائن اور انڈونیشیا نے یوکرین پر جنگ مسلط کرنے پر روس کی مذمت کے لیے اقوام متحدہ میں ووٹ دیا، تاہم باقی تین ممالک نے اس مذمتی ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا۔ تاہم یوکرین سے اناج اور گندم کی برآمدات میں رکاوٹ کی وجہ سے پیدا ہونے والے بڑھتے ہوئے بحران سے یہ تمام ممالک براہ راست متاثر ہو رہے ہیں، جس کا مثال یہ ہے کہ بھارت نے گندم کی برآمدات پر پابندی عائد کردی ہے۔.Jun 26, 2022 جی سیون ممالک روس سے سونے کی درآمد پر پابندی پر متفق ہوگئے ہیں۔ جی سیون ممالک کا تین روزہ سربراہی اجلاس اتوار سے جرمنی میں شروع ہوگیا، اس اجلاس میں یوکرین جنگ سے متعلق روس پر دباؤ بڑھانے کیلئے اہم فیصلے بھی متوقع ہیں۔ نیویارک ٹائمز کے مطابق امریکی صدر بائیڈن نے کہا ہے کہ G7 ممالک کا گروپ روس سے سونے کی درآمد پر پابندی عائد کردے گا، جی سیون رہنماؤں نے ماسکو پر دباؤ ڈالنے کے لیے روسی تیل کی قیمتوں کو محدود کرنے کے منصوبوں پر بھی تبادلہ خیال کیا ہے۔ خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق اس بات کا امکان ہے کہ G7 اجلاس میں شامل رہنما اس عزم کا اظہار کرینگے کہ جب تک ضروری ہو یوکرین کی حمایت اور روس پر دباؤ بڑھایا جائے، جی سیون رہنما توانائی کی بڑھتی ہوئی قیمتوں سے نمٹنے اور روسی تیل اور گیس کی درآمدات کو تبدیل کرنے کے اختیارات پر بھی تبادلہ خیال کریں گے۔ جب جی سیون رہنما جرمنی میں جمع تھے عین اُس وقت روس نے یوکرین کے دارالحکومت کیف پر میزائل داغے جو جی سیون رہنماؤں کیلئے واضح پیغام تھا، ان حملوں میں ایک رہائشی عمارت تباہ ہوئی جس میں ایک شخص مارا گیا، خارکیف میں بھی دھماکوں کی اطلاع ملی اور کئی دوسرے شہروں میں فضائی حملے کے سائرن سنے گئے۔ جرمنی میں ہونے والے اجلاس میں امریکا، برطانیہ، کینیڈا، فرانس، جرمنی، اٹلی، جاپان اور امریکا کے سربراہان شریک ہیں جبکہ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی بھی اجلاس میں شرکت کیلئے میونخ پہنچے ہوئے ہیں۔ اجلاس سے قبل انسانی اور سماجی حقوق کے کارکنوں نے میونخ میں مظاہرے بھی کیے، اس موقع پر حکومت نے سیکیورٹی کے لیے 18 ہزار پولیس اہلکاروں کو تعینات کیا ہے۔.

مزید پڑھ:
SAMAA TV »
Loading news...
Failed to load news.

Amazing

\u0627\u0633\u0679\u06cc\u0679 \u0628\u06cc\u0646\u06a9 \u0646\u06d2 '\u0645\u0639\u0627\u0634\u06cc \u0646\u0638\u0627\u0645 \u0633\u0648\u062f \u0633\u06d2 \u067e\u0627\u06a9 \u06a9\u0631\u0646\u06d2 \u06a9\u06d2 \u062d\u06a9\u0645' \u06a9\u0648 \u0633\u067e\u0631\u06cc\u0645 \u06a9\u0648\u0631\u0679 \u0645\u06cc\u06ba \u0686\u06cc\u0644\u0646\u062c \u06a9\u0631 \u062f\u06cc\u0627\u0634\u0631\u0639\u06cc \u0639\u062f\u0627\u0644\u062a \u06a9\u06d2 \u0641\u06cc\u0635\u0644\u06c1 \u06a9\u06d2 \u062e\u0644\u0627\u0641 \u0627\u067e\u06cc\u0644 \u06a9\u0648 \u0645\u0646\u0638\u0648\u0631 \u06a9\u06cc\u0627 \u062c\u0627\u0626\u06d2 \u0627\u0648\u0631 \u0641\u06cc\u0635\u0644\u062a\u06d2 \u0645\u06cc\u06ba \u0627\u0679\u06be\u0627\u0626\u06d2 \u06af\u0626\u06d2 \u0646\u06a9\u0627\u062a \u06a9\u06cc \u062d\u062f \u062a\u06a9 \u062a\u0631\u0645\u06cc\u0645 \u06a9\u06cc \u062c\u0627\u0626\u06d2\u060c \u0627\u067e\u06cc\u0644

\u0639\u0627\u0644\u0645\u06cc \u0637\u0627\u0642\u062a\u0648\u06ba \u06a9\u0627 \u0631\u0648\u0633 \u0633\u06d2 \u0633\u0648\u0646\u06d2 \u06a9\u06cc \u0628\u0631\u0622\u0645\u062f\u0627\u062a \u067e\u0631 \u067e\u0627\u0628\u0646\u062f\u06cc \u067e\u0631 \u0627\u062a\u0641\u0627\u0642\u0633\u0648\u0646\u06d2 \u06a9\u06cc \u0628\u0631\u0622\u0645\u062f \u0631\u0648\u0633\u06cc \u0635\u062f\u0631 \u0648\u0644\u0627\u062f\u06cc\u0645\u06cc\u0631 \u067e\u06cc\u0648\u0679\u0646 \u0627\u0648\u0631 \u0627\u0646 \u06a9\u06d2 \u0627\u062a\u062d\u0627\u062f\u06cc\u0648\u06ba \u06a9\u06d2 \u0644\u06cc\u06d2 \u0631\u0648\u0646\u06cc\u0648 \u067e\u06cc\u062f\u0627 \u06a9\u0631\u0646\u06d2 \u06a9\u0627 \u0627\u06c1\u0645 \u0630\u0631\u06cc\u0639\u06c1 \u06c1\u06d2\u06d4

\u062c\u06cc \u0633\u06cc\u0648\u0646 \u0645\u0645\u0627\u0644\u06a9 \u06a9\u0627 \u0631\u0648\u0633 \u0633\u06d2 \u0633\u0648\u0646\u06d2 \u06a9\u06cc \u062f\u0631\u0627\u0653\u0645\u062f \u067e\u0631 \u067e\u0627\u0628\u0646\u062f\u06cc \u067e\u0631 \u0627\u062a\u0641\u0627\u0642\u062c\u06cc \u0633\u06cc\u06cc\u0648\u0646 \u0631\u06c1\u0646\u0645\u0627\u0648\u0654\u06ba \u06a9\u0627 \u0631\u0648\u0633\u06cc \u062a\u06cc\u0644 \u06a9\u06cc \u0642\u06cc\u0645\u062a\u0648\u06ba \u06a9\u0648 \u0645\u062d\u062f\u0648\u062f \u06a9\u0631\u0646\u06d2 \u06a9\u06d2 \u0645\u0646\u0635\u0648\u0628\u0648\u06ba \u067e\u0631 \u0628\u06be\u06cc \u062a\u0628\u0627\u062f\u0644\u06c1 \u062e\u06cc\u0627\u0644 Indeed حیرت ہے یورپ یوکرین کا حال دیکھ بھی اپنی عقل ایک طاقتور ملک کے پاس گروی رکھ رہا ہے ذاتی مفادات کے خاطر یوکرینی عوام کو جنگ کی آگ میں دھکیل دیا!!!؟ پڑوسی تو روس ہی رہے گا ،؟

\u0686\u06cc\u0646 \u0646\u06d2 \u0641\u0648\u062c \u06a9\u06d2 \u06a9\u06c1\u0646\u06d2 \u067e\u0631 \u067e\u0627\u06a9\u0633\u062a\u0627\u0646 \u06a9\u06cc \u0627\u0645\u062f\u0627\u062f \u06a9\u06cc\u060c \u0634\u06cc\u062e \u0631\u0634\u06cc\u062f\u0634\u06c1\u0628\u0627\u0632 \u06a9\u06d2 \u06a9\u06c1\u0646\u06d2 \u067e\u0631 100 \u0631\u0648\u067e\u06d2 \u0646\u06c1\u06cc\u06ba \u0645\u0644\u062a\u06d2\u060c \u0634\u06cc\u062e \u0631\u0634\u06cc\u062f ShkhRasheed Tau apki kissi ne madad kyu nai ki ShkhRasheed Long live the Armed Forces of Pakistan, which came to work in every trouble ShkhRasheed kia is say pehlay tumharay kehnay per karta tha. . beshak army pakistan ka fakhar hai aur rahegy inshallah.

\u0627\u0628\u0631\u0627\u0631\u0627\u0644\u062d\u0642 \u0646\u06d2 \u0627\u067e\u0646\u0627 \u06af\u0627\u0646\u0627 \u0628\u06be\u0627\u0631\u062a\u06cc \u0641\u0644\u0645 \u0645\u06cc\u06ba \u0634\u0627\u0645\u0644 \u06a9\u0631\u0646\u06d2 \u067e\u0631 \u0645\u06cc\u0648\u0632\u06a9 \u06a9\u0645\u067e\u0646\u06cc \u06a9\u0648 \u0642\u0627\u0646\u0648\u0646\u06cc \u0646\u0648\u0679\u0633 \u0628\u06be\u06cc\u062c \u062f\u06cc\u0627\u06af\u0644\u0648\u06a9\u0627\u0631 \u06a9\u06cc \u062c\u0627\u0646\u0628 \u0633\u06d2 \u0628\u06be\u0627\u0631\u062a\u06cc \u0645\u06cc\u0648\u0632\u06a9 \u06a9\u0645\u067e\u0646\u06cc \u06a9\u0648 \u0642\u0627\u0646\u0648\u0646\u06cc \u0646\u0648\u0679\u0633 \u0628\u06be\u062c\u0648\u0627\u0646\u06d2 \u06a9\u0627 \u0627\u0646\u06a9\u0634\u0627\u0641 \u0645\u0630\u06a9\u0648\u0631\u06c1 \u0641\u0644\u0645 \u06a9\u06cc \u0631\u06cc\u0644\u06cc\u0632 \u06a9\u06d2 2 \u0631\u0648\u0632 \u0628\u0639\u062f \u0633\u0627\u0645\u0646\u06d2 \u0627\u0653\u06cc\u0627 \u06c1\u06d2\u06d4

\u0633\u0627\u0628\u0642 \u0648\u0632\u06cc\u0631 \u0627\u0639\u0638\u0645 \u0639\u0645\u0631\u0627\u0646 \u062e\u0627\u0646 \u0646\u06d2 \u0646\u06cc\u0628 \u0642\u0627\u0646\u0648\u0646 \u0645\u06cc\u06ba \u062a\u0631\u0627\u0645\u06cc\u0645 \u0633\u067e\u0631\u06cc\u0645 \u06a9\u0648\u0631\u0679 \u0645\u06cc\u06ba \u0686\u06cc\u0644\u0646\u062c \u06a9\u0631\u062f\u06cc\u06ba\u0646\u06cc\u0628 \u0642\u0627\u0646\u0648\u0646 \u0645\u06cc\u06ba \u06a9\u06cc \u06af\u0626\u06cc \u062a\u0631\u0627\u0645\u06cc\u0645 \u0622\u0626\u06cc\u0646\u060c \u0628\u0646\u06cc\u0627\u062f\u06cc \u062d\u0642\u0648\u0642 \u06a9\u06d2 \u0645\u0646\u0627\u0641\u06cc \u06c1\u06cc\u06ba\u060c \u062a\u0631\u0627\u0645\u06cc\u0645 \u06a9\u0648 \u06a9\u0627\u0644\u0639\u062f\u0645 \u0642\u0631\u0627\u0631 \u062f\u06cc\u0627 \u062c\u0627\u0626\u06d2\u060c \u0686\u06cc\u0626\u0631\u0645\u06cc\u0646 \u067e\u06cc \u0679\u06cc \u0627\u0653\u0626\u06cc \u06a9\u06cc \u0639\u062f\u0627\u0644\u062a \u0633\u06d2 \u0627\u0633\u062a\u062f\u0639\u0627