’بابا کا ڈھابہ‘: ریستوراں بند، بابا واپس ڈھابے پر - BBC News اردو

’بابا کا ڈھابہ‘ کے کانتا پرساد چھ ماہ بعد ہی ریستوراں بند کر کے واپس دلی کے ڈھابے پر

13/06/2021 6:24:00 PM

’بابا کا ڈھابہ‘ کے کانتا پرساد چھ ماہ بعد ہی ریستوراں بند کر کے واپس دلی کے ڈھابے پر

80 سالہ کانتا پرساد جن کی قسمت ایک وائرل ویڈیو نے بدل کر رکھ دی تھی، محض چھ ماہ بعد دلی میں سڑک کے کنارے اپنے ڈھابے میں واپس پہنچ گئے ہیں۔

مسٹر پرساد اور ان کی اہلیہ نے 1990 میں بابا کا ڈھبہ کھولا تھا۔اس ڈھابے پر یہ دونوں گھر کا بنا تازہ کھانا لے کر آتے۔ اس کھانے میں پراٹھا اور ایک خاص طرح کی گول بریڈ ہوتی جو انڈیا میں خاصی مشہور ہے، اور اس کے ساتھ سالن، دال چاول اور دال سے بنا سوپ شامل ہوتا۔ بابا کے ڈھابہ سے کوئی بھی 50 روپے سے کم میں بھی پیٹ بھر کر کھانا کھا سکتا ہے۔

وزیراعظم کا آزاد کشمیر کے بعد سندھ کو سیاسی ہدف بنانے کا فیصلہ - ایکسپریس اردو آزادکشمیر الیکشن ڈیوٹی کے دوران شہید پاک فوج کے شہدا کی نماز جنازہ ادا نور مقدم قتل کیس: ملزم ظاہر جعفر نے اعتراف جرم کر لیا

انڈیا میں سٹریٹ فوڈ بہت مقبول ہے۔ مگر کورونا وائرس نے اس کاروبار کو بری طرح متاثر کیا اور کانتا پرساد اور ان جیسے بہت سے لوگوں کو اپنا کاروبار بند کرنے پر مجبور کر دیا۔بابا کا ڈھابہ اس وقت مشہور ہو گیا جب ایک فوڈ بلاگر گوراو واسان نے انسٹا گرام پر کانتا پرساد کا ایک کلپ شیئر کیا جو وائرل ہو گیا۔ لوگوں نے اس ویڈیو پر گوراو واسان کی بھی تعریف کی جنھوں نے کانتا پرساد کی دکھ بھری داستان لوگوں تک پہنچائی۔

یہ بھی پڑھیئےدلی میں کورونا وائرس کے بڑھتے کیسز، صحت کا نظام مفلوجلیکن کانتا پرساد نے گوراو پر الزام لگایا کہ انھوں نے ان کے لیے ملنے والے فنڈز میں گڑ بڑ کی ہے یہاں تک کے گوراو کے خلاف پولیس میں شکایت تک درج کروائی۔کانتا پرساد کا کہنا ہے کہ ان سے غلطی ہوئی تھی۔ گوراو واسان بھی کہتے ہیں کہ وہ سب بھول کر آگے بڑھ چکے ہیں۔ headtopics.com

پرساد بابا کی یہ ویڈیو چار ملین سے بھی زیادہ بار دیکھی گئی۔ انکا ڈھابہ اتنا مشہور ہوا کے وہاں گاہکوں کی قطاروں کے ساتھ میڈیا اور کیمرے بھی نظر آنے لگے۔ کانتا پرساد کے انٹرویو ہونے لگے اور پورے ملک سے لوگوں نے دل کھول کر انھیں عطیات دینا شروع کیے۔مدد میں ملنے والی رقم سے کانتا پرساد نے اپنے قرضے ادا کیے، اپنے بوسیدہ گھر کی مرمت کروائی اور آٹھ لوگوں کے اپنے خاندان کا پیٹ بھرنے کے لائق بنے۔

دسمبر میں انھوں نے باقاعدہ ایک شیف اور دو ویٹروں کو لیکر ریستوراں کھولنے کا فیصلہ کیا لیکن شروع میں ملنے والی شہرت کے باوجود بھی ان کا یہ ریستوراں نہیں چل سکا اور کچھ ہی مہینوں بعد بند ہو گیا۔،تصویر کا ذریعہ،تصویر کا کیپشنکانتا پرساد نے ریستوراں شروع کیا تھا جو کامیاب نہ ہو سکا

انکا کہنا تھا کہ اس ریستوراں میں انکا خرچہ ایک لاکھ ماہانہ تھا جبکہ کمائی چالیس ہزار سے زیادہ نہیں ہو سکی۔کورونا وائرس کی وبا نے دنیا بھر کی معیشتوں پر منفی اثرات ڈالے ہیں اور کمزور لوگوں کو مزید غربت کے اندھیروں میں دھکیل دیا ہے لیکن انڈیا میں معاشی بدحالی نے کانتا پرساد جیسے چھوٹے کاروباریوں کو تباہ کر دیا ہے۔

’سینٹر فار مانیٹرِنگ انڈین اکانمی‘ کے مطابق کورونا کی دوسری تباہ کن لہر کے بعد انڈیا میں تقریباً سترہ ملین لوگ بے روزگار ہو چکے ہیں جن میں چھوٹے کاروباری اور یومیہ اجرت پر کام کرنے والے لوگ شامل ہیں۔پرساد نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’ریستوراں کے خرچے بہت زیادہ تھے پینتیس ہزار روپے کرایہ جاتا تھا، 36 ہزار روپے سٹاف کی تنخواہ۔ اگر مجھے معلوم ہوتا تو میں ریستوراں کبھی نہ کھولتا اور سے مجھے شدید مالی نقصان ہوا ہے۔‘ headtopics.com

’فرق اتنا نہیں تھا، معیاری سہولیات ملتیں تو میڈل جیت سکتا تھا‘ طبی عملہ بھی ڈیلٹا ویرینٹ کی لپیٹ میں آگیا، سول اسپتال میں سرجریز ملتوی - ایکسپریس اردو ملک کے بالائی اور وسطی علاقوں میں شدید بارشوں کا امکان

پرساد نے فروری میں اپنا یہ ریسٹوراں بند کر دیا اور مئی میں اپنے اس ڈھابے پر واپس آگئے۔انڈیا میں کووڈ کے کیسز میں کمی آ رہی ہے اور مختلف ریاستیں پابندیوں میں نرمی کر رہی ہیں لیکن ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر احتیاط نہیں برتی گئی تو یہ تیسری لہر سے پہلے کی خاموشی ہو سکتی ہے۔

اس تمام غیر یقینی صورتِ حال کے باوجود پرساد کا کہنا ہے کہ ریستوراں بند کرنے کا ان کا فیصلہ درست تھا۔ انکا کہنا ہے کہ اب انکے حالات بہتر ہیں اور وہ دن بھر کا تیرہ چودہ سو روپے کما لیتے ہیں۔حالانکہ مشہور ہونے کے بعد ان کی کمائی اس ڈھابے پر اس سے بہت زیادہ ہو گئی تھی تاہم ان کا کہنا ہے کہ جو بھی آمدنی ہے ان کے لیےکافی ہے۔ انکا کہنا تھا کہ ’لوگ جاننا چاہتے ہوں گے کہ انھوں نے ہمیں جو پیسے دیے اس کا کہا ہوا۔ ہم نے کچھ رقم اپنے گھر کی مرمت میں لگائی، کچھ ریستوراں پر اور کچھ ہم نے اپنے مستقبل کے لیے محفوظ کر رکھی ہے۔‘

’ہم جہاں ہیں خوش اور مطمئن ہیں۔‘ مزید پڑھ: BBC News اردو »

Mazaq Raat-part All-ep-25988-2021-07-20-Chand Raat Special � | Dunya News

Chand Raat Special – Mohib Mirza and Sanam Saeed join Vasay Ch

لاکھ مُشکل ہو سفر منزل پر نگاہ رکھنا کمال ہے بُلندی پر پہنچنا کمال نہیں بُلندی پر ٹھہرنا کمال ہے دانش sed

فاسٹ بالر حسن علی کا سپرلیگ کے بقیہ میچ کھیلے بغیر واپس آنے کا فیصلہفاسٹ بولر حسن علی خاندانی مصروفیات کے باعث پاکستان سپر لیگ 6 کے بقیہ میچوں سے دستبر ار ہوگئے۔

10 منٹ کے خلائی سفر کے لیے 28 ملین ڈالرکی بولی - ایکسپریس اردوکام یاب بولی دہندہ 10 منٹ کے اس خلائی سفر میں جیف بیزوس، ان کے بھائی مارک اور ایک خلائی سیاح کے ہمراہ سفر کریں گے

پیپلز پارٹی کے اہم رہنما کے بیٹے کو گرفتار کر لیا گیا05:39 PM, 12 Jun, 2021, اہم خبریں, پاکستان, کراچی: قومی احتساب بیورو (نیب) کی ٹیم نے پیپلزپارٹی کے رہنما سید خورشید شاہ کے بیٹے و رکن سندھ اسمبلی فرخ شاہ کو

مراد علی شاہ کراچی میں پانی کے بحران کے ذمہ دار ہیں: فواد چودھریوفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چودھری نے کہا ہے کہ سندھ کو بلدیاتی نظام کی بہت زیادہ ضرورت ہے۔ آرٹیکل 140 اے پر عملدرآمد نہیں ہورہا ہے، سپریم کورٹ آرٹیکل 140

برطانیہ جانے کے خواہش مند افراد کے لیے بڑی خوش خبریبرطانیہ جانے کے خواہش مند افراد کے لیے بڑی خوش خبری ARYNewsUrdu How can you tell me

کراچی پولیس کی کارروائی نجی انسٹی ٹیوٹ کے پروفیسر ظاہر کے قاتل سمیت تین ملزمان گرفتارکراچی (ڈیلی پاکستا ن آن لائن )پولیس نے نجی یونیورسٹی کے ڈائریکٹرپروفیسر ظاہر سید کے قاتل سمیت تین ملزمان کو گرفتار کر لیا ۔ایس پی گلشن معروف عثمان کے مطابق Sir humara Sath zayasti ki gye h humri crore ki jaidad ko cheen lia Gya h beigair ki court notice k bagair ksi time ka Gunda. Gardi k Sath AC Shalimar na ya sab krwaya h shops ka saman inho na utha utha k phanka h jis ma Quran pak or degar ISM Mubarak shamil hh shahdeed behurmati