\u06c1\u0631\u062c\u0627\u0646\u06c1 \u06a9\u06cc\u0633: \u0648\u0632\u06cc\u0631\u0627\u0639\u0638\u0645 \u067e\u0631 \u062d\u0642 \u062c\u0631\u062d \u062e\u062a\u0645 \u06a9\u0631\u0646\u06d2 \u06a9\u0627 \u0641\u06cc\u0635\u0644\u06c1 \u062e\u0644\u0627\u0641 \u0642\u0627\u0646\u0648\u0646 \u0642\u0631\u0627\u0631

24/01/2022 12:04:00 PM

ہرجانہ کیس: وزیراعظم پر حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ خلاف قانون قرار تفصیلات جانیئے:#AajNews #AajUpdates #PMImranKhan

Pmımrankhan

ہرجانہ کیس: وزیراعظم پر حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ خلاف قانون قرار تفصیلات جانیئے:AajNews AajUpdates PMImranKhan

\u0627\u0633\u0644\u0627\u0645 \u0622\u0628\u0627\u062f \u06c1\u0627\u0626\u06cc\u06a9\u0648\u0631\u0679 \u0646\u06d2 \u06c1\u0631\u062c\u0627\u0646\u06c1 \u06a9\u06cc\u0633 \u0645\u06cc\u06ba \u0648\u0632\u06cc\u0631\u0627\u0639\u0638\u0645 \u0639\u0645\u0631\u0627\u0646 \u062e\u0627\u0646 \u067e\u0631 \u062d\u0642...

اسلام آباد ہائیکورٹ نے ہرجانہ کیس میں وزیراعظم عمران خان پر حق جرح بحال کرنے کا تحریری فیصلہ جاری کردیا، فیصلے میں کہا گیا کہ ٹرائل کورٹ کا حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ خلاف قانون ہے، عدالتی فیصلہ کالعدم قرار دیا جاتا ہے۔ہرجانہ کیس میں خواجہ آصف کاوزیراعظم عمران خان پر حق جرح بحال کرنے کا تحریری فیصلہ جاری کردیا گیا،اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے تحریری فیصلہ جاری کیا۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ ٹرائل کورٹ کا حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ خلاف قانون ہے، عدالتی فیصلہ کالعدم قرار دیا جاتا ہے، حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ شفاف ٹرائل کے طے شدہ اصولوں کے مطابق نہیں، ٹرائل کورٹ نے حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ جلدبازی میں کیا۔فیصلے میں مزید کہا گیا کہ ٹرائل کورٹ نے فیصلہ کرتے وقت شفافیت کے لازمی اصولوں پر عملدرآمد نہیں کیا ،خواجہ آصف کے وکیل نے استدعا کی کہ ٹرائل کورٹ نے بغیر نوٹس جاری کےہ عمران خان اور دیگر گواہوں پر حق جرح ختم کر دیا۔

مزید پڑھ:
Aaj News »

China ki shandaar peshkash, ab asmaan mein jaye beghair aap hawa mei Urr saktay hain..

چین کی شاندار پیشکش، اب آسمان میں جائے بغیر آپ ہوا میں اڑ سکتے ہیں#meandcpec #Cpecexplorer #episode47 مزید پڑھ >>

\u0622\u06312 \u067e\u06cc \u06a9\u0627 \u0630\u06a9\u0631 \u06a9\u0631\u0646\u06d2 \u06a9\u06d2 \u0628\u0639\u062f \u0648\u0632\u06cc\u0631\u0627\u0639\u0638\u0645 \u06a9\u06cc \u0627\u0641\u063a\u0627\u0646\u0633\u062a\u0627\u0646 \u06a9\u06cc \u0645\u062f\u062f \u06a9\u06d2 \u0645\u0637\u0627\u0644\u0628\u06d2 \u067e\u0631 \u0648\u0636\u0627\u062d\u062a\u0622\u0631 2 \u067e\u06cc \u0627\u06cc\u06a9 \u0628\u06cc\u0646 \u0627\u0644\u0627\u0642\u0648\u0627\u0645\u06cc \u0627\u0635\u0648\u0644 \u06c1\u06d2 \u062c\u0633 \u06a9\u0627 \u0645\u0642\u0635\u062f \u06c1\u06d2 \u06a9\u06c1 \u0639\u0627\u0644\u0645\u06cc \u0628\u0631\u0627\u062f\u0631\u06cc \u06a9\u0633\u06cc \u062e\u0637\u06d2 \u0645\u06cc\u06ba \u0627\u0646\u0633\u0627\u0646\u06cc\u062a \u06a9\u06d2 \u062e\u0644\u0627\u0641 \u0628\u0691\u06d2 \u067e\u06cc\u0645\u0627\u0646\u06d2 \u067e\u0631 \u062c\u0631\u0627\u0626\u0645 \u06a9\u0648 \u0631\u0648\u06a9 \u0633\u06a9\u06d2\u06d4 Strictly only food, water, medical staples not an inch further

\u0633\u0646\u062f\u06be \u06c1\u0627\u0626\u06cc\u06a9\u0648\u0631\u0679 \u06a9\u06d2 \u0686\u06cc\u0641 \u062c\u0633\u0679\u0633 \u06a9\u06cc \u0633\u067e\u0631\u06cc\u0645 \u06a9\u0648\u0631\u0679 \u0645\u06cc\u06ba \u062a\u0631\u0642\u06cc \u06a9\u06d2 \u062e\u0644\u0627\u0641 \u0642\u0631\u0627\u0631\u062f\u0627\u062f \u0646\u06d2 \u06c1\u0644\u0686\u0644 \u0645\u0686\u0627\u062f\u06cc\u06cc\u06c1 \u0642\u0631\u0627\u0631\u062f\u0627\u062f \u0627\u0633 \u0637\u0631\u062d \u06a9\u06cc \u0627\u06cc\u06a9 \u0633\u0627\u0632\u0634 \u062a\u06be\u06cc \u062c\u06cc\u0633\u06cc \u0633\u0627\u0628\u0642 \u0686\u06cc\u0641 \u062c\u0633\u0679\u0633 \u0633\u062c\u0627\u062f \u0639\u0644\u06cc \u0634\u0627\u06c1 \u06a9\u06d2 \u062e\u0644\u0627\u0641 \u06a9\u06cc \u06af\u0626\u06cc \u062a\u06be\u06cc\u060c \u0631\u06a9\u0646 \u067e\u0627\u06a9\u0633\u062a\u0627\u0646 \u0628\u0627\u0631 \u06a9\u0648\u0646\u0633\u0644

\u0644\u062a\u0627 \u0645\u0646\u06af\u06cc\u0634\u06a9\u0631 \u06a9\u06cc \u0635\u062d\u062a \u06a9\u06d2 \u062d\u0648\u0627\u0644\u06d2 \u0633\u06d2 \u062c\u06be\u0648\u0679\u06cc \u062e\u0628\u0631\u0648\u06ba \u067e\u0631 \u0627\u06c1\u0644 \u062e\u0627\u0646\u06c1 \u067e\u0631\u06cc\u0634\u0627\u0646\u0628\u0631\u0635\u063a\u06cc\u0631 \u06a9\u06cc \u0645\u0639\u0631\u0648\u0641 \u06af\u0644\u0648\u06a9\u0627\u0631\u06c1 \u06a9\u06cc \u0635\u062d\u062a \u0633\u06d2 \u0645\u062a\u0639\u0644\u0642 \u067e\u06be\u06cc\u0644\u0646\u06d2 \u0648\u0627\u0644\u06cc \u0627\u0641\u0648\u0627\u06c1\u0648\u06ba \u067e\u0631 \u0645\u0631\u06a9\u0632\u06cc \u0648\u0632\u06cc\u0631 \u0633\u0645\u0631\u062a\u06cc \u0627\u06cc\u0631\u0627\u0646\u06cc \u0646\u06d2 \u0628\u06be\u06cc \u0628\u0631\u06c1\u0645\u06cc \u06a9\u0627 \u0627\u0638\u06c1\u0627\u0631 \u06a9\u06cc\u0627\u06d4 يہ ابھی بھی ذندہ ہۓ؟

\u0639\u0644\u06cc\u0632\u06d2 \u0634\u0627\u06c1 \u0633\u0648\u0634\u0644 \u0645\u06cc\u0688\u06cc\u0627 \u067e\u0631 \u0644\u0648\u06af\u0648\u06ba \u06a9\u06cc \u062a\u0646\u0642\u06cc\u062f \u067e\u0631 \u06a9\u06cc\u0627 \u06a9\u0631\u062a\u06cc \u06c1\u06cc\u06ba\u061f\u0646\u0648\u062c\u0648\u0627\u0646 \u0627\u062f\u0627\u06a9\u0627\u0631\u06c1 \u06a9\u0627 \u0646\u0627\u0645 \u06c1\u0631 \u0686\u0646\u062f \u06c1\u0641\u062a\u0648\u06ba \u0633\u0645\u0627\u062c\u06cc \u0631\u0627\u0628\u0637\u06d2 \u06a9\u06cc \u0648\u06cc\u0628 \u0633\u0627\u0626\u0679 \u0679\u0648\u0626\u0679\u0631 \u067e\u0631 \u0679\u0631\u06cc\u0646\u0688 \u06a9\u0631\u062a\u0627 \u06c1\u06d2 \u062c\u0633 \u06a9\u06cc \u0648\u062c\u06c1 \u0645\u062e\u062a\u0644\u0641 \u062a\u0646\u0627\u0632\u0639\u0627\u062a \u06c1\u0648\u062a\u06d2 \u06c1\u06cc\u06ba\u06d4 🙄 Kon biawa kooof apki drama dki gaa

\u0645\u0633\u0626\u0644\u06c1 \u06a9\u0634\u0645\u06cc\u0631 \u06c1\u0646\u06af\u0627\u0645\u06cc \u0628\u0646\u06cc\u0627\u062f \u067e\u0631 \u062d\u0644 \u06a9\u06cc\u0627 \u062c\u0627\u0626\u06d2\u060c \u067e\u0627\u06a9\u0633\u062a\u0627\u0646 \u06a9\u0627 \u0627\u0642\u0648\u0627\u0645 \u0645\u062a\u062d\u062f\u06c1 \u067e\u0631 \u0632\u0648\u0631\u0627\u0645\u0646 \u0627\u0648\u0631 \u0627\u0633\u062a\u062d\u06a9\u0627\u0645 \u0627\u0642\u0648\u0627\u0645 \u0645\u062a\u062d\u062f\u06c1 \u06a9\u06d2 \u0628\u0646\u06cc\u0627\u062f\u06cc \u0641\u0631\u0627\u0626\u0636 \u0645\u06cc\u06ba \u0634\u0627\u0645\u0644 \u0631\u06c1\u0646\u0627 \u0686\u0627\u06c1\u06cc\u06ba\u060c \u06a9\u0634\u0645\u06cc\u0631\u06cc\u0648\u06ba \u067e\u0631 \u06c1\u0648\u0646\u06d2 \u0648\u0627\u0644\u06d2 \u0645\u0638\u0627\u0644\u0645 \u0631\u0648\u06a9\u0646\u06d2 \u06a9\u06d2 \u0627\u0642\u062f\u0627\u0645\u0627\u062a \u06a9\u0631\u06cc\u06ba\u060c \u0645\u0646\u06cc\u0631 \u0627\u06a9\u0631\u0645 Correct 💯 percent کونسا اور کتنا زور؟

’\u0628\u06cc\u0679\u06cc \u0628\u0686\u0627\u0648\u0654 \u06a9\u06d2 \u0628\u062c\u0627\u0626\u06d2 \u0628\u06cc\u0679\u06cc \u067e\u0679\u0627\u0648\u0654‘ \u06a9\u06c1\u06c1 \u062c\u0627\u0646\u06d2 \u067e\u0631 \u0646\u0631\u06cc\u0646\u062f\u0631 \u0645\u0648\u062f\u06cc \u067e\u0631 \u0645\u0630\u0627\u0642\u0628\u06be\u0627\u0631\u062a\u06cc \u0648\u0632\u06cc\u0631 \u0627\u0639\u0638\u0645 \u0646\u0631\u06cc\u0646\u062f\u0631 \u0645\u0648\u062f\u06cc \u0646\u06d2 \u062d\u0627\u0644 \u06c1\u06cc \u0645\u06cc\u06ba \u0627\u06cc\u06a9 \u062a\u0642\u0631\u06cc\u0628 \u06a9\u06d2 \u062f\u0648\u0631\u0627\u0646 \u063a\u0644\u0637 \u0644\u0641\u0638 \u0628\u0648\u0644\u0627\u060c \u0627\u0633 \u0633\u06d2 \u0642\u0628\u0644 \u0628\u06be\u06cc \u0627\u0646\u06c1\u0648\u06ba \u0646\u06d2 \u0627\u06cc\u0633\u0627 \u06c1\u06cc \u06a9\u06cc\u0627 \u062a\u06be\u0627\u06d4

Comments اسلام آباد ہائیکورٹ نے ہرجانہ کیس میں وزیراعظم عمران خان پر حق جرح بحال کرنے کا تحریری فیصلہ جاری کردیا، فیصلے میں کہا گیا کہ ٹرائل کورٹ کا حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ خلاف قانون ہے، عدالتی فیصلہ کالعدم قرار دیا جاتا ہے۔ ہرجانہ کیس میں خواجہ آصف کاوزیراعظم عمران خان پر حق جرح بحال کرنے کا تحریری فیصلہ جاری کردیا گیا،اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے تحریری فیصلہ جاری کیا۔ فیصلے میں کہا گیا ہے کہ ٹرائل کورٹ کا حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ خلاف قانون ہے، عدالتی فیصلہ کالعدم قرار دیا جاتا ہے، حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ شفاف ٹرائل کے طے شدہ اصولوں کے مطابق نہیں، ٹرائل کورٹ نے حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ جلدبازی میں کیا۔ فیصلے میں مزید کہا گیا کہ ٹرائل کورٹ نے فیصلہ کرتے وقت شفافیت کے لازمی اصولوں پر عملدرآمد نہیں کیا ،خواجہ آصف کے وکیل نے استدعا کی کہ ٹرائل کورٹ نے بغیر نوٹس جاری کےہ عمران خان اور دیگر گواہوں پر حق جرح ختم کر دیا۔ وزیراعظم عمران خان کے وکیل نے بتایا کہ خواجہ آصف کے رویے کی بنیاد پر ٹرائل کورٹ نے حق جرح ختم کرنے کا فیصلہ کیا۔ .0 وزیراعظم کی اپیل کے الفاظ پر الیکٹرانک اور سوشل میڈیا پر تنقید نے جنم لیا—تصویر: دفتر وزیراعظم وزیر اعظم عمران خان نے تحفظ کی ذمہ داری (آر2پی) کے بین الاقوامی نظریے کے تحت افغانستان کی مدد کے اپنے مطالبے پر نظرثانی کرتے ہوئے عالمی برادری کو دعوت دی کہ وہ ملک کو انسانی امداد فراہم کرکے افغان عوام کے لیے اپنی ذمہ داری پوری کرے۔ ڈان اخبار میں شائع ہونے والی رپورٹ کے مطابق اپنی ٹوئٹ میں انہوں نے لکھا تھا کہ 'آر2 پی کا ایک جزو یہ ہے کہ ایک طویل جنگ کے نتیجے میں جنم لینے والے بڑے انسانی المیے سے لوگوں کو بچانے میں مدد کی جائے، فی الوقت کروڑوں افغان باشندے بھوک جیسے خطرے سے دوچار ہیں، ایسے میں انسانی بنیادوں پر (افغان عوام کو) امداد کی فراہمی عالمی برادری کے ذمے ہے'۔ اس سے قبل بھی ایک ٹوئٹ میں انہوں نے کہا تھا کہ 'عالمی برادری کی جانب سےہنگامی طور پر بھوک و فاقہ کشی کےکنارے پر کھڑےکروڑوں افغانوں کے لیے انسانی بنیادوں پر امداد درکار ہےجو کہ متفقہ طور پر اختیار کئےگئے اقوام متحدہ کے فراہمی تحفظ کے اصول (آر2پی) کے تحت یہ ہنگامی مدد فراہم کرنے کی پابند بھی ہے'۔ تاہم شاید دوسری ٹوئٹ میں ان کی اپیل کے الفاظ پر الیکٹرانک اور سوشل میڈیا پر تنقید نے جنم لیا جو افغانستان اور اس کی حکومت کے بارے میں پاکستان کی خارجہ پالیسی کے مؤقف کی نفی کرتی نظر آئی تھی۔ دفتر خارجہ کے سابق ترجمان عبدالباسط نے وزیراعظم کے جواب میں ٹوئٹ کیا کہ 'آر2پی کا افغانستان میں موجودہ انسانی صورتحال سے کوئی تعلق نہیں ہے، جس نے بھی آر2پی کی یہ فضول اور خطرناک تشریخ پیش کی ہے اس کے خلاف کارروائی کریں'۔ گلوبل سینٹر فار آر2پی کے مطابق، یہ ایک بین الاقوامی اصول ہے جو 'اس بات کو یقینی بنانے کی کوشش کرتا ہے کہ بین الاقوامی برادری نسل کشی، جنگی جرائم اور انسانیت کے خلاف بڑے پیمانے پر جرائم جیسے مظالم کو روکنے میں دوبارہ ناکام نہ ہو۔' یہ تصور '90 کی دہائی کے دوران روانڈا اور سابق یوگوسلاویہ میں بڑے پیمانے پر ہوئے مظالم کا مناسب جواب دینے میں بین الاقوامی برادری کی ناکامی' کے ردعمل میں سامنے آیا تھا۔ ان پیشگی شرائط کی نشاندہی تجزیہ کار مشرف زیدی نے بھی کی اور ٹوئٹ کیا 'جب تک کوئی یہ بحث نہ کرے کہ ان میں سے ایک یا زیادہ شرائط افغانستان میں رائج ہیں، کوئی آر2پی نہیں ہوتا'۔ یہ بات قابل غور ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے بین الاقوامی برادری کو افغانستان میں طالبان حکومت کے ساتھ رابطہ کرنے کی ضرورت کی وکالت کرتے ہوئے کہا کہ جنگ زدہ ملک کے لوگوں کے تحفظ کو یقینی بنانے کا یہی واحد طریقہ ہے۔ آر 2 پی کے معاملے پر پاکستان کے اصولی مؤقف کو دہراتے ہوئے ماہرِ قانون فیصل نقوی نے اپنی ٹوئٹ میں نشاندہی کی کہ پاکستان 'آر2 پی کے تعمیری تصور کا مخالف تھا کیونکہ اسے اکثر طاقتور ریاستیں مداخلت کے لیے غلط طریقے سے استعمال کرتی ہیں، مثال کے طور پر بھارت نے آر2پی کا استعمال اس وقت کے مشرقی پاکستان پر 1971 کے حملے کو جواز فراہم کرنے کے لیے کیا۔' ڈان نے اس معاملے پر حکومت کا نقطہ نظر حاصل کرنے کے لیے قومی سلامتی کے مشیر معید یوسف سے رابطہ کیا لیکن ان سے رابطہ نہیں ہو سکا۔ اتوار کو ایک اور پیغام میں وزیر اعظم نے ہیش ٹیگ #SaveAfghanLives کا استعمال کرتے ہوئے ٹوئٹ کیا: 'میں افغانستان میں ظہور پذیر انسانی المیے، جس کےسبب کروڑوں افغان باشندے خصوصاً بچےبھوک کے خطرے سےدوچار ہیں کےحوالے سےبیداری شعور کی ایک عالمی تحریک کی آواز میں آواز ملاؤں گا اور چاہتا ہوں کہ لوگ بھی اس کے ہم آواز بنیں'۔.0 قرارداد میں کہا گیا تھا کہ سینیارٹی کے اصول پر عمل کا یہ مطلب نہیں کہ ایک ایسے جج کو ترقی دی جائے جس پر بدتمیزی یا خراب کارکردگی کے الزامات ہوں— فائل فوٹو:پی بی سی ویب سائٹ پاکستان بار کونسل (پی بی سی) کی سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کو سپریم کورٹ میں ترقی دینے کے خلاف منظور کی گئی قرارداد نے ہلچل مچا دی ہے، کونسل میں سندھ سے تعلق رکھنے والے ٓایک رکن نے اس قرارداد کو سندھ سے تعلق رکھنے والے چیف جسٹس کے خلاف ایک سازش قرار دیا ہے۔ ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق ماضی میں جوڈیشل کمیشن آف پاکستان میں بار کونسل کے نمائندے کے طور پر خدمات سر انجام دینے والے محمد یوسف لغاری نے کہا کہ انہوں نے پاکستان بار کونسل کے نومنتخب وائس چیئرمین حفیظ الرحمٰن چوہدری کو دو صفحات پر مشتمل ایک خط لکھ کر ان کی غیر موجودگی میں قرارداد کی منظوری پر افسوس کا اظہار کیا جبکہ وہ چھٹی پر تھے۔ خط میں کہا گیا کہ 'میں نے 21 جنوری (جمعہ) کے اجلاس کے ایجنڈے کو دیکھا جس میں اس طرح کی کسی بات پر غور کرنا شامل نہیں تھا'۔ یہ بھی پڑھیں: سندھ ہائیکورٹ میں قواعد کی ’مکمل تعمیل‘ کے بغیر بھرتیوں کی وضاحت طلب انہوں نے مزید کہا کہ انہیں لگتا ہے کہ یہ قرارداد اس طرح کی ایک سازش تھی جیسی سابق چیف جسٹس سجاد علی شاہ کے خلاف کی گئی تھی، جس کے بعد انہیں سپریم کورٹ نے اعلیٰ جج کے طور پر کام کرنے سے روک دیا تھا۔ جمعہ کو پاکستان بار کونسل کے وائس چیئرمین کے انتخاب کے فوراً بعد ایوان نے ایک قرارداد منظور کی اور میڈیا کو پریس ریلیز جاری کی جس میں ہائی کورٹ میں معاون قانونی عملے کی تعیناتیوں میں مبینہ بے ضابطگی سے متعلق زیر التوا کیس اور سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس احمد علی ایم شیخ کے خلاف سپریم جوڈیشل کونسل میں دائر ریفرنس کا فیصلہ ہونے تک ان کی سپریم کورٹ میں ترقی کی مخالفت کی گئی تھی۔ پاکستان بار کونسل کی قرارداد میں کہا گیا کہ ججوں کی ترقی کے لیے سینیارٹی کے اصول، آئین کی بالادستی، قانون کی حکمرانی اور عدلیہ کی آزادی پر عمل کیا جانا چاہیے لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ ایک ایسے جج کو ترقی دی جائے جو بے ضابطگی یا خراب کارکردگی کے الزامات کا سامنا کررہا ہو، بالخصوص سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کی ترقی کے معاملے میں کہ جو اپنے رجسٹرار کے توسط سے اپنی نگرانی میں سندھ کے کچھ اضلاع میں معاون قانونی عملے کی تعیناتی سے متعلق سنگین الزامات کا سامنا کررہے ہیں۔ مزید پڑھیں: عمر عطا بندیال باضابطہ طور پر ملک کے اگلے چیف جسٹس مقرر قرارداد پر سندھ ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن اور کراچی بار ایسوسی ایشن کی جانب سے تنقید کی گئی، جنہوں نے جمعہ کو بلائے گئے ایک ہنگامی اجلاس میں اس بیان پر سخت مؤقف لیا اور دعویٰ کیا کہ یہ پوری کونسل کا نہیں بلکہ صرف پاکستان بار کونسل کے وائس چیئرمین کا ذاتی نقطہ نظر تھا۔ سندھ ہائی کورٹ بار ایوسی ایشن اور کراچی بار ایسوسی ایشن کی مشترکہ قرارداد میں ان الزامات کو بھی مسترد کر دیا کہ سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس نے صوبائی عدلیہ میں کوئی غیر قانونی تعیناتیاں کیں۔ انہوں نے پاکستان بھر کی تمام بارز سے پاکستان بار کونسل کے مبینہ بیان کے ساتھ ساتھ بار کونسل کی ایگزیکٹو کمیٹی کے چیئرمین کی جانب سے چیف جسٹس گلزار احمد کو سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس سے متعلق ارسال کردہ خط کی مذمت کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔ مشترکہ قرارداد میں یاددہانی کروائی گئی کہ ایسوسی ایشن نے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف توہین آمیز مہم پر اصولی مؤقف اختیار کیا تھا اور وہ چیف جسٹس احمد علی ایم شیخ جیسے آزاد سوچ رکھنے والے ججز کے ساتھ کھڑے رہیں گے جن کی دیانتداری ناقابلِ مواخذہ تھی۔ یہ بھی پڑھیں: جسٹس عائشہ ملک کی تعیناتی: ’سینیارٹی قانونی تقاضا نہیں‘ قرارداد میں پاکستان بار کونسل سے یہ بھی مطالبہ کیا گیاکہ وہ اپنے وائس چیئرمین کی عہدے کا غلط استعمال کرنے اور ایک غیر مجاز پریس ریلیز جاری کرنے پر سرزنش کرے۔ اب پاکستان بار کونسل کے رکن محمد یوسف لغاری نے اپنے دو صفحات پر مشتمل خط میں سوال کیا کہ کیا اسی طرح ججوں کے خلاف قراردادیں منظور کی جاتی ہیں؟ انہوں نے دعویٰ کیا کہ ہائی کورٹ کے بعض ججز کے خلاف بہت سی شکایات ہیں لیکن ایسی قرارداد جو مبینہ طور پر ذاتی پسند اور ناپسند پر مبنی ہے، صرف ایک پنڈورا باکس ہی کھولے گی۔ قراداد میں مزید کہا گیا کہ کونسل کی جانب سے جاری کردہ پریس ریلیز پاکستان بار کونسل، سندھ بار کونسل اور سندھ ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے اس مؤقف کے برعکس ہے جس کے تحت انہوں نے سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کو ان کی سنیارٹی کی وجہ سے ترقی دینے کا مطالبہ کیا تھا۔ مزید پڑھیں: چیف جسٹس سے سپریم کورٹ کیلئے نامزدگی کا طریقہ کار طے کرنے کی درخواست انہوں نے لکھا کہ یہ 24 نومبر 2021 کو ہونے والے پاکستان بار کونسل کے اجلاس میں کیے گئے فیصلوں کے بھی خلاف تھا جہاں وائس چیئرمین کے اعتراضات پر غور کیا گیا تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ کونسل کی ایگزیکٹو کمیٹی کا اختیار نہیں کہ وہ کمیٹی کے ایک رکن ریاضت علی سحر کی درخواست پر چیف جسٹس آف پاکستان کو سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کے خلاف خط لکھے۔ محمد یوسف لغاری نے اپنے خط میں یاد دلایا کہ طویل بحث کے بعد معاملہ دوبارہ ایگزیکٹو کمیٹی کے پاس ایک نئے فیصلے کے لیے بھیج دیا گیا تھا اور جہاں تک ان کے علم میں ہے اس معاملے پر دوبارہ غور کرنے کے لیے کمیٹی کا کوئی اجلاس منعقد نہیں ہوا۔ خط میں یہ سوال بھی اٹھایا گیا ہے کہ جب یہ معاملہ سپریم کورٹ میں زیر سماعت ہے تو وکلا برادری کی اعلیٰ تنظیم یہ کیسے کہہ سکتی ہے کہ جج نے وکلا کے ساتھ بدتمیزی کی؟ اس کے علاوہ سندھ ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن نے پہلے ہی قرار دے چکی ہے کہ سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس ایک ایماندار، آزاد اور قابل جج ہیں۔ اپنے خط میں یوسف لغاری نے جمعہ کو جاری کردہ اپنی مشترکہ قرارداد میں سندھ ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن اور کراچی بار ایسویسی ایشن کے مؤقف کی بھی حمایت کی۔.0 گلوکارہ کو 8 جنوری کو ہسپتال داخل کرایا گیا تھا—فائل فوٹو: فیس بک برصغیر کی معروف اور بھارت کی ’کوئل‘ کہلائی جانے والی لیجنڈری گلوکارہ 92 سالہ لتا منگیشکر گزشتہ دو ہفتوں سے ’نمونیا‘ بخار اور ’کورونا‘ کی وجہ سے ہسپتال میں داخل ہیں اور ان کی صحت کے حوالے سے مختلف افواہیں پھیلنے پر ان کے اہل خانہ پریشان دکھائی دے رہے ہیں۔ بھارتی نشریاتی ادارے ’نئی دہلی ٹیلی وژن‘ ( این ڈی ٹی وی ) کے مطابق لتا منگیشکر کی صحت کے حوالے سے جعلی خبریں پھیلنے کے بعد مرکزی وزیر اور سابق اداکارہ سمرتی ایرانی بھی پریشان دکھائی دیں اور انہوں نے ایک ٹوئٹ کے ذریعے عوام سے اپیل کی کہ وہ لیجنڈری گلوکارہ کے حوالے سے افواہیں پھیلانے سے گریز کریں۔ سمرتی ایرانی نے لتا منگیشکر کے اہل خانہ کی جانب سے ہسپتال کی ڈاکٹر کی جانب سے بھیجے گئے پیغام کا اسکرین شاٹ بھی شیئر کیا۔ ڈاکٹر کے پیغام کے مطابق اگرچہ تاحال لتا منگیشکر انتہائی نگہداشت کے وارڈ (آئی سی یو) میں داخل ہیں، تاہم ان کی طبیعت میں بہتری ہونا شروع ہوئی ہے۔ یہ بھی پڑھیں: مرکزی وزیر سمرتی ایرانی نے لوگوں سے لتا منگیشکر کے حوالے سے افواہیں نہ پھیلانے سمیت ان کی صحت یابی کے لیے دعاؤں کی اپیل بھی کی۔ اسی حوالے سے ’انڈین ایکسپریس‘ نے بھی اپنی رپورٹ میں بتایا کہ لتا منگیشکر کی صحت میں مسلسل بہتری آ رہی ہے، تاہم انہیں تاحال آئی سی یو میں ہی رکھا گیا ہے۔ رپورٹ میں ہسپتال اور لتا منگیشکر کے خاندانی ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ زائد العمری کی وجہ سے لتا منگیشر کی حالت انتہائی سست رفتاری سے بہتر ہو رہی ہے، تاہم وہ پہلے سے کافی بہتر ہے۔ اہل خانہ کے مطابق گلوکارہ کی حالت بدستور بہتر ہو رہی ہے—فائل فوٹو: فیس بک اس سے قبل گزشتہ روز ’انڈین ایکسپریس‘ نے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا تھا کہ لتا منگیشکر کے ترجمان نے ان کی صحت کے حوالے سے پھیلنے والی خبروں کو غلط قرار دیتے ہوئے کہا کہ ایسی خبروں میں کوئی سچائی نہیں کہ گلوکارہ کی حالت مزید خراب ہوگئی۔ ترجمان نے دعویٰ کیا تھا کہ لتا منگیشکر نے دو دن قبل ہی دو ہفتوں کے بعد کھانا پینا شروع کیا ہے، تاہم تاحال انہیں آئی سی یو میں ہی رکھا گیا ہے اور انہیں مزید کچھ وقت ہے لیے انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں ہی رکھا جائے گا۔ لتا منگیشکر کو 8 جنوری کو ’نمونیا‘ بخار اور کورونا ہونے کے بعد ممبئی کے نجی ہسپتال داخل کرایا گیا تھا۔ زائد العمری کی وجہ سے پہلے ہی ڈاکٹرز نے کہا تھا کہ لیجنڈری گلوکارہ کو کئی دن میں آئی سی یو میں رکھا جائے گا، کیوں کہ ’نمونیا‘ نے انہیں شدید متاثر کیا ہے۔ مزید پڑھیں: لتا منگیشکر 10 دن سے آئی سی یو میں داخل تقریبا 10 دن گزر جانے کے باوجود لتا منگیشکر تاحال آئی سی یو میں داخل ہیں اور گزشتہ چند روز سے ان کی صحت اور زندگی سے متعلق بھارتی میڈیا اور سوشل میڈیا پر مختلف افواہیں بھی پھیل رہی ہیں۔ لیجنڈری گلوکارہ کو سانس لینے میں مشکلات کا مسئلہ دیرینہ ہے، انہیں دسمبر 2019 میں بھی سانس لینے میں تکلیف کے باعث ایک ماہ تک ہسپتال میں رکھا گیا تھا۔ لتا منگیشکر کو بھارت کی ہر دور کی مقبول گلوکارہ مانا جاتا ہے، وہ پاکستان کے علاوہ دیگر جنوبی ایشیائی ممالک میں بھی یکساں مقبول ہے۔ ریاست مدھیا پردیش کے شہر اندور میں 28 ستمبر 1929 کو پید اہونے والی لتا منگیشکر کو ان کی گلوکاری کے عوض بھارت کے بڑے سول ایوارڈز سمیت انہیں متعدد ایوارڈز سے بھی نوازا جاچکا ہے۔ آواز کی کوئل کہلائی جانے والی گلوکارہ 2019 میں ایک ماہ تک ہسپتال میں زیر علاج رہی تھیں—فائل فوٹو: انسٹاگرام.