\u0639\u062f\u0645 \u0627\u0639\u062a\u0645\u0627\u062f \u06a9\u06d2 \u0628\u0639\u062f \u0645\u06cc\u0631\u0627 \u0627\u0633\u0679\u06cc\u0628\u0644\u0634\u0645\u0646\u0679 \u0633\u06d2 \u06a9\u0648\u0626\u06cc \u0631\u0627\u0628\u0637\u06c1 \u0646\u06c1\u06cc\u06ba: \u0634\u06cc\u062e \u0631\u0634\u06cc\u062f

12/08/2022 6:58:00 PM

عدم اعتماد کے بعد میرا اسٹیبلشمنٹ سے کوئی رابطہ نہیں: شیخ رشید

عدم اعتماد کے بعد میرا اسٹیبلشمنٹ سے کوئی رابطہ نہیں: شیخ رشید

\u062e\u06cc\u0628\u0631 \u067e\u062e\u062a\u0648\u0646\u062e\u0648\u0627 \u0645\u06cc\u06ba \u0628\u0627\u0691 \u0644\u06af\u06cc \u06c1\u06d2\u060c \u0637\u0627\u0644\u0628\u0627\u0646 \u06a9\u06cc\u0633\u06d2 \u0622\u06af\u0626\u06d2 \u06cc\u06c1 \u0628\u0691\u0627 \u0633\u0648\u0627\u0644\u06cc\u06c1 \u0646\u0634\u0627\u0646 \u06c1\u06d2\u060c \u0644\u06cc\u06a9\u0646 \u0627\u0633 \u06a9\u06d2 \u0628\u0627\u0648\u062c\u0648\u062f \u0648\u0632\u06cc\u0631 \u062e\u0627\u0631\u062c\u06c1 \u0628\u0644\u0627\u0648\u0644 \u0628\u06be\u0679\u0648 \u06a9\u0648 \u062f\u0648\u0631\u0648\u06ba \u0633\u06d2 \u0641\u0631\u0635\u062a \u0646\u06c1\u06cc\u06ba \u06c1\u06d2

سیاست دان اپنے گندے کپڑے اوپن نہ دھوئیں۔ فوٹو — فائلسابق وزیر داخلہ اور سربراہ عوامی مسلم لیگ (اے ایم ایل) شیخ رشید کا کہنا ہے کہ عمران خان کے خلاف عدم اعتماد کے بعد سے میرا اسٹیبلشمنٹ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔لال حویلی راولپنڈی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا کہ تمام 13 پی ڈی ایم جماعتیں تباہ ہوچکی ہیں، انہیں الیکشن میں جانا چاہیئے کیونکہ انتخابات میں جتنی تاخیر ہوگی، عمران خان کو اتنا فائدہ ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ خیبر پختونخوا میں باڑ لگی ہے، طالبان کیسے آگئے یہ بڑا سوالیہ نشان ہے، لیکن اس کے باوجود وزیر خارجہ بلاول بھٹو کو دوروں سے فرصت نہیں ہے، سارے ممالک کے پاس یہ گئے کسی نے مدد نہیں کی، آرمی چیف کو مداخلت کرکے آئی ایم ایف سے پیسے لینے کے لیے فون کرنا پڑا۔

مزید پڑھ:
Aaj TV Urdu »

Super Over With Ahmed Ali Butt | Zarrar Cast, Shan Shahid & Nadeem Baig | Part 2 | SAMAA TV

#samaatv #zarrar #shanshahid #nadeembaig ➽ Subscribe to Samaa News ➽ https://bit.ly/2Wh8Sp8➽ Watch Samaa News Live ➽ https://bit.ly/3oUSwAPStay up-to-date on... مزید پڑھ >>

\u067e\u0627\u06a9\u0633\u062a\u0627\u0646 \u06a9\u0648 \u062c\u06cc \u0627\u06cc\u0633 \u067e\u06cc \u067e\u0644\u0633 \u0627\u0633\u0679\u06cc\u0679\u0633 \u0645\u06cc\u06ba \u062a\u0648\u0633\u06cc\u0639 \u0645\u0644\u0646\u06d2 \u06a9\u06cc\u0644\u0626\u06d2 \u0648\u0632\u06cc\u0631\u0627\u0639\u0638\u0645 \u067e\u064f\u0631 \u0627\u0645\u06cc\u062f\u062c\u06cc \u0627\u06cc\u0633 \u067e\u06cc \u067e\u0644\u0633 \u0627\u0633\u06a9\u06cc\u0645 \u067e\u0627\u06a9\u0633\u062a\u0627\u0646 \u0627\u0648\u0631 \u06cc\u0648\u0631\u067e\u06cc \u06cc\u0648\u0646\u06cc\u0646 \u06a9\u06cc\u0644\u0626\u06d2 \u0628\u0627\u06c1\u0645\u06cc \u0637\u0648\u0631\u067e\u0631 \u0641\u0627\u0626\u062f\u06c1 \u0645\u0646\u062f \u06c1\u06d2\u060c \u062f\u0648\u0646\u0648\u06ba \u06a9\u06d2 \u062f\u0631\u0645\u06cc\u0627\u0646 \u062a\u062c\u0627\u0631\u062a\u06cc \u062a\u0639\u0644\u0642\u0627\u062a \u0628\u0691\u06be\u0646\u0627 \u0686\u0627\u06c1\u0626\u06cc\u06ba\u060c \u0634\u06c1\u0628\u0627\u0632 \u0634\u0631\u06cc\u0641

\u0645\u062d\u06a9\u0645\u06c1 \u0645\u0648\u0633\u0645\u06cc\u0627\u062a \u06a9\u0627 \u0645\u0648\u0633\u0644\u0627 \u062f\u06be\u0627\u0631 \u0628\u0627\u0631\u0634\u0648\u06ba \u06a9\u06d2 \u0646\u0626\u06d2 \u0633\u0644\u0633\u0644\u06d2 \u06a9\u0627 \u0627\u0646\u062a\u0628\u0627\u06c1\u06a9\u0631\u0627\u0686\u06cc \u0633\u0645\u06cc\u062a \u0627\u0646\u062f\u0631\u0648\u0646 \u0633\u0646\u062f\u06be \u0645\u06cc\u06ba \u0633\u06cc\u0644\u0627\u0628\u06cc \u0635\u0648\u0631\u062a\u062d\u0627\u0644 \u067e\u06cc\u062f\u0627\u06c1\u0648\u0633\u06a9\u062a\u06cc \u06c1\u06d2\u060c \u067e\u0646\u062c\u0627\u0628 \u06a9\u06d2 \u0628\u06cc\u0634\u062a\u0631 \u0627\u0636\u0644\u0627\u0639 \u0645\u06cc\u06ba \u0645\u0648\u0633\u0645 \u06af\u0631\u0645 \u0627\u0648\u0631 \u0645\u0631\u0637\u0648\u0628 \u0631\u06c1\u0646\u06d2\u06a9\u0627\u0627\u0645\u06a9\u0627\u0646 \u06c1\u06d2\u060c \u0645\u062d\u06a9\u0645\u06c1 \u0645\u0648\u0633\u0645\u06cc\u0627\u062a

\u067e\u06be\u0644 \u0641\u0631\u0648\u0634 \u06a9\u0627 \u0628\u06cc\u0679\u0627 \u0645\u0639\u0627\u0634\u0631\u06d2 \u06a9\u06cc \u062a\u0644\u062e\u06cc\u0648\u06ba \u0645\u06cc\u06ba \u0645\u0679\u06be\u0627\u0633 \u0628\u06be\u0631\u0646\u06d2 \u06a9\u0648 \u062a\u06cc\u0627\u0631\u0646\u0631\u0645 \u0645\u06cc\u0679\u06be\u06d2 \u0622\u0645\u0648\u06ba \u0627\u0648\u0631 \u062f\u06cc\u06af\u0631 \u067e\u06be\u0644\u0648\u06ba \u06a9\u06cc \u062e\u0648\u0634\u0628\u0648\u0624\u06ba \u06a9\u06d2 \u0628\u06cc\u0686 \u062a\u0644\u062e\u06cc\u0648\u06ba \u0627\u0648\u0631 \u0633\u062e\u062a\u06cc\u0648\u06ba \u0628\u06be\u0631\u06cc \u0632\u0646\u062f\u06af\u06cc \u06af\u0632\u0627\u0631\u0646\u06d2 \u0648\u0627\u0644\u0627 \u0627\u0633\u062f \u0631\u0636\u0627 \u0627\u0628 \u0632\u0646\u062f\u06af\u06cc \u06a9\u0648 \u067e\u06be\u0631\u067e\u0648\u0631 \u0637\u0631\u06cc\u0642\u06d2 \u0633\u06d2 \u062c\u06cc\u0646\u06d2 \u06a9\u06cc \u062a\u06cc\u0627\u0631\u06cc \u0645\u06cc\u06ba \u06c1\u06d2 ♥️

\u067e\u0627\u06a9 \u062a\u0631\u06a9\u06cc\u06c1 \u0645\u0639\u0627\u06c1\u062f\u06c1 \u0645\u0633\u062a\u0642\u0628\u0644 \u06a9\u06d2 \u062a\u062c\u0627\u0631\u062a\u06cc \u062a\u0639\u0644\u0642\u0627\u062a \u06a9\u06cc \u0633\u0645\u062a \u0645\u062a\u0639\u06cc\u0646 \u06a9\u0631\u06d2 \u06af\u0627\u060c \u0648\u0632\u06cc\u0631\u0627\u0639\u0638\u0645\u0622\u062c \u06c1\u0645 \u0646\u06d2 \u062a\u0631\u06a9\u06cc\u06c1 \u06a9\u06d2 \u0633\u0627\u062a\u06be \u0627\u06cc\u06a9 \u0627\u06c1\u0645 \u0645\u0639\u0627\u06c1\u062f\u06d2 \u067e\u0631 \u062f\u0633\u062a\u062e\u0637 \u06a9\u06cc\u06d2 \u06c1\u06cc\u06ba\u060c \u06cc\u06c1 \u0645\u0639\u0627\u06c1\u062f\u06c1 \u06c1\u0645\u0627\u0631\u06d2 \u0645\u0633\u062a\u0642\u0628\u0644 \u06a9\u06d2 \u062a\u062c\u0627\u0631\u062a\u06cc \u062a\u0639\u0644\u0642\u0627\u062a \u06a9\u06cc \u0633\u0645\u062a \u0645\u062a\u0639\u06cc\u0646 \u06a9\u0631\u06d2 \u06af\u0627\u060c \u0634\u06c1\u0628\u0627\u0632 \u0634\u0631\u06cc\u0641 تو پھودی بہن دی کرنی وے لل جیا نا ہو وے تے۔

’\u0644\u0628\u0631\u0644\u060c \u0641\u06cc\u0645\u0646\u0633\u0679 \u06c1\u0648\u06ba‘ \u0631\u062c\u0639\u062a \u067e\u0633\u0646\u062f \u062e\u06cc\u0627\u0644\u0627\u062a \u067e\u0631 \u06a9\u06be\u0644 \u06a9\u0631 \u0628\u0627\u062a \u06a9\u0631\u062a\u06cc \u06c1\u0648\u06ba\u060c \u0627\u0631\u0645\u06cc\u0646\u06c1 \u062e\u0627\u0646\u0627\u062f\u0627\u06a9\u0627\u0631\u06c1 \u0646\u06d2 \u062d\u0627\u0644 \u06c1\u06cc \u0645\u06cc\u06ba \u0627\u0646\u0633\u0679\u0627\u06af\u0631\u0627\u0645 \u0627\u0633\u0679\u0648\u0631\u06cc\u0632 \u0645\u06cc\u06ba \u0686\u0646\u062f \u0635\u0627\u0631\u0641\u06cc\u0646 \u06a9\u06d2 \u06a9\u0645\u0646\u0679\u0633 \u06a9\u06d2 \u0627\u0633\u06a9\u0631\u06cc\u0646 \u0634\u0627\u0679 \u0634\u06cc\u0626\u0631 \u06a9\u0631\u062a\u06d2 \u06c1\u0648\u0626\u06d2 \u0627\u0646\u06c1\u06cc\u06ba \u062c\u0648\u0627\u0628\u0627\u062a \u0628\u06be\u06cc \u062f\u06cc\u06d2\u06d4 واہ بی بی واہ، زنانہ بے باکیوں سے فروغ پانے والی بے حیائ کو ذہنیت کہہ رہی ہیں ذهنيت خراب تو کپړې خود بخود خراب

\u0645\u0645\u0646\u0648\u0639\u06c1 \u0641\u0646\u0688\u0646\u06af \u06a9\u06cc\u0633 \u06a9\u06cc \u062a\u062d\u0642\u06cc\u0642\u0627\u062a: \u0627\u0633\u062f \u0642\u06cc\u0635\u0631 \u06a9\u0627 \u0627\u06cc\u0641 \u0622\u0626\u06cc \u0627\u06d2 \u0627\u0646\u06a9\u0648\u0627\u0626\u0631\u06cc \u06a9\u06d2\u062e\u0644\u0627\u0641 \u0639\u062f\u0627\u0644\u062a \u0633\u06d2 \u0631\u062c\u0648\u0639\u067e\u0634\u0627\u0648\u0631 \u06c1\u0627\u0626\u06cc \u06a9\u0648\u0631\u0679 \u0627\u06cc\u0641 \u0622\u0626\u06cc \u0627\u06d2 \u06a9\u06cc \u062c\u0627\u0646\u0628 \u0633\u06d2 \u0628\u06cc\u0646\u06a9 \u0627\u06a9\u0627\u0624\u0646\u0679\u0633 \u0627\u0646\u06a9\u0648\u0627\u0626\u0631\u06cc \u0645\u06cc\u06ba \u067e\u06cc\u0634\u06cc \u06a9\u0627 \u0646\u0648\u0679\u0633 \u06a9\u0627\u0644\u0639\u062f\u0645 \u0642\u0631\u0627\u0631 \u062f\u06d2\u060c \u062f\u0631\u062e\u0648\u0627\u0633\u062a \u0645\u06cc\u06ba \u0627\u0633\u062a\u062f\u0639\u0627 insha'Allah soon

Comments سیاست دان اپنے گندے کپڑے اوپن نہ دھوئیں۔ فوٹو — فائل سابق وزیر داخلہ اور سربراہ عوامی مسلم لیگ (اے ایم ایل) شیخ رشید کا کہنا ہے کہ عمران خان کے خلاف عدم اعتماد کے بعد سے میرا اسٹیبلشمنٹ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ لال حویلی راولپنڈی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا کہ تمام 13 پی ڈی ایم جماعتیں تباہ ہوچکی ہیں، انہیں الیکشن میں جانا چاہیئے کیونکہ انتخابات میں جتنی تاخیر ہوگی، عمران خان کو اتنا فائدہ ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ خیبر پختونخوا میں باڑ لگی ہے، طالبان کیسے آگئے یہ بڑا سوالیہ نشان ہے، لیکن اس کے باوجود وزیر خارجہ بلاول بھٹو کو دوروں سے فرصت نہیں ہے، سارے ممالک کے پاس یہ گئے کسی نے مدد نہیں کی، آرمی چیف کو مداخلت کرکے آئی ایم ایف سے پیسے لینے کے لیے فون کرنا پڑا۔ تمام سیاست دان جی ایچ کیو گیٹ نمبر 4 کی پیداوار ہیں شیخ رشید نے کہا کہ الیکشن اکتوبر، نومبر میں ہوں گے، اپنے بیان پر قائم ہوں، اداروں کو متنازع نہیں بنانا چاہیئے، سیاست دان اپنے گندے کپڑے اوپن نہ دھوئیں۔ ایک سوال کے جواب میں ان کا مزید کہنا تھا کہ تمام سیاست دان جنرل ہیڈ کوارٹرز (جی ایچ کیو) کے گیٹ نمبر 4 کی پیداوار ہیں البتہ عدم اعتماد کے بعد سے اب میرا اسٹیبلشمنٹ سے کوئی رابطہ نہیں ہے۔ .0 وزیراعظم نے یہ ریمارکس پاکستان میں یورپی یونین کی نئی سفیرسے ملاقات کے دوران دیے—فوٹو : پی آئی ڈی وزیر اعظم شہباز شریف نے یورپی یونین کے ساتھ تجارتی تعلقات پر زور دیتے ہوئے امید ظاہر کی ہے کہ پاکستان کے لیے جنرلائزڈ اسکیم آف پریفرنسز پلس (جی ایس پی پلس) کا اسٹیٹس 2023 کے بعد بھی برقرار رہے گا۔ ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق یہ اسکیم ایک خصوصی تجارتی اور سرمایہ کاری پالیسی ہے جو آئندہ سال ختم ہونے والی ہے۔ وزیراعظم نے یہ ریمارکس پاکستان میں یورپی یونین کی نئی سفیر ڈاکٹر رینا کیونکا سے وزیراعظم ہاؤس میں ملاقات کے دوران دیے۔ یہ بھی پڑھیں: پاکستان کیلئے جی ایس پی پلس میں توسیع دو سالہ کارکردگی سے مشروط ہے، یورپی یونین ملاقات کے بعد جاری بیان کے مطابق وزیراعظم نے کہا کہ موجودہ جی ایس پی پلس اسکیم پاکستان اور یورپی یونین کے لیے باہمی طور پر فائدہ مند ہے، دونوں کے درمیان تجارتی تعلقات کو بڑھانا چاہیے، پاکستان 2023 کے بعد بھی اس کا حصہ بنے گا۔ انہوں نے کہا کہ شراکت داری کو مزید مضبوط بنانے کے لیے پاکستان اور یورپی یونین کے درمیان پائیدار اعلیٰ سطحی تبادلے ناگزیر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان یورپی یونین کے ساتھ اپنے تعلقات سمیت یورپی یونین کے رکن ممالک کے ساتھ بھی اپنے تاریخی اور تعاون پر مبنی دوطرفہ تعلقات کو بہت اہمیت دیتا ہے۔ مزید پڑھیں: پاکستان کا جی ایس پی پلس اسٹیٹس خطرے میں یورپی یونین کونسل کے صدر چارلس مائیکل اور یورپی کمیشن کی صدر ارسلا وان ڈیر لیین کے ساتھ اپنی حالیہ ٹیلی فونک بات چیت کا حوالہ دیتے ہوئے وزیراعظم نے اس یقین کا اظہار کیا کہ یورپی یونین کے پارلیمانی وفود کے پاکستان کے آئندہ دوروں کے ساتھ ساتھ ’یورپی یونین-پاکستان اسٹریٹیجک انگیجمنٹ پلان‘کے تحت سیاسی اور سیکیورٹی مذاکرات سے دونوں فریقوں کے درمیان مزید ٹھوس تعاون کی راہ ہموار ہوگی۔ افغانستان پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے وزیراعظم شہباز شریف نے پرامن اور مستحکم افغانستان کی اہمیت پر زور دیا۔ انہوں نے اس بے مثال تعاون پر بھی روشنی ڈالی جو پاکستان نے افغانستان کے حوالے سے خاص طور پر گزشتہ سال اگست میں طالبان کے کابل پر قبضے کے بعد سے بین الاقوامی برادری کو فراہم کی۔ مزید پڑھیں: پاکستان کو جی ایس پی پلس اسٹیٹس میں توسیع مل گئی ڈاکٹر رینا کیونکا نے اسلام آباد میں اپنے دور ملازمت میں یورپی یونین اور پاکستان کے درمیان تعلقات کو مزید گہرا کرنے کے لیے کام کرنے کے عزم کا اظہار کیا۔ اقلیتوں کے قومی دن کی مناسبت سے شہباز شریف نے اقلیتوں کی بہتری اور بہبود اور قومی زندگی اور ترقی میں ان کی مکمل شمولیت کے لیے حکومتِ وقت کے عزم کا اعادہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ان ذمہ داریوں کے لیے پُرعزم ہے اور قائداعظم کے نطریے کے مطابق ایک جامع معاشرے کی تعمیر کے اس عزم کا اعادہ کرنے کے لیے 11 اگست کو باضابطہ طور پر مناتی ہے۔ یہ بھی پڑھیں: پاکستان کے جی ایس پی پلس اسٹیٹس کے خلاف یورپی پارلیمنٹ میں نظرثانی کی قرارداد منظور وزیر اعظم نے کہا کہ حکومت ملک میں اقلیتوں کو مرکزی دھارے میں لانے کے لیے انہیں برابر مواقع فراہم کرنے کے اقدامات کر رہی ہے۔ انہوں نے اقلیتوں کے قومی دن کے موقع پر اپنے پیغام میں کہا کہ ’اس خیال کا مقصد معاشرے کے تمام طبقات، خاص طور پر ہمارے غیر مسلم شہریوں کو قومی زندگی میں بھرپور حصہ لینے کے قابل بنانا اور سہولت فراہم کرنا ہے‘۔ انہوں نے مذہبی اقلیتوں کے غریب ارکان کی بہتری کے لیے دیگر اقدامات کا بھی ذکر کیا۔.0 حکمہ موسمیات نے خبردار کیا کہ اس موسم میں پورے ملک میں معمول سے زیادہ بارشیں ہوں گی— فائل فوٹو:اے ایف پی محکمہ موسمیات نے کہا ہے کہ مون سون کا موسم ابھی تھما نہیں ہے اور اگست میں ملک بھر میں شدید بارشوں کا نیا سلسلہ شروع ہو گا۔ ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق بلوچستان، سندھ، خیبرپختونخوا، جنوبی پنجاب، آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان کے بیشتر علاقوں میں موسلادھار بارش کی پیش گوئی ہے۔ محکمہ موسمیات کی جانب سےجاری انتباہ میں مزید کہا گیا ہے کہ موسلا دھار بارش سے کراچی، ٹھٹھہ، بدین، حیدرآباد، دادو، جامشورو، سکھر، لاڑکانہ، شہید بینظیر آباد اور میرپورخاص میں 11 سے 13 اگست تک سیلابی صورتحال پیدا ہوسکتی ہے۔ قلعہ سیف اللہ، لورالائی، بارکھان، کوہلو، موسیٰ خیل، شیرانی، سبی، بولان، قلات، خضدار، لسبیلہ، آواران، تربت، پنجگور، پسنی، جیوانی، کوہاٹ، صوابی، نوشہرہ، مردان، پشاور، کرک، بنوں، ٹانک اور وزیرستان میں بھی سیلاب کا امکان ہے۔ یہ بھی پڑھیں: کراچی سمیت سندھ بھر میں طوفانی بارش، اربن فلڈنگ کی وارننگ جاری پنجاب کے بیشتر اضلاع میں موسم گرم اور مرطوب رہنے کا امکان ہے تاہم بھکر، لیہ، ساہیوال، بہاولنگر، بہاولپور، ڈیرہ غازی خان، ملتان اور رحیم یار خان میں بارش کا امکان ہے۔ محکمہ موسمیات نے خبردار کیا ہے کہ بارش سے کشمیر، خیبرپختونخوا اور گلگت بلتستان میں لینڈ سلائیڈنگ ہوسکتی ہے۔ علاوہ ازیں محکمہ موسمیات نے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے موسمیاتی تبدیلی کے اجلاس میں خبردار کیا کہ اس موسم میں پورے ملک میں معمول سے زیادہ بارشیں ہوں گی۔ پارلیمنٹ لاجز میں سینیٹر سیمی ایزدی کی زیر صدارت اجلاس میں کمیٹی کو چیئرمین نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) نے سیلاب اور اربن فلڈنگ کے خطرے پر بھی بریفنگ دی۔ مزید پڑھیں: سندھ اور بلوچستان میں آج سے بارش کا امکان، کراچی میں سیلابی صورتحال کی وارننگ وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی شیری رحمٰن نے کہا کہ یہ صورتحال معمول بن جائے گی اور ملک کا مجموعی انفراسٹرکچر ایسی آفات کے لیے تیار نہیں ہے جس سے شدید انسانی بحران جنم لے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ محکمہ موسمیات کی واضح وارننگ کے باوجود صوبائی حکومتوں کے پاس ریلیف اور ریسکیو کی صلاحیت کا فقدان ہے۔ تاہم وزارت موسمیاتی تبدیلی کے سیکریٹری آصف حیدر شاہ نے یہ دعویٰ کیا کہ محکمہ موسمیات جدید آلات کی کمی کی وجہ سے بعض علاقوں میں موسم کی حتمی انداز میں پیش گوئی نہیں کر سکتا۔ کمیٹی نے متفقہ طور پر اس بات سے اتفاق کیا کہ موسمیاتی تبدیلی کے اثرات سے نمٹنے کے لیے نیشنل ایکشن پلان اور قانون سازی کی ضرورت ہے۔ یہ بھی پڑھیں: کراچی: موسم گرما کی پہلی بارش، دیوار گرنے سے دو بچے جاں بحق چیئرمین این ڈی ایم اے نے کمیٹی کو بتایا کہ اتھارٹی نے 11 ہزار 639 امدادی سرگرمیاں شروع کی ہیں جبکہ سیلاب سے متاثرہ 23 ہزار 61 افراد کے لیے 78 ریلیف کیمپس قائم کیے گئے ہیں۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ جون سے اب تک بارشوں سے متعلقہ حادثات میں 575 اموات ہوئیں جن میں سے 176 بلوچستان میں، 127 سندھ اور 119 پنجاب میں ہوئیں جبکہ 939 افراد زخمی ہوئے۔ گلگت بلتستان میں برفانی جھیل کا سیلاب دریں اثنا گلگت بلتستان کے ضلع نگر میں برفانی جھیل کا سیلاب ہوپر نالے میں تباہی کا سبب بن گیا جس سے بہت سے لوگ بے گھر ہوگئے۔ مزید پڑھیں: عیدالاضحٰی پر موسلا دھار بارشوں نے 27 جانیں لے لیں سیلابی پانی گھروں میں داخل ہوگیا اور کئی ایکڑ فصلوں کو نقصان پہنچا جبکہ کئی درخت اور ایک پل پانی میں بہہ گیا۔ شمن کے علاقے کے رہائشی عابد حسین نے بتایا کہ ہوپر نالے میں سیلاب نے کئی گھروں کو نقصان پہنچایا ہے جس سے کم از کم 12 خاندان بے گھر ہو گئے۔ بلوچستان میں مزید بارشیں گزشتہ روز شمالی، وسطی اور جنوبی بلوچستان کے علاقوں میں مون سون بارشوں کا نیا سلسلہ شروع ہوگیا۔ حکام نے بتایا کہ چمن، قلعہ سیف اللہ، قلعہ عبداللہ، پشین، زیارت، ہرنائی، لورالائی، بارکھان، ژوب، سبی، نصیر آباد، نوشکی، ٹوبہ اچکزئی، مستونگ، قلات، خضدار، سوراب، بولان، سنجاوی، مختار اور لسبیلہ میں دن بھر وقفے وقفے سے بارش جاری رہی۔ کوئٹہ میں بھی سہ پہر 2 گھنٹے تک تیز ہواؤں کے ساتھ موسلادھار بارش ہوئی جس کے نتیجے میں نشیبی علاقوں میں سیلاب جیسی صورتحال پیدا ہوگئی، ان علاقوں میں سڑکیں زیر آب آ گئیں جبکہ بارش کا پانی گھروں میں داخل ہو گیا۔ یہ بھی پڑھیں: کراچی میں کل گرج چمک کے ساتھ تیز بارش کی پیشگوئی ریسکیو حکام اور کوئٹہ میٹروپولیٹن کارپوریشن کی ٹیموں نے فوری طور پر ان علاقوں میں امدادی کارروائیاں شروع کر دیں۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ اگرچہ کچھ کچے مکانات کو نقصان پہنچا تاہم کسی جانی نقصان کی اطلاع نہیں ملی۔ صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (پی ڈی ایم اے) نے محکمہ موسمیات کی جانب سے طوفانی بارشوں کے ایک اور اسپیل کی پیش گوئی کے بعد سیلاب کی وارننگ جاری کر دی۔ ضلعی انتظامیہ کو لوگوں کو نالے اور ندیوں کے قریبی علاقوں سے دور منتقل کرنے کی ہدایت کردی گئی ہے۔.August 10, 2022 اسد کے کل آٹھ بہن بھائی ہیں، جن میں سے دو چھوٹے بہن بھائی، سعد اور سعدیہ اس وقت ٹی سی ایف کالج میں سال اوّل کے طالب علم ہیں، جبکہ ان کی دو دیگر بہنیں، ہادیہ اور طوبیٰ ٹی سی ایف اسکول میں کلاس نہم اور ہفتم میں زیرِ تعلیم ہیں، اور ان سبھی کے خواب بڑے ہیں۔ ‘اپنے تمام بچوں کو اعلیٰ تعلیم دینا میرا خواب ہے’ اسد رضا کے والد محمد احمد آموں کی ریڑھی لگاتے ہیں اور ایک خوش مزاج شخصیت کے حامل ہیں، ان کی خواہش تھی کہ ان کے بچے اعلیٰ اور معیاری تعلیم حاصل کرسکیں، اس دنیا میں اپنا اور ان کا نام روشن کریں، اور اسی خواب کو پورا کرنے کیلئے انہوں نے اپنی پوری زندگی مشقت میں گزار دی لیکن پیشانی پر شکن تک ظاہر نہ کی۔ محمد احمد نے بتایا کہ میری قلیل آمدنی سے اسد کو اچھے اسکول، کالج اور یونیورسٹی میں داخل کرنا ممکن نہیں تھا۔“ “مجھے اپنے خاندان کی کفالت کے لیے چھوٹی عمر میں ہی اسکول چھوڑنا پڑا، اور اب اپنے تمام بچوں کو تعلیم دینا میرا خواب ہے اور ٹی سی ایف اسے ممکن بنا رہا ہے۔” ‘گھر کی مرمت انتظار کرسکتی ہے، لیکن یہ موقع شاید دوبارہ نہ آئے’ اسد نے بتایا کہ “ہماری کمیونٹی میں، لڑکوں سے چھوٹی عمر میں ہی کل وقتی ملازمت کی توقع کی جاتی ہے، لیکن بابا (والد) نے مجھے اپنی تعلیم پر توجہ دینے کی ترغیب دی۔” “جب میں یونیورسٹی کے لیے جا رہا تھا تو انہوں نے میری رہائش کے اخراجات کے لیے کچھ رقم مجھے دی، جو انہوں نے ہماری چھت ٹھیک کرنے کے لیے محفوظ کی تھی۔ میں نے ہچکچاہٹ کا اظہار کیا تو انہوں نے مجھ سے کہا، ‘ہمارے گھر کی مرمت کا انتظار ہوسکتا ہے لیکن یہ موقع شاید دوبارہ نہ آئے’۔” محمد اسد رضا معاشرے کی ترقی اور بہتری کیلئے سخت محنت کرتے ہیں۔ ان کی قیادت، تجزیاتی سوچ اور مسائل حل کرنے کی صلاحیتوں نے ان کی کامیابی میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ چار سمسٹرز تک انہوں نے GIKI ڈین کا آنر رول ایوارڈ حاصل کیا۔ اسد رضا کو ٹی سی ایف کالج کی جانب سے ان کے بہترین کارنامے کے اعزاز میں “A.