\u0645\u0644\u06a9 \u0628\u06be\u0631 \u0645\u06cc\u06ba \u06a9\u0648\u0631\u0648\u0646\u0627 \u0648\u0627\u0626\u0631\u0633 \u06a9\u06d2 268 \u06a9\u06cc\u0633\u0632 \u0631\u067e\u0648\u0631\u0679\u060c \u0645\u062b\u0628\u062a \u06a9\u06cc\u0633\u0632 \u06a9\u06cc \u0634\u0631\u062d 2.14 \u0641\u06cc\u0635\u062f \u062a\u062c\u0627\u0648\u0632

23/06/2022 7:30:00 AM

کراچی میں مثبت کیسز کی شرح 15.44 فیصد ہے جبکہ مظفر آباد، کوئٹہ، اسلام آباد، مردان، نوشیرہ اور لاہور میں 2 فیصد سے زائد کیسز رپورٹ ہوئے ہیں، این سی او سی مزید پڑھیں: #coronavirus #DawnNews

Coronavirus

کراچی میں مثبت کیسز کی شرح 15.44 فیصد ہے جبکہ مظفر آباد، کوئٹہ، اسلام آباد، مردان، نوشیرہ اور لاہور میں 2 فیصد سے زائد کیسز رپورٹ ہوئے ہیں، این سی او سی مزید پڑھیں: coronavirus DawnNews

\u06a9\u0648\u0631\u0648\u0646\u0627 \u0648\u0627\u0626\u0631\u0633 \u06a9\u06d2 \u067e\u06be\u06cc\u0644\u0627\u0624 \u06a9\u0648 \u0631\u0648\u06a9\u0646\u06d2 \u0627\u0648\u0631 \u0627\u0633 \u0633\u06d2 \u062d\u0641\u0627\u0638\u062a \u06a9\u06d2 \u0644\u06cc\u06d2 \u062a\u0645\u0627\u0645 \u0635\u0648\u0628\u0648\u06ba \u0645\u06cc\u06ba \u062a\u0631\u062c\u06cc\u062d\u06cc \u0628\u0646\u06cc\u0627\u062f\u0648\u06ba \u067e\u0631 \u0628\u0648\u0633\u0679\u0631 \u0634\u0627\u0679\u0633 \u0644\u06af\u0627\u0626\u06d2 \u062c\u0627\u0626\u06cc\u06ba\u060c \u0648\u0632\u06cc\u0631 \u0635\u062d\u062a

قومی ادارہ صحت کے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 12 ہزار 513 ٹیسٹ کیے گئے جس میں سے 2.14 فیصد ٹیسٹوں کے مثبت نتائج موصول ہوئے۔ڈان اخبار کیعلاوہ ازیں گزشتہ مہینوں میں روزانہ کی بنیاد پر کورونا وائرس کے ٹیسٹ میں کمی کردی گئی تھی جس میں ایک بار پھر اضافہ کردیا جائےگا، تاکہ ملک بھر میں وبا سے متاثر افراد کی تعداد کا جائزہ لیا جاسکے۔

اسلام آباد میں وفاقی وزیر صحت عبد القدیر پٹیل کی زیر صدارت این سی او سی کا اجلاس ہوا جس میں وزارت داخلہ، نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی، ڈرگ ریگیولیٹری اتھارٹی آف پاکستان اور مقامی انتظامیہ نے شرکت کی جبکہ صوبائی نمائندگان ویڈیو لنک کے ذریعے شریک ہوئے۔

مزید پڑھ:
DawnNews »

Game Set Match with Sawera Pasha & Adeel Azhar | Exclusive Talk with Shahid Afridi | SAMAA TV

#samaatv #pakvseng #abrarahmed ➽ Subscribe to Samaa News ➽ https://bit.ly/2Wh8Sp8➽ Watch Samaa News Live ➽ https://bit.ly/3oUSwAPStay up-to-date on the major... مزید پڑھ >>

\u0627\u0633\u0644\u0627\u0645 \u0622\u0628\u0627\u062f\u060c \u067e\u0646\u062c\u0627\u0628 \u0627\u0648\u0631 \u062e\u06cc\u0628\u0631\u067e\u062e\u062a\u0648\u0646\u062e\u0648\u0627 \u06a9\u06d2 \u0645\u062e\u062a\u0644\u0641 \u0634\u06c1\u0631\u0648\u06ba \u0645\u06cc\u06ba \u0632\u0644\u0632\u0644\u06d2 \u06a9\u06d2 \u062c\u06be\u0679\u06a9\u06d2\u0631\u0627\u062a \u06af\u0626\u06d2 \u0645\u0644\u06a9 \u06a9\u06d2 \u0645\u062e\u062a\u0644\u0641 \u0634\u06c1\u0631\u0648\u06ba \u0645\u06cc\u06ba6.1 \u0634\u062f\u062a \u06a9\u0627 \u0632\u0644\u0632\u0644\u06c1 \u0622\u06cc\u0627\u060c \u0632\u0644\u0632\u0644\u06d2 \u06a9\u06d2 \u0628\u0627\u0639\u062b \u0634\u06c1\u0631\u06cc\u0648\u06ba \u0645\u06cc\u06ba \u062e\u0648\u0641 \u0648\u06c1\u0631\u0627\u0633 \u067e\u06be\u06cc\u0644 \u06af\u06cc\u0627 \u0627\u0648\u0631 \u0644\u0648\u06af \u06a9\u0644\u0645\u06c1 \u0637\u06cc\u0628\u06c1 \u06a9\u0627 \u0648\u0631\u062f \u06a9\u0631\u062a\u06d2 \u06c1\u0648\u0626\u06d2 \u06af\u06be\u0631\u0648\u06ba \u0633\u06d2 \u0628\u0627\u06c1\u0631 \u0646\u06a9\u0644 \u0622\u0626\u06d2 \u062a\u0627\u06c1\u0645 \u0632\u0644\u0632\u0644\u06d2 \u0633\u06d2 \u06a9\u0648\u0626\u06cc \u062c\u0627\u0646\u06cc \u06cc\u0627 \u0645\u0627\u0644\u06cc \u0646\u0642\u0635\u0627\u0646 \u06a9\u06cc \u0627\u0637\u0644\u0627\u0639 \u0646\u06c1\u06cc\u06ba \u0645\u0644\u06cc\u06d4

\u0627\u0645\u0631\u06cc\u06a9\u0627 \u0645\u06cc\u06ba 6 \u0645\u0627\u06c1 \u06a9\u06d2 \u06a9\u0645 \u0633\u0646 \u0628\u0686\u0648\u06ba \u06a9\u0648 \u06a9\u0648\u0631\u0648\u0646\u0627 \u0648\u06cc\u06a9\u0633\u06cc\u0646 \u0644\u06af\u0627\u0646\u06d2 \u06a9\u0627 \u0627\u0653\u063a\u0627\u06326 \u0645\u0627\u06c1 \u0633\u06d2 4 \u0633\u0627\u0644 \u06a9\u06cc \u0639\u0645\u0631 \u06a9\u06d2 \u0628\u0686\u0648\u06ba \u06a9\u0648 \u062a\u06cc\u0646 \u0645\u0627\u0626\u06a9\u0631\u0648 \u06af\u0631\u0627\u0645 \u06a9\u0627 \u0688\u0648\u0632 \u0644\u06af\u0627\u06cc\u0627 \u062c\u0627\u0626\u06d2 \u06af\u0627 \u0627\u0648\u0631 \u0627\u0646\u06c1\u06cc\u06ba \u0628\u06be\u06cc \u0627\u06cc\u06a9 \u0645\u0627\u06c1 \u0628\u0639\u062f \u062f\u0648\u0628\u0627\u0631\u06c1 \u0627\u062a\u0646\u0627 \u06c1\u06cc \u0688\u0648\u0632 \u0644\u06af\u0627\u06cc\u0627 \u062c\u0627\u0626\u06d2 \u06af\u0627\u06d4

\u0644\u0646\u062f\u0646: \u0633\u06cc\u0648\u0631\u06cc\u062c \u06a9\u06d2 \u0646\u0645\u0648\u0646\u0648\u06ba \u0645\u06cc\u06ba \u067e\u0648\u0644\u06cc\u0648 \u0648\u0627\u0626\u0631\u0633 \u0631\u067e\u0648\u0631\u0679\u0634\u06c1\u0631 \u0645\u06cc\u06ba \u062c\u0646 \u0628\u0686\u0648\u06ba \u06a9\u0648 \u062d\u0641\u0627\u0638\u062a\u06cc \u0679\u06cc\u06a9\u06d2 \u0646\u06c1\u06cc\u06ba \u0644\u06af\u0627\u0626\u06d2 \u06af\u0626\u06d2 \u0646\u06cc\u0634\u0646\u0644 \u06c1\u06cc\u0644\u062a\u06be \u0633\u0631\u0648\u06335 \u0633\u0627\u0644 \u0633\u06d2 \u06a9\u0645 \u0639\u0645\u0631 \u06a9\u06d2 \u0628\u0686\u0648\u06ba \u06a9\u06d2 \u0648\u0627\u0644\u062f\u06cc\u0646 \u0633\u06d2 \u0631\u0627\u0628\u0637\u06c1 \u06a9\u0631\u06d2 \u06af\u06cc\u060c \u0631\u067e\u0648\u0631\u0679

\u0646\u06cc\u0628 \u0642\u0648\u0627\u0646\u06cc\u0646 \u0645\u06cc\u06ba \u062a\u0631\u0645\u06cc\u0645 \u06a9\u06d2 \u0630\u0631\u06cc\u0639\u06d2 \u0645\u0633\u0644\u0645 \u0644\u06cc\u06af (\u0646) \u06a9\u06d2\u06a9\u06cc\u0633\u0632 \u062e\u062a\u0645 \u06a9\u0631\u0646\u06d2 \u06a9\u0627 \u062a\u0627\u062b\u0631 \u063a\u0644\u0637 \u06c1\u06d2\u060c \u0634\u0627\u06c1\u062f\u062e\u0627\u0642\u0627\u0646 \u0639\u0628\u0627\u0633\u06cc\u062a\u0645\u0627\u0645 \u06a9\u06cc\u0633\u0632 \u0633\u06cc\u0627\u0633\u06cc \u0627\u0646\u062c\u06cc\u0646\u0626\u0631\u0646\u06af \u06a9\u0627 \u0646\u062a\u06cc\u062c\u06c1 \u06c1\u06cc\u06ba\u060c \u06cc\u06c1 \u06a9\u06cc\u0633\u0632 \u0645\u062e\u0627\u0644\u0641\u06cc\u0646 \u067e\u0631 \u062f\u0628\u0627\u0624 \u0688\u0627\u0644\u0646\u06d2 \u06a9\u06d2 \u0644\u06cc\u06d2 \u0639\u0645\u0631\u0627\u0646 \u062e\u0627\u0646 \u06a9\u06d2 \u062d\u06a9\u0645 \u067e\u0631 \u0628\u0646\u0627\u0626\u06d2 \u06af\u0626\u06d2\u060c \u0631\u06c1\u0646\u0645\u0627 \u0645\u0633\u0644\u0645 \u0644\u06cc\u06af (\u0646) Jhootay uncle Aap chor hien due to monsoon rain around the country power consumption already reduced, its naturally , education, personality , money never can change patwari to human ابھی موسم ٹھنڈا اور بارش ہو رہی ہے صرف دو تین دن بعد آپ کی کمی ساری پوری ہو گی جب لوگوں کے اے سی دوبارہ چلیں گے

\u0628\u06be\u0627\u0631\u062a : \u0633\u062f\u06be\u0648 \u0645\u0648\u0633\u06d2 \u0648\u0627\u0644\u0627 \u06a9\u06d2 \u0642\u062a\u0644 \u06a9\u06d2 \u0634\u0628\u06d2 \u0645\u06cc\u06ba 3 \u0645\u0644\u0632\u0645\u0627\u0646 \u06af\u0631\u0641\u062a\u0627\u0631\u06af\u0631\u0641\u062a\u0627\u0631 \u0645\u0644\u0632\u0645\u0627\u0646 \u06a9\u06d2 \u0642\u0628\u0636\u06d2 \u0633\u06d2 \u06af\u0631\u0646\u06cc\u0688\u060c \u06af\u0631\u0646\u06cc\u0688 \u0644\u0627\u0646\u0686\u0631\u060c \u0631\u0627\u0626\u0641\u0644\u060c \u0627\u0644\u06cc\u06a9\u0679\u0631\u06a9 \u0688\u06cc\u0679\u0648\u0646\u06cc\u0679\u0631\u0632 \u0627\u0648\u0631 \u067e\u0633\u062a\u0648\u0644 \u0628\u0631\u0622\u0645\u062f \u06c1\u0648\u0626\u06d2\u060c \u067e\u0648\u0644\u06cc\u0633

\u06a9\u0631\u0627\u0686\u06cc \u0645\u06cc\u06ba \u0634\u0627\u06c1\u0631\u0627\u06c1\u0648\u06ba \u0633\u06d2 \u0628\u0627\u0631\u0634 \u06a9\u06d2 \u067e\u0627\u0646\u06cc \u06a9\u06cc \u0646\u06a9\u0627\u0633\u06cc \u06a9\u06cc\u0644\u0626\u06d2 \u0679\u06cc\u0645\u06cc\u06ba \u062a\u0634\u06a9\u06cc\u0644\u0646\u0627\u0635\u0631 \u0634\u0627\u06c1 \u06a9\u06cc \u0632\u06cc\u0631\u0635\u062f\u0627\u0631\u062a \u0628\u0631\u0633\u0627\u062a\u06cc \u0646\u0627\u0644\u0648\u06ba \u06a9\u06cc \u0635\u0641\u0627\u0626\u06cc \u06a9\u06d2 \u062d\u0648\u0627\u0644\u06d2 \u0633\u06d2 \u0627\u06c1\u0645 \u0627\u062c\u0644\u0627\u0633 SohailRabKhan اور جب بارش ہوتی ہے تو ٹیمیں نظر ہی نہیں آتی ماسوائے عام عوام ۔۔۔

0 وفاقی وزیر نے احتیاطی تدابیر اختیار کرنے پر زور دیا— فائل فوٹو: اے پی ڈھائی ماہ بعد کورونا وائرس کے ایک بار پھر سر اٹھانے پر حکومت کی جانب سے ٹیسنگ کا عمل تیز کردیا گیا، ملک بھر میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 268 کیسز رپورٹ ہوئے۔ قومی ادارہ صحت کے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 12 ہزار 513 ٹیسٹ کیے گئے جس میں سے 2.Comments زلزلے کے جھٹکے 30 سے 40 سیکنڈز تک محسوس کیے گئے۔ اسلام آباد: وفاقی دارالحکومت اسلام آباد ، پنجاب اور خیبرپختونخوا کے مختلف شہروں میں زلزلے کے جھٹکے محسوس کئے گئے جس کی شدت 6.0 ایک کروڑ 80 لاکھ بچے ویکسین کے اہل ہیں، رپورٹ—فوٹو: رائٹرز امریکا میں 6 ماہ سے زائد عمر کے بچوں کو بھی 21 جون سے کورونا سے تحفظ کی ویکسین لگانے کا آغاز کردیا گیا۔ امریکا میں پہلے ہی 5 سال سے زائد عمر کے بچوں کو ویکسین لگانے کا آغاز کیا جا چکا تھا، تاہم 6 ماہ کے کم سن بچوں کو بھی کورونا ویکسین کے متعدد ڈوز لگانے کا آغاز کردیا گیا۔ خبر رساں ادارے ’رائٹرز‘ کے مطابق امریکا بھر میں 6 ماہ سے 5 سال کی عمر کے ایک کروڑ 80 لاکھ بچے ہیں جو کورونا ویکسین لگوانے کے اہل ہیں اور ملک بھر میں 21 جون کو ویکسینیشن کا عمل شروع کردیا گیا۔ رپورٹ کے مطابق 4 سال کی عمر کے بچوں کو فائزر و بائیو ٹیک کی ویکسین جب کہ 5 سال تک کے بچوں کو موڈرینا کی ویکسین لگائی جائے گی اور تمام بچوں کو ابتدائی طور پر دو ڈوز لگائے جائیں گے۔ یہ بھی پڑھیں: بچوں کو بھی بالغ افراد کی طرح پہلے ڈوز کے چار ہفتوں بعد دوسرا ڈوز لگایا جائے گا جب کہ ضرورت پڑنے پر انہیں بھی بوسٹر ڈوز لگانے کی تجویز زیر غور ہے۔ اسی حوالے سے امریکی نشریاتی ادارے ’سی این این‘ نے بتایا کہ 6 ماہ سے 4 سال کی عمر کے بچوں کو تین مائکرو گرام کا ڈوز لگایا جائے گا اور انہیں بھی ایک ماہ بعد دوبارہ اتنا ہی ڈوز لگایا جائے گا۔ اسی طرح 5 سال سے زائد عمر کے بچوں کو 10 مائکرو گرام جب کہ 12 سال کی عمر کے بچوں کو 30 مائکرو گرام اور 12 سال سے زائد عمر کے بچوں کو 50 مائکرو گرام کے ڈوز لگائے جائیں گے۔ امریکا میں پہلے ہی 5 سال سے زائد عمر کے بچوں کو ویکسین لگانے کی اجازت دی گئی تھی، اس کے علاوہ دیگر کئی ممالک میں بھی 5 سال سے زائد عمر کے علاوہ اس سے کم عمر بچوں کو بھی کورونا ویکسین لازمی لگانے کی اجازت دی گئی تھی۔ پاکستان میں اسکول جانے والے بچوں کو بھی ویکسین لگوانے کی تجویز دی گئی تھی، تاہم پاکستان میں ویکسین کے لیے بچوں کی کم سے کم عمر 12 سال تجویز کی گئی تھی۔ متعدد ممالک میں اب بچوں کو ویکسین لگانے سمیت انہیں بھی بوسٹر ڈوز لگائے جا رہے ہیں۔.0 وائرس پر قابو پانے کے لیے ملک بھر میں ویکسینیشن کی سطح 90 فیصد سے زیادہ درکار ہے —فائل فوٹو: اے ایف پی برطانیہ کے دارالحکومت لندن میں سیوریج کے پانی کے نمونوں میں پولیو وائرس رپورٹ ہوا ہے، جس کے بارے میں حکام نے کہا ہے کہ یہ 1980 کی دہائی کے بعد پہلا موقع ہے کہ وائرس ملک بھر میں پھیل سکتا ہے لیکن تاحال کوئی کیس سامنے نہیں آیا۔ غیر ملکی خبر ایجنسی ’رائٹرز‘ کی رپورٹ کے مطابق یوکے ہیلتھ سیکیورٹی ایجنسی (یو کے ایچ ایس اے) نے کہا ہے کہ ایک فیصد سے کم کیسز میں بچوں میں معذوری کا سبب بننے والی اس بیماری سے انفیکشن کا خطرہ دراصل ویکسنیشن کی زیادہ شرح کی وجہ سے بھی کم ہوگیا ہے۔ لیکن اس کے باوجود ہیلتھ ایجنسی نے والدین کی حوصلہ افزائی کی ہے کہ وہ اپنے بچوں کو گندے پانی کی معمول کے مطابق معائنے سے وائرس کی دریافت کے بعد ویکسین لگانے کو یقینی بنائیں اور خاص طور پر وہ لوگ جنہوں نے کورونا کی ویکسین نہیں لگوائی۔ مزید پڑھیں: پاکستان میں رواں برس پولیو وائرس کا تیسرا کیس رپورٹ رپورٹ کے مطابق وائرس پر قابو پانے کے لیے ملک بھر میں ویکسینیشن کی سطح 90 فیصد سے زیادہ درکار ہے لیکن حالیہ برسوں میں لندن میں بچوں کی ویکسینیشن کی شرح اس سے نیچے گر گئی ہے۔ شہر میں جن بچوں کو حفاظتی ٹیکے نہیں لگائے گئے نیشنل ہیلتھ سروس 5 سال سے کم عمر کے بچوں کے والدین سے رابطہ کرے گی۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ پولیو بنیادی طور پر فضلے کی آلودگی سے پھیلتا ہے جس کے نتیجے میں دنیا بھر میں سالانہ ہزاروں بچے زندگی کی بازی ہار جاتے ہیں جبکہ ہزاروں معذوری کا شکار ہو جاتے ہیں، ابتدائی طور پر اس کا کوئی علاج نہیں ہے لیکن ویکسینیشن نے دنیا کو جنگلی یا قدرتی طور پر ہونے والی اس بیماری کے خاتمے کے قریب پہنچا دیا ہے۔ ہیلتھ ایجنسی کا کہنا ہے کہ اس سے عام طور پر سالانہ ایک سے تین کے درمیان سیوریج میں پولیو وائرس کے نمونے ملتے ہیں جو کہ پہلے نہ ہونے کے برابر تھے۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ رواں سال، اس کا ایک نمونہ فروری میں مشرقی لندن کے بیکٹن ٹریٹمنٹ ورکس میں پایا گیا تھا اور اسی پلانٹ میں اپریل سے اب تک تقریباً 40 لاکھ افراد کی خدمت کرنے والے پلانٹ میں ابھی تک کیسز سامنے آ رہے ہیں۔ ہیلتھ ایجنسی کا کہنا ہے کہ ماضی میں اس طرح ہوتا تھا کہ جو فرد بیرون ملک سے براہ راست زبانی پولیو ویکسین کے ساتھ ویکسین کے ذریعے واپس آتا یا ملک کا سفر کرتا تھا اور مختصر طور پر اپنے فضلے کے ذریعے وائرس کا اخراج کرتا تھا تو پھر وائرس ظاہر ہوتا تھا۔ یہ بھی پڑھیں: ملک بھر میں آج سے 5 روزہ انسداد پولیو مہم کا آغاز ہیلتھ ایجنسی کا خیال ہے کہ اس بار بھی ایسا ہی ہوا ہے لیکن اہم فرق یہ ہے کہ یہ وائرس ممکنہ طور پر آپس میں جڑے ہوئے لوگوں کے درمیان بھی ممکنہ طور پر پھیل چکا ہے اور اسے ’ویکسین سے حاصل کردہ پولیو وائرس‘ کے نام سے جانا جاتا ہے، جو بیماری کا سبب بن سکتا ہے، ایجنسی نے کہا کہ کمیونٹی ٹرانسمیشن کی تحقیقات کی جا رہی ہے۔ اگرچہ برطانیہ میں اس قسم کا واقعہ مؤثر طریقے قابل غور نہیں اور ویکسین سے پھیلنے والے پولیو وائرس کے طور پر ہی جانا جاتا ہے، اس وائرس کا عالمی سطح پر ان ممالک میں خطرہ ہے جہاں حفاظتی ٹیکوں کی پہنچ کم ہے جس کی وجہ سے یہ وائرس پھیلنے کا سبب بن سکتا ہے اور یوکرین اور اسرائیل میں بھی حال ہی میں اس وائرس کے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں جبکہ نائیجیریا اور یمن جیسے ممالک میں یہ وبا زیادہ عام ہے۔ مزید پڑھیں: پاکستان میں 15 ماہ بعد پولیو کا پہلا کیس رپورٹ برطانیہ میں پولیو کا آخری کیس 1984 میں سامنے آیا تھا، اور یہ ’جنگلی‘ پولیو اب صرف افغانستان اور پاکستان میں پایا جاتا ہے، تاہم 2022 میں ملاوی اور موزمبیق میں وائرس کے پھیلنے کی اطلاع ملی ہے جو باہر سے آیا۔ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے ڈائریکٹر جنرل ٹیڈروس ایڈہانوم گیبریاس نے کہا کہ ہیلتھ ایجنسی برطانیہ کے ساتھ تعاون کرکے کام کر رہی ہے۔ انہوں نے ٹویٹر پر اپنے بیان میں کہا کہ پولیو کے خاتمے کے لیے نگرانی، ویکسینیشن اور سرمایہ کاری اہم ہے۔.

14 فیصد ٹیسٹوں کے مثبت نتائج موصول ہوئے۔ این آئی ایچ نے بتایا کہ کورونا وائرس سے متاثر 75 مریضوں کی حالت تشویش ناک ہے۔ دوسری جانب عالمی وبا کے کیسز میں اضافے کے بعد حکومت نے بھی اقدامات شروع کردیئے ہیں، حالات کا جائزہ لینے کے لیے نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر میں ملک کی وفاقی و صوبائی قیادت سر جوڑ کربیٹھ گئی۔ ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق فورم کی جانب سے فیصلہ کیا گیا ہے کہ شہریوں کی ویکسین کی مہم تیز کی جائے کیونکہ یہ کورونا وائرس سے دفاع کے لیے اہم ہتھیار ہے۔ علاوہ ازیں گزشتہ مہینوں میں روزانہ کی بنیاد پر کورونا وائرس کے ٹیسٹ میں کمی کردی گئی تھی جس میں ایک بار پھر اضافہ کردیا جائےگا، تاکہ ملک بھر میں وبا سے متاثر افراد کی تعداد کا جائزہ لیا جاسکے۔ مزید پڑھیں: کورونا وائرس دوبارہ سر اٹھانے لگا، حیدر آباد میں مثبت شرح 16 فیصد ریکارڈ اسلام آباد میں وفاقی وزیر صحت عبد القدیر پٹیل کی زیر صدارت این سی او سی کا اجلاس ہوا جس میں وزارت داخلہ، نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی، ڈرگ ریگیولیٹری اتھارٹی آف پاکستان اور مقامی انتظامیہ نے شرکت کی جبکہ صوبائی نمائندگان ویڈیو لنک کے ذریعے شریک ہوئے۔ نیشنل کوآرڈینیٹر میجر عامر اکرام نے کورونا کے موجودہ حالات اور ویکسی نیشن کا جائزہ لیا۔ فورم کو آگاہ کیا گیا کہ 85 فیصد اہل آبادی مکمل طور پر ویکسینیٹڈ ہے جبکہ 93 فیصد نے ویکسین کی ایک خوراک حاصل کی ہے جبکہ سندھ میں 12 سال اور اس سے زائد عمر 100 فیصد افراد ویکسین لگوا چکے ہیں۔ صوبائی وزیر کی جانب سے ہدایت جاری کی گئی کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے اور اس سے حفاظت کے لیے تمام صوبوں اور علاقوں میں ترجیحی بنیادوں پر بوسٹر شاٹس لگائے جائیں۔ یہ بھی پڑھیں: طبی ماہرین نے کورونا وائرس کی چھٹی لہر کے خطرے سے خبردار کردیا انہوں نے کہا کہ اگر موجودہ حالات کا جائزہ لیا جائے تو ملک میں کورونا وائرس کے مثبت کیسز کی شرح 2 فیصد ہے جس کا سہرا ہیلتھ کیئر سسٹم اور اسٹیک ہولڈرز کو جاتا ہے پھر بھی ہمیں موجودہ حالات کے پیش نظر چوکنا رہنے کی ضرورت ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ’ کورونا وائرس کی عالمی حالات کے پیشِ نظر سینٹرل ہیلتھ اسٹیبلشمنٹ (سی ایچ ای) کو تمام داخلی مقامات پر مسافروں کی صحت کا جائزہ لینا چاہیے، سی ایچ ای کی فعالیت کو بڑھانے کے لیے اسے مضبوط کیا جائےگا‘۔ سی ایچ سی ملک کے باہر صحت سے متعلق پیش رفت کا جائزہ لیتے ہوئے بیماریوں کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے اقدامات کرنے کی ہدایت جاری کرتا ہے۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے نان فرماسیوٹیکل انٹروینشن (این پی آئیز) اور دیگر اقدامات اٹھائے جائیں گے۔ مزید پڑھیں: کورونا وائرس: صوبہ سندھ نے 100 فیصد ویکسینیشن کا ہدف عبور کرلیا وزیر نے سماجی فاصلہ، ماسک پہننے اور خاص طور پر ہجوم والے مقامات پر احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی اہمیت پر زور دیا۔ انہوں نے عید الضحیٰ کے موقع پر مارکیٹوں میں ہدایات پر سختی سے عمل درآمد کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ این سی او سی کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق کراچی میں مثبت کیسز کی شرح 15.44 فیصد ہے، جبکہ مظفر آباد، کوئٹہ، اسلام آباد، مردان، نوشیرہ اور لاہور میں 2 فیصد سے زائد کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔ .1 فیصد ریکارڈ کی گئی، جس کا مرکز افغان شہرخوست سے 44 کلو میٹر جنوب مغرب میں تھا جبکہ زلزلے کی گہرائی 50.