\u0627\u06cc\u0646 \u0627\u06d2 240 \u06a9\u06d2 \u0636\u0645\u0646\u06cc \u0627\u0646\u062a\u062e\u0627\u0628 \u0645\u06cc\u06ba \u0645\u0628\u06cc\u0646\u06c1 \u062f\u06be\u0627\u0646\u062f\u0644\u06cc \u06a9\u06cc \u062a\u062d\u0642\u06cc\u0642\u0627\u062a \u06a9\u06cc\u0644\u0626\u06d2 \u06a9\u0645\u06cc\u0679\u06cc \u062a\u0634\u06a9\u06cc\u0644

22/06/2022 1:41:00 PM

ایک سیاسی جماعت کے سربراہ اور کارکنان پر توڑ پھوڑ، تشدد کے سنگین الزامات ہیں اور فوٹیج بھی موجود ہے، چیف الیکشن کمشنر مزید پڑھیں: #ElectionCommission #DawnNews

Electioncommission

ایک سیاسی جماعت کے سربراہ اور کارکنان پر توڑ پھوڑ، تشدد کے سنگین الزامات ہیں اور فوٹیج بھی موجود ہے، چیف الیکشن کمشنر مزید پڑھیں: ElectionCommission DawnNews

\u06a9\u0645\u06cc\u0679\u06cc \u0631\u06cc\u0679\u0631\u0646\u0646\u06af \u0627\u0641\u0633\u0631\u060c \u067e\u0631\u06cc\u0632\u0627\u0626\u06cc\u0688\u0646\u06af \u0627\u0641\u0633\u0631 \u0627\u0648\u0631 \u0688\u06cc \u0627\u06cc\u0645 \u0627\u0648 \u06a9\u06d2 \u06a9\u0631\u062f\u0627\u0631 \u06a9\u06cc \u0627\u0646\u06a9\u0648\u0627\u0626\u0631\u06cc \u06a9\u0631\u06d2 \u0627\u0648\u0631 10 \u062f\u0646 \u0645\u06cc\u06ba \u0631\u067e\u0648\u0631\u0679 \u067e\u06cc\u0634 \u06a9\u0631\u06d2\u060c \u0627\u0644\u06cc\u06a9\u0634\u0646 \u06a9\u0645\u06cc\u0634\u0646

چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجا کی سربراہی میں پانچ رکنی کمیشن نے این اے 240 کراچی ضمنی انتخاب میں پولنگ اسٹیشن نمبر 87 پر بیلٹ پیپرز چوری ہونے اور پی ایس پی کی جانب سے مختلف پولنگ اسٹیشنز پر توڑ پھوڑ اور تشدد کے کیسز کی سماعت کی۔مزید پڑھیں:انہوں نے بتایا کہ واقعہ کی سی سی ٹی وی فوٹیج بھی موجود ہے، ایک سیاسی کارکن چوری کی کوشش کر رہا تھا لیکن کامیاب نہیں ہو سکا۔

انہوں نے کہا کہ 10 بجے ایک شخص آیا اور پوچھا کہ کوئی ٹھپے کا آسرا ہے، میں نے کہا ٹھپے نہیں لگیں گے تو وہ مسکرا کر چلا گیا، کچھ دیر بعد سیاسی کارکنوں کی بڑی تعداد پولنگ اسٹیشن پہنچ گئی، مجھ پر تشدد کیا گیا، میں مشکل سے جان بچا کر وہاں سے نکلا۔چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ الیکشن کمیشن ان افراد کے ساتھ کوئی نرمی نہیں برتے گا، ایس ایس پی صاحب فوٹیج سے لوگوں کی شناخت کریں۔

مزید پڑھ:
DawnNews »

Game Set Match with Sawera Pasha & Adeel Azhar | Exclusive Talk with Shahid Afridi | SAMAA TV

#samaatv #pakvseng #abrarahmed ➽ Subscribe to Samaa News ➽ https://bit.ly/2Wh8Sp8➽ Watch Samaa News Live ➽ https://bit.ly/3oUSwAPStay up-to-date on the major... مزید پڑھ >>

\u06a9\u0631\u0627\u0686\u06cc \u0645\u06cc\u06ba \u0634\u0627\u06c1\u0631\u0627\u06c1\u0648\u06ba \u0633\u06d2 \u0628\u0627\u0631\u0634 \u06a9\u06d2 \u067e\u0627\u0646\u06cc \u06a9\u06cc \u0646\u06a9\u0627\u0633\u06cc \u06a9\u06cc\u0644\u0626\u06d2 \u0679\u06cc\u0645\u06cc\u06ba \u062a\u0634\u06a9\u06cc\u0644\u0646\u0627\u0635\u0631 \u0634\u0627\u06c1 \u06a9\u06cc \u0632\u06cc\u0631\u0635\u062f\u0627\u0631\u062a \u0628\u0631\u0633\u0627\u062a\u06cc \u0646\u0627\u0644\u0648\u06ba \u06a9\u06cc \u0635\u0641\u0627\u0626\u06cc \u06a9\u06d2 \u062d\u0648\u0627\u0644\u06d2 \u0633\u06d2 \u0627\u06c1\u0645 \u0627\u062c\u0644\u0627\u0633 SohailRabKhan اور جب بارش ہوتی ہے تو ٹیمیں نظر ہی نہیں آتی ماسوائے عام عوام ۔۔۔

\u0645\u0644\u06a9 \u0645\u06cc\u06ba \u0633\u0648\u0646\u06d2 \u06a9\u06cc \u0642\u062f\u0631 \u0645\u06cc\u06ba \u0645\u0633\u0644\u0633\u0644 \u0627\u0636\u0627\u0641\u06c110 \u06af\u0631\u0627\u0645 \u0633\u0648\u0646\u06d2 \u06a9\u06cc \u0642\u06cc\u0645\u062a 1243 \u0631\u0648\u067e\u06d2 \u0627\u0636\u0627\u0641\u06d2 \u0633\u06d2 \u0627\u06cc\u06a9 \u0644\u0627\u06a9\u06be 26 \u06c1\u0632\u0627\u0631 243 \u0631\u0648\u067e\u06d2 \u06c1\u0648\u06af\u0626\u06cc \u06c1\u06d2

\u0627\u0653\u0626\u06cc \u0627\u06cc\u0645 \u0627\u06cc\u0641 \u0645\u0639\u0627\u06c1\u062f\u06d2 \u0645\u06cc\u06ba \u067e\u06cc\u0634\u0631\u0641\u062a \u06a9\u06d2 \u0628\u0627\u0648\u062c\u0648\u062f \u0631\u0648\u067e\u06d2 \u06a9\u06cc \u0642\u062f\u0631 \u0645\u06cc\u06ba \u062e\u0627\u0637\u0631 \u062e\u0648\u0627\u06c1 \u0627\u0636\u0627\u0641\u06c1 \u0646\u06c1 \u06c1\u0648\u0633\u06a9\u0627\u06a9\u0627\u0631\u0648\u0628\u0627\u0631 \u06a9\u06d2 \u0627\u0653\u063a\u0627\u0632 \u067e\u0631 \u0631\u0648\u067e\u06d2 \u06a9\u06cc \u0642\u062f\u0631 \u0645\u06cc\u06ba \u0688\u0627\u0644\u0631 \u06a9\u06d2 \u0645\u0642\u0627\u0628\u0644\u06d2 \u0645\u06cc\u06ba 1.80\u0631\u0648\u067e\u06d2 \u06a9\u0627 \u0627\u0636\u0627\u0641\u06c1 \u062f\u06cc\u06a9\u06be\u0627 \u06af\u06cc\u0627 \u062c\u0648 \u06a9\u0686\u06be \u062f\u06cc\u0631 \u0628\u0639\u062f \u06c1\u06cc 211 \u0631\u0648\u067e\u06d2 \u067e\u0631 \u0679\u0631\u06cc\u0688 \u06a9\u0631\u0646\u06d2 \u0644\u06af\u0627\u06d4

\u0646\u06cc\u0628 \u0642\u0648\u0627\u0646\u06cc\u0646 \u0645\u06cc\u06ba \u062a\u0631\u0645\u06cc\u0645 \u06a9\u06d2 \u0630\u0631\u06cc\u0639\u06d2 \u0645\u0633\u0644\u0645 \u0644\u06cc\u06af (\u0646) \u06a9\u06d2\u06a9\u06cc\u0633\u0632 \u062e\u062a\u0645 \u06a9\u0631\u0646\u06d2 \u06a9\u0627 \u062a\u0627\u062b\u0631 \u063a\u0644\u0637 \u06c1\u06d2\u060c \u0634\u0627\u06c1\u062f\u062e\u0627\u0642\u0627\u0646 \u0639\u0628\u0627\u0633\u06cc\u062a\u0645\u0627\u0645 \u06a9\u06cc\u0633\u0632 \u0633\u06cc\u0627\u0633\u06cc \u0627\u0646\u062c\u06cc\u0646\u0626\u0631\u0646\u06af \u06a9\u0627 \u0646\u062a\u06cc\u062c\u06c1 \u06c1\u06cc\u06ba\u060c \u06cc\u06c1 \u06a9\u06cc\u0633\u0632 \u0645\u062e\u0627\u0644\u0641\u06cc\u0646 \u067e\u0631 \u062f\u0628\u0627\u0624 \u0688\u0627\u0644\u0646\u06d2 \u06a9\u06d2 \u0644\u06cc\u06d2 \u0639\u0645\u0631\u0627\u0646 \u062e\u0627\u0646 \u06a9\u06d2 \u062d\u06a9\u0645 \u067e\u0631 \u0628\u0646\u0627\u0626\u06d2 \u06af\u0626\u06d2\u060c \u0631\u06c1\u0646\u0645\u0627 \u0645\u0633\u0644\u0645 \u0644\u06cc\u06af (\u0646) Jhootay uncle Aap chor hien due to monsoon rain around the country power consumption already reduced, its naturally , education, personality , money never can change patwari to human ابھی موسم ٹھنڈا اور بارش ہو رہی ہے صرف دو تین دن بعد آپ کی کمی ساری پوری ہو گی جب لوگوں کے اے سی دوبارہ چلیں گے

\u067e\u0627\u0631\u0644\u06cc\u0645\u0646\u0679 \u06a9\u06cc \u0642\u0648\u0645\u06cc \u0633\u0644\u0627\u0645\u062a\u06cc \u06a9\u0645\u06cc\u0679\u06cc \u06a9\u0627 \u0627\u0650\u0646 \u06a9\u06cc\u0645\u0631\u0627 \u0627\u062c\u0644\u0627\u0633 \u06a9\u0644 \u0648\u0632\u06cc\u0631\u0627\u0639\u0638\u0645 \u06c1\u0627\u0624\u0633 \u0645\u06cc\u06ba \u0637\u0644\u0628\u0627\u062c\u0644\u0627\u0633 \u0645\u06cc\u06ba \u0639\u0633\u06a9\u0631\u06cc \u0642\u06cc\u0627\u062f\u062a \u067e\u0627\u0631\u0644\u06cc\u0645\u0627\u0646\u06cc \u06a9\u0645\u06cc\u0679\u06cc \u06a9\u0648 \u0637\u0627\u0644\u0628\u0627\u0646 \u0633\u06d2 \u062c\u0627 \u0631\u06cc \u0645\u0630\u0627\u06a9\u0631\u0627\u062a \u067e\u0631 \u0627\u0639\u062a\u0645\u0627\u062f \u0645\u06cc\u06ba \u0644\u06d2 \u06af\u06cc

\u0627\u0633\u0644\u0627\u0645 \u0622\u0628\u0627\u062f\u060c \u067e\u0646\u062c\u0627\u0628 \u0627\u0648\u0631 \u062e\u06cc\u0628\u0631\u067e\u062e\u062a\u0648\u0646\u062e\u0648\u0627 \u06a9\u06d2 \u0645\u062e\u062a\u0644\u0641 \u0634\u06c1\u0631\u0648\u06ba \u0645\u06cc\u06ba \u0632\u0644\u0632\u0644\u06d2 \u06a9\u06d2 \u062c\u06be\u0679\u06a9\u06d2\u0631\u0627\u062a \u06af\u0626\u06d2 \u0645\u0644\u06a9 \u06a9\u06d2 \u0645\u062e\u062a\u0644\u0641 \u0634\u06c1\u0631\u0648\u06ba \u0645\u06cc\u06ba6.1 \u0634\u062f\u062a \u06a9\u0627 \u0632\u0644\u0632\u0644\u06c1 \u0622\u06cc\u0627\u060c \u0632\u0644\u0632\u0644\u06d2 \u06a9\u06d2 \u0628\u0627\u0639\u062b \u0634\u06c1\u0631\u06cc\u0648\u06ba \u0645\u06cc\u06ba \u062e\u0648\u0641 \u0648\u06c1\u0631\u0627\u0633 \u067e\u06be\u06cc\u0644 \u06af\u06cc\u0627 \u0627\u0648\u0631 \u0644\u0648\u06af \u06a9\u0644\u0645\u06c1 \u0637\u06cc\u0628\u06c1 \u06a9\u0627 \u0648\u0631\u062f \u06a9\u0631\u062a\u06d2 \u06c1\u0648\u0626\u06d2 \u06af\u06be\u0631\u0648\u06ba \u0633\u06d2 \u0628\u0627\u06c1\u0631 \u0646\u06a9\u0644 \u0622\u0626\u06d2 \u062a\u0627\u06c1\u0645 \u0632\u0644\u0632\u0644\u06d2 \u0633\u06d2 \u06a9\u0648\u0626\u06cc \u062c\u0627\u0646\u06cc \u06cc\u0627 \u0645\u0627\u0644\u06cc \u0646\u0642\u0635\u0627\u0646 \u06a9\u06cc \u0627\u0637\u0644\u0627\u0639 \u0646\u06c1\u06cc\u06ba \u0645\u0644\u06cc\u06d4

0 الیکشن کمیشن نے مقدمہ کے اندراج کے لیے اسپیشل سیکریٹری کو شکایت درج کرنے کا حکم دے دیا— فوٹو: ریڈیو پاکستان الیکشن کمیشن آف پاکستان نے کراچی کے این اے 240 میں ضمنی انتخاب میں مبینہ دھاندلی کی تحقیقات کے لیے کمیٹی تشکیل دے دی۔ چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجا کی سربراہی میں پانچ رکنی کمیشن نے این اے 240 کراچی ضمنی انتخاب میں پولنگ اسٹیشن نمبر 87 پر بیلٹ پیپرز چوری ہونے اور پی ایس پی کی جانب سے مختلف پولنگ اسٹیشنز پر توڑ پھوڑ اور تشدد کے کیسز کی سماعت کی۔ پولنگ اسٹیشن نمبر 87 لانڈھی زمان آباد کے پریزائیڈنگ افسر حبیب خان اور ایس ایس پی فیصل بصیر میمن الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے۔ اسپیشل سیکریٹری الیکشن کمیشن نے بریفنگ میں بتایا کہ پریزائیڈنگ افسر پر الزام ہے کہ انہوں نے بیلٹ پیپرز چوری کیے، پریزائیڈنگ افسر کو پہلے گرفتار کر کے بعد میں رہا کر دیا گیا۔ مزید پڑھیں: این اے 240 ضمنی انتخاب: مصطفیٰ کمال، سعد رضوی پر قتل اور دہشت گردی کے مقدمات درج ایس ایس پی فیصل بصیر نے کہا کہ ہمیں الیکشن کی صبح اطلاع ملی کہ پریزائڈنگ افسر ایک سیاسی جماعت کے پولنگ ایجنٹ کے ساتھ مل کر بیلٹ پیپر چوری کر رہے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ واقعہ کی سی سی ٹی وی فوٹیج بھی موجود ہے، ایک سیاسی کارکن چوری کی کوشش کر رہا تھا لیکن کامیاب نہیں ہو سکا۔ الیکشن کمیشن نے مقدمہ کے اندراج کے لیے اسپیشل سیکریٹری کو شکایت درج کرنے کا حکم دے دیا۔ پریزائڈنگ افسر پولنگ اسٹیشن نمبر 87 حبیب خان نے تحریری جواب جمع کرواتے ہوئے کہا کہ مجھ پر بیلٹ پیپر چوری کرنے کا الزام غلط ہے۔ انہوں نے کہا کہ 10 بجے ایک شخص آیا اور پوچھا کہ کوئی ٹھپے کا آسرا ہے، میں نے کہا ٹھپے نہیں لگیں گے تو وہ مسکرا کر چلا گیا، کچھ دیر بعد سیاسی کارکنوں کی بڑی تعداد پولنگ اسٹیشن پہنچ گئی، مجھ پر تشدد کیا گیا، میں مشکل سے جان بچا کر وہاں سے نکلا۔ یہ بھی پڑھیں: این اے 240 ضمنی انتخاب: سعد رضوی کی سربراہی میں ہم پر حملہ ہوا، مصطفیٰ کمال کا دعویٰ چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ الیکشن کمیشن ان افراد کے ساتھ کوئی نرمی نہیں برتے گا، ایس ایس پی صاحب فوٹیج سے لوگوں کی شناخت کریں۔ الیکشن کمیشن نے سیکرٹری عمر حمید خان کو خصوصی انکوائری کمیٹی تشکیل دینے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ کمیٹی ریٹرننگ افسر، پریزائیڈنگ افسر اور ڈی ایم او کے کردار کی انکوائری کرے اور 10 دن میں رپورٹ پیش کرے۔ این اے 240 میں بد امنی کیس کی سماعت کے دوران چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ ایک سیاسی جماعت کے سربراہ اور کارکنان پر توڑ پھوڑ، تشدد کے سنگین الزامات ہیں اور فوٹیج بھی موجود ہے۔ پی ایس پی سربراہ مصطفیٰ کمال کے وکیل حفیظ الدین نے کمیشن کو بتایا کہ مصطفیٰ کمال سیاست میں آج سے نہیں ہیں جس پر چیف الیکشن کمشنر نے وکیل کو روک دیا اور کہا کہ کوئی سیاسی بیان نہیں دینا ہے کیس پر بات کرنی ہے، ہمارے لیے قومی لیڈرز قابل احترام ہیں لیکن قانون توڑنے کی اجازت کسی کو نہیں دیں گے۔ مزید پڑھیں: کراچی: این اے 240 کے ضمنی انتخاب کے دوران پرتشدد واقعات، ایک شخص جاں بحق، 8 زخمی اس موقع پر وکیل حفیظ الدین نے کہا کہ مصطفیٰ کمال کسی پولنگ اسٹیشن پر نہیں گئے، مصطفیٰ کمال کی ایک بھی ویڈیو منظر عام پر نہیں آئی، ہمیں پولیس پر اعتبار نہیں ہے کسی اور ادارے سے تحقیقات کروائیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایم کیو ایم کا اسٹائل ہے، ہم کسی واقعہ میں ملوث نہیں ہیں، مختلف جگہوں پر ایم کیو ایم اور ٹی ایل پی کے خلاف احتجاج ہو رہا تھا۔ مصطفیٰ کمال کے وکیل نے کہا کہ ڈسکہ سے زیادہ دھاندلی این اے 240 میں ہوئی جس پر چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ اگر ثبوت دے دیں تو کارروائی بھی ڈسکہ سے زیادہ ہو گی۔ اسپیشل سیکریٹری نے بریفنگ میں بتایا کہ ضمنی انتخاب میں بدامنی پر تین ایف آئی آرز درج کی گئیں، پولنگ اسٹیشن نمبر 36 کے پریزائیڈنگ افسر کے مطابق مصطفیٰ کمال کارکنان سمیت خواتین پولنگ بوتھ میں داخل ہوئے۔ مزید پڑھیں: کراچی: این اے 240 ضمنی انتخاب، ایم کیو ایم پاکستان کے محمد ابوبکر سب سے آگے پریزائیڈنگ افسر کے مطابق مصطفیٰ کمال اور کارکنان نے پولنگ عملے کو زدوکوب کیا، بعد ازاں پی ایس پی کارکنوں نے پولنگ اسٹیشن کے باہر لوگوں پر تشدد کیا اور ہوائی فائرنگ کی، پولنگ اسٹیشن نمبر 51 کے پریزائیڈنگ افسر نے پی ایس پی پر تشدد کا الزام لگایا۔ پریزائڈنگ افسر نے بتایا کہ 300 سے 400 کارکنان نے دھاوا بولا، الیکشن کمیشن ان کے خلاف ضابطہ اخلاق اور الیکشن ایکٹ کے تحت کارروائی کر سکتا ہے۔ چیف الیکشن کمشنر نے ریمارکس دیئے کہ اگر پارٹی کا سربراہ خود جتھا لے کر آئے تو اس کی سزا کیا ہو سکتی ہے، جس پر ایس ایس پی فیصل بصیر نے کہا کہ ایک سیاسی جماعت کا سربراہ 400 سے 500 کارکنوں کے ہمراہ مختلف پولنگ اسٹیشنز پر حملہ آور ہوا۔ انہوں نے کہا کہ بیلیٹ بکس توڑے گئے، عملہ پر تشدد کیا گیا، بعد ازاں سیاسی جماعت کا سربراہ لانڈھی میں اپنے دفتر چلا گیا جہاں دوسرے سیاسی گروپ سے اس کا جھگڑا ہوا۔ مزید پڑھیں: کراچی ضمنی انتخاب: الیکشن کمیشن نے حمتی نتیجے کا اجرا روک دیا وکیل مصطفیٰ کمال نے کہا کہ ہمارے بارہ سے تیرہ افراد زخمی ہوئے، ایک کارکن جاں بحق ہوا، اس کی بھی بات کریں جو ہمارے دفتر پر حملہ ہوا۔ ہمارے کسی کارکن کے پاس کوئی ہتھیار نہیں تھا، چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ فی الحال یہ کیس ہمارے سامنے نہیں ہے لیکن ہم رپورٹ طلب کرلیتے ہیں، الیکشن کمیشن نے پولیس سے مصطفیٰ کمال پر حملے کی رپورٹ بھی طلب کر تے ہوئے الیکشن کمیشن نے بد امنی کیس میں بھی انکوائری کمیٹی تشکیل دینے کی ہدایت کر دی،کیس کی سماعت 10 روز کے لیے ملتوی کردی گئی۔ خیال رہے 16 جون کو کراچی کے حلقہ این اے 240 میں ضمنی انتخابات کے دوران تشدد کے واقعات پیش آئے تھے جس میں ایک شخص جاں بحق جبکہ متعدد زخمی ہوئے تھے۔ مزید پڑھیں: کراچی: این اے-249 ضمنی انتخاب میں پیپلز پارٹی کے قادر خان مندوخیل کامیاب بعدازاں 17 جون کو پولیس نے پاک سر زمین پارٹی (پی ایس پی) کے چیئرمین مصطفیٰ کمال، تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے سربراہ سعد رضوی اور سیکڑوں کارکنوں کے خلاف لانڈھی اور کورنگی میں ضمنی انتخاب کے دوران دہشت گردی، قتل اور پُرتشدد جھڑپوں پر 4 مقدمات درج کیے تھے۔ سرکاری حکام کے مطابق ان واقعات میں ایک راہگیر ہلاک اور دیگر افراد زخمی ہوئے تھے جبکہ قانون نافذ کرنے والے اداروں نے نجی گارڈز سمیت 250 مشتبہ افراد کو حراست میں لیا گیا تھا۔ مزید بتایا گیا کہ ٹی ایل پی اور پی ایس پی سربراہان کے خلاف ایف آئی آرز میں دفعات 147، 148، 149، 302، 452، 427، 337 اے (ا)، 324 اور 7 اے ٹی اے شامل کی گئی ہیں۔ پولیس کے ترجمان نے جاری بیان میں بتایا تھا کہ فائرنگ اور پُرتشدد واقعات پر چار مقدمات درج کیے گئے ہیں، الیکشن کمیشن کے پریزائڈنگ افسران (پی او) کی شکایت پر دو مقدمات درج کیے ہیں جبکہ لانڈھی اور کورنگی پولیس کی جانب سے سرکاری مدعیت میں دو مقدمات درج کیے گئے ہیں۔ .سہیل رب خان Jun 21, 2022 کراچی میں مون سون بارشوں کے دوران مرکزی شاہراہوں سے پانی کی فوری نکاسی کے لئے خصوصی ٹیمیں تشکیل دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ وزیر بلدیات سندھ سید ناصر حسین شاہ کی زیر صدارت برساتی نالوں کی صفائی کے حوالے سے اہم اجلاس کا انعقاد کیا گیا، جس میں سیکرٹری بلدیات نجم احمد شاہ، اسپیشل سیکرٹری بلدیات عثمان معظم، ضلعی ایڈمنسٹریٹریز، ایم ڈی سالڈ ویسٹ، کے ایم سی اور متعلقہ اداروں کے نمائندگان موجود تھے۔ اس موقع پر ناصر حسین شاہ کا کہنا تھا کہ متوقع مون سون بارشوں کے پیش نظر تمام حفاظتی اقدامات اور پیشگی تیاریاں مکمل کرلی جائیں، مون سون سیزن کے دوران تمام بلدیاتی اداروں میں مکمل طور پر ہائی الرٹ اور ایمرجنسی نافذ رہے گی۔ ناصر حسین شاہ کا کہنا تھا کہ گزشتہ بارشوں میں ہونے نقصانات اور تجربے کو مدنظر رکھتے ہوئے واٹر بورڈ، سندھ سالڈ ویسٹ منیجمنٹ اتھارٹی ، کے ایم سی اور تمام ڈی ایم سیز مشترکہ لائحہ عمل ترتیب دیں جس سے عوام کو ریلیف پہنچانے میں آسانی رہے اور انسانی جانوں کے ساتھ قیمتی املاک کا تحفظ بھی یقینی بنایا جاسکے۔ سیکرٹری بلدیات انجینئر سید نجم احمد شاہ نے وزیر بلدیات سندھ کو بتایا کہ برسات کے دنوں میں گلستان جوہر، یوسف گوٹھ، ناگن چورنگی اور شاہراہ فیصل کے اطراف نالوں میں پانی کی روانی مستقل طور پر یقینی بنائے رکھنے اور مرکزی شاہراہوں کو چوبیس گھنٹے پانی سے کلئیر رکھنے کے لئے خصوصی ٹیمیں تشکیل دی جارہی ہیں جو کہ انڈر پاسز اور نشیبی علاقوں پر توجہ دیں گی۔ وزیر بلدیات سندھ نے واٹر بورڈ اور کے ایم سی حکام کو خصوصی طور پر ڈی واٹرنگ مشینوں کا پیشگی بندوبست کرکے رکھنے کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ جن مقامات پر پانی کے یکجا ہوکر کھڑے ہونے کا خدشہ ہو وہاں ہنگامی بنیادوں پر نکاسی آب کے لئے مشینری موجود ہونی چاہئے اور راہ گیروں سمیت موٹر سائیکل و کار سواروں کو پریشانی کا سامنا نہیں ہونا چاہئے۔ ناصر حسین شاہ نے نالوں کی صفائی کے دوران متاثر ہونے والے انفرا اسٹرکچرز کو فوری طور پر مرمت کی ہدایت دیتے ہوئے تمام مقامات پر نیو جرسی بیرئرز لگانے کا حکم دیا اور ترجیحی بنیادوں پر تمام ممکنہ چوکنگ پوائنٹس کو پیشگی کلئیر کرنے کا حکم بھی جاری کیا۔.سونے کی قدر 1840 ڈالرز فی اونس ہے۔ فوٹو — فائل پاکستان میں سونے کی قیمتوں میں اضافے کا سلسلہ جاری ہے۔ سندھ صرافہ جیولرز ایسوسی ایشن کے مطابق سونے کے بھاؤ میں یکدم 1450 روپے کا اضافہ ہوا ہے جس کے بعد فی تولہ سونا 1 لاکھ 47 ہزار 250 روپے کا ہوگیا ہے۔ اس کے علاوہ 10 گرام سونے کی قیمت 1243 روپے اضافے سے ایک لاکھ 26 ہزار 243 روپے ہوگئی ہے۔ عالمی صرافہ میں سونے کی قدر 1840 ڈالرز فی اونس ہوگئی ہے۔.0 گزشتہ ہفتوں کے دوران روپے کی قدر میں مسلسل کمی دیکھی گئی—فائل فوٹو:اے ایف پی پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان سمجھوتہ طے پانے کی پیش رفت کے بعد ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر کھونے کا سلسلہ رک گیا تاہم روپے کی قدر میں خاطر خواہ اضافے دیکھنے میں نہیں آیا۔ فاریکس ایسوسی ایشن آف پاکستان (ایف اے پی) کے مطابق منگل کے روز روپے کے 211 روپے 80 پسے پر بند ہونے کے بعد بدھ کی صبح 9 بج کر 49 منٹ پر روپے کی قدر میں ڈالر کے مقابلے میں ایک روپیہ 80 پسے کا اضافہ ہوا تاہم کچھ دیر بعد ہی 10 بج کر 45 منٹ پر روپے کی قدر میں ہونے والی بہتری میں کمی واقع ہوئی اور انٹر بینک میں ڈالر کے مقابلے میں روپیہ 211 روپے پر ٹریڈ کر رہا تھا۔ فاریکس ایسوسی ایشن آف پاکستان (ایف اے پی) کے مطابق گزشتہ روز روپے کی قدر میں 2 روپے سے زائد کی کمی ہوئی تھی اور ڈالر کے مقابلے میں روپیہ 212 روپے کی کم ترین سطح پر پہنچ گیا جو 2 روز قبل 209 روپے 96 پسے پر تھا۔ ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں بہتری کی پیش رفت اس کی قدرمیں گزشتہ ہفتوں کے دوران ہونے والی مسلسل کمی کے بعد ہوئی ہے۔ یہ بھی پڑھیں: آئی ایم ایف ڈیل میں تاخیر روپے پر بھاری، ڈالر 212 کی ریکارڈ سطح پر پہنچ گیا روپے کی قدر میں مسلسل کمی کی بڑی وجہ ملک کے بڑھتے ہوئے درآمدی بل اور غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی کو قرار دیا گیا ہے۔ 11 اپریل کو مسلم لیگ (ن) کی مخلوط حکومت کے اقتدار سنبھالنے کے بعد سے روپے کے مقابلے میں ڈالر کی قیمت میں 30 روپے سے زائد کا اضافہ ہوچکا ہے۔ ایکسچینج کمپنیز ایسوسی ایشن آف پاکستان کے جنرل سیکریٹری ظفر پراچہ نے روپے کی قدر میں بہتری کی وجہ آئی ایم ایف کے ساتھ ہونے والے معاہدے سے متعلق اچھی خبر کو دیا۔ انہوں نے امید ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ جب اس ہفتے کے آخر تک عالمی مالیاتی ادارے کے ساتھ معاہدہ طے پا جائے گا تو پاکستان کے لیے چین اور دیگر مالیاتی اداروں سے قرض حاصل کرنے کی راہ ہموار ہوجائے گی۔ ٹریس مارک میں ریسرچ کی سربراہ کومل منصور نے بھی یہ کہا کہ مارکیٹ کو توقع تھی کہ آئی ایم ایف کے ساتھ ہونے والے معاہدے کی بنیاد پر مقامی کرنسی 212 کی سطح سے نیچے آئے گی اور توقع کے مطابق بالکل ایسا ہی ہوا۔ مزید پڑھیں: گرے لسٹ سے اخراج کی امید، 100 انڈیکس میں 520 پوائنٹس کا اضافہ انہوں نے مزید کہا کہ ٹیکس اصلاحات اور پیٹرولیم لیوی کے نفاذ کے بعد کوئی دوسری بڑی رکاوٹ نہیں ہےٟ، انہوں نے یقین کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ معاہدے کے بعد مارکیٹ کا رویہ انتہائی منفی سے غیر جانبدار ہوگا اور اس کے بعد مارکیٹ میں مثبت سرگرمی نظر آئے گی۔ دوسری جانب آئی ایم ایف کا قرض پروگرام اپریل کے اوائل سے ہی تعطل کا شکار رہا جب کہ پاکستان کے عالمی مالیاتی ادارے کے ساتھ مذاکرات بے نتیجہ رہے۔ عالمی قرض دہندہ ادارے نے پہلے پی ٹی آئی حکومت کی جانب سے متعارف کرائی گئی ایندھن اور توانائی کی سبسڈی پر تحفظات کا اظہار کیا تھا اور اب نئی حکومت کی جانب سے آئندہ مالی سال میں مقرر کردہ اہداف پر تحفظات کا اظہار کیا گیا۔ پاکستان نے جولائی 2019 میں آئی ایم ایف کے ساتھ 39 ماہ کے 6 ارب ڈالر کے توسیعی فنڈ پروگرام پر دستخط کیے تھے لیکن عالمی مالیاتی ادارے نے تقریباً 3 ارب ڈالر کی قسط اس وقت روک دی تھی جب گزشتہ حکومت نے اپنے وعدوں سے انحراف کرتے ہوئے ایندھن اور توانائی پر سبسڈی دینے کا اعلان کیا تھا۔ یہ بھی پڑھیں: بجٹ کے بعد ڈالر 204 روپے کی تاریخی بلندی پر، اسٹاک مارکیٹ میں بھی 1100 پوائنٹس سے زائد کی کمی تاہم، گزشتہ رات ایک اہم اور بڑی پیش رفت سامنے آئی جب پاکستان حکام کی جانب سے مالی سال 2023 کے بجٹ میں 4 کھرب 36 ارب روپے کے اضافی ٹیکس اور پیٹرولیم لیوی بتدریج بڑھا کر 50 روپے فی لیٹر تک پہنچانے کے وعدے کے بعد پاکستان اور عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) میں سمجھوتہ طے پاگیا۔ اس سے قبل، پاکستان میں آئی ایم ایف کے مقامی نمائندے ایستھر پیریز روئز نے ڈان سے گفتگو کے دوران اس بات کو تسلیم کیا کہ مالی سال 23-2022 کے بجٹ سے متعلق معاملات میں اہم پیش رفت ہوئی ہے۔ عالمی مالیاتی ادارےکے نمائندے کا مزید کہنا تھا کہ آئی ایم ایف اور پاکستانی حکام کے درمیان آنے والے سال میں میکرو اکنامک استحکام کو مزید مضبوط بنانے سے متعلق پالیسیوں پر بات چیت جاری ہے آئی ایم ایف مشن آئندہ چند روز میں اسٹیٹ بینک کے ساتھ مالیاتی اہداف کو حتمی شکل دے گا جب کہ اسی دوران معاشی اور مالیاتی پالیسی (ایف ای ایف پی) کی مفاہمتی یاد داشت کا ڈرافٹ بھی پاکستان کے ساتھ شیئر کرے گا۔.