سَر عبداللہ ہارون: تحریکِ آزادی کا ایک ناقابلِ فراموش کردار -

27/04/2022 9:19:00 PM

سَر عبداللہ ہارون: تحریکِ آزادی کا ایک ناقابلِ فراموش کردار #arynewsurdu

سَر عبداللہ ہارون: تحریکِ آزادی کا ایک ناقابلِ فراموش کردار arynewsurdu

ہندوستان کی تحریکِ آزادی میں قائدِ اعظم محمد علی جناح کی قیادت میں جن سیاست دانوں اور مخیّر حضرات نے دن رات ایک کردیا اور ہر موقع پر آگے نظر آئے، ان میں حاجی عبداللہ ہارون بھی شامل ہیں جن کی آج برسی منائی جارہی ہے۔ سر عبداللہ ہارون 27 اپریل 1942ء کو وفات پاگئے […]

27 اپریل 2022ہندوستان کی تحریکِ آزادی میں قائدِ اعظم محمد علی جناح کی قیادت میں جن سیاست دانوں اور مخیّر حضرات نے دن رات ایک کردیا اور ہر موقع پر آگے نظر آئے، ان میں حاجی عبداللہ ہارون بھی شامل ہیں جن کی آج برسی منائی جارہی ہے۔سر عبداللہ ہارون 27 اپریل 1942ء کو وفات پاگئے تھے۔ آزادی کا سورج طلوع ہونے تک تو وہ زندہ نہ رہے تھے، لیکن جدوجہد کے آغاز کے بعد غلامی کی زنجیروں کی کم زور پڑتی ہر کڑی ضرور ان کی طاقت اور حوصلہ بڑھاتی رہی تھی۔ سر عبداللہ ہارون نے سیاست سے سماج تک مختلف شعبوں میں مسلمانوں کے لیے جو خدمات انجام دیں انھیں فراموش نہیں کیا جاسکتا۔ انھوں نے سندھ میں تحریکِ آزادی کے لیے فعال و متحرک کردار ادا کیا اور قائدِ اعظم کے بڑے مددگار کی حیثیت سے اپنا سرمایہ اور دولت خرچ کرتے رہے۔

مزید پڑھ: ARY News Urdu »

News Beat with Paras Jahanzaib | SAMAA TV | 13 August 2022

#SAMAATV #imrankhan #ptijalsa ➽ Subscribe to Samaa News ➽ https://bit.ly/2Wh8Sp8➽ Watch Samaa News Live ➽ https://bit.ly/3oUSwAPStay up-to-date on the major ... مزید پڑھ >>

خان صاحب آپ لانگ مارچ کی کال نہیں صرف مس کال دیے دینا باقی ہم جانے اور اسلام آباد، امپورٹڈ_حکومت_نامنظور PakistanZindabad PakArmyZindabad

ہندو ازم کا پرچار کرنیوالی موٹیویشنل اسپیکر خود اسلام سے متاثرہو گئی۔کلمہ پڑھ لیامسلمان ہونا ایک بہت بڑا اعزاز ہے ۔لوگوں کو قرآن کا تعارف کروائیں۔۔فاطمہ سبری مالا

جامعہ کراچی میں خود کش دھماکے سے متعلق ایک اور مبینہ کردار سامنے آگیامبینہ خودکش حملہ آور خاتون رکشے سے اتر کر کچھ دور کھڑی ہو جاتی ہے، سفید اسکارف والی خاتون مبینہ حملہ آور کے پاس جاکر کچھ بات کرتی ہے کل اپنی گانڈ میں خبر ڈالنا اور لوگ تمہارے اندر گھس کر خبر پڑھیں گے

فارن فنڈنگ کیس:ادارہ کسی قسم کا پریشر لینے کو تیار نہیں۔چیف الیکشن کمشنرتحریک انصاف کے وکیل انور منصور نے کیس کا فیصلہ ایک ماہ میں کرنے سے روکنے کا اسلام آباد ہائیکورٹ کا حکمنامہ پیش کرتے ہوئے التوا کی استدعا کی۔ IT IS APPEAL TO EACH PETRIOTIC PAKISTANI TO BYCOT PAKISTANI TV MEDIA WHO WORKING ON RENT FOR CORRUPT MAFIA AND TO WATCH ONLY ARY WHO IS STANDING WITH HONESTY AND TRUE FOR THE CAUSE OF GREATER PAKISTAN امپورٹڈ_حکومت_نامنظور

سعودی عرب کا ایک لاکھ الیکٹرک گاڑیاں خریدنے کا معاہدہسعودی عرب کا ایک لاکھ الیکٹرک گاڑیاں خریدنے کا معاہدہ arynewsurdu saudiarabia

سب اسلام آباد کی تیاری کرلیںعمران خان کا ایک بار پھر دھرنے کا اعلانپاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین اور سابق وزیراعظم عمران خان نے ایک بار پھر اسلام آباد میں دھرنے کا اعلان کر دیا۔ پاکستانی اعوام کے اوپر مسلط کی گئ امپورٹڈ بھکاری حکومت ہمیں کسی صورت قابل قبول نہیں۔ہمیں اپنا وزیراعظم واپس لادو۔کیونکہ نہ تو ہم غلام ہیں اور نہ بھکاری۔ امپورٹڈ_حکومت_نامنظور 🥾🥾🥾 اس کو دھرنے سے عشق ہے۔

کنگنا رناوت کا بچپن میں جنسی ہراسانی کا نشانہ بننے کا انکشافبالی ووڈ کوئن کنگنا رناوت نے بچپن میں ایک لڑکے کے ہاتھوں جنسی ہراسانی کا نشانہ بننے کا انکشاف کیا ہے۔ تفصیلات جانیے: KanganaRanaut DailyJang

ویب ڈیسک 27 اپریل 2022 ہندوستان کی تحریکِ آزادی میں قائدِ اعظم محمد علی جناح کی قیادت میں جن سیاست دانوں اور مخیّر حضرات نے دن رات ایک کردیا اور ہر موقع پر آگے نظر آئے، ان میں حاجی عبداللہ ہارون بھی شامل ہیں جن کی آج برسی منائی جارہی ہے۔ سر عبداللہ ہارون 27 اپریل 1942ء کو وفات پاگئے تھے۔ آزادی کا سورج طلوع ہونے تک تو وہ زندہ نہ رہے تھے، لیکن جدوجہد کے آغاز کے بعد غلامی کی زنجیروں کی کم زور پڑتی ہر کڑی ضرور ان کی طاقت اور حوصلہ بڑھاتی رہی تھی۔ سر عبداللہ ہارون نے سیاست سے سماج تک مختلف شعبوں میں مسلمانوں کے لیے جو خدمات انجام دیں انھیں فراموش نہیں کیا جاسکتا۔ انھوں نے سندھ میں تحریکِ آزادی کے لیے فعال و متحرک کردار ادا کیا اور قائدِ اعظم کے بڑے مددگار کی حیثیت سے اپنا سرمایہ اور دولت خرچ کرتے رہے۔ 1872ء میں پیدا ہونے والے سر عبداللہ ہارون نے بچپن میں غربت اور تنگ دستی دیکھی تھی، لیکن اپنی محنت اور لگن کے ساتھ مستقل مزاجی سے بعد میں کراچی کے امیر تاجر اور ایک ایسی شخصیت بن کر ابھرے جس نے رفاہِ عامّہ کے کاموں پر بے دریغ رقم خرچ کی اور شہریوں کی فلاح و بہبود کے لیے خوب کام کیا۔ انھوں نے کم عمری میں کھلونوں کے کاروبار کا‌ آغاز کیا اور دن رات محنت کی بدولت کام یابی ان کا مقدر بنی۔ مال دار ہونے کے باوجود سادگی اور کفایت شعاری ان کا شعار رہا، لیکن دوسری طرف جب بھی سیاسی سرگرمیوں اور تحریکی کاموں کے لیے رقم کی ضرورت پڑی، وہ سب سے آگے نظر آئے۔ سر حاجی عبداللہ ہارون نے 1901 میں سیاست میں دل چسپی لینا شروع کیا۔ سب سے پہلے عوامی جلسوں میں حصہ لیا اور 1909 میں اپنے تجارتی مرکز کو جوڑیا بازار سے منتقل کر کے ڈوسلانی منزل میں منتقل کردیا۔ ابتدا میں وکٹوریہ روڈ پر ایک بنگلہ خریدا بعدازاں جائیداد میں اضافہ ہوتا گیا اور سیاسی و سماجی سرگرمیوں کے شروع ہوجانے پر اپنی رہائش کلفٹن میں’’سیفیلڈ‘‘ میں اختیار کرلی جو بعد میں ہندوستان کے مسلمان راہ نماؤں کی آمد و رفت اور جلسوں کا گڑھ بن گئی۔ وہ کئی تنظیموں اور تحریکوں کے روح رواں رہے۔ 1913 میں کراچی کے شہری کاموں میں دل چسپی لینی شروع کی اور کراچی میونسپلٹی کے ممبر منتخب ہوئے۔ جب برصغیر میں کانگریس، مسلم لیگ اور خلافت کی تحریکیں شروع ہوئیں تو 1919 میں سر عبداللہ ہارون سندھ خلافت کمیٹی کے صدر چنے گئے۔ بعدازاں آپ کو سینٹرل خلافت کمیٹی کا صدر منتخب کیا گیا۔ لاڑکانہ میں خلافت کانفرنس کا بڑا اجلاس ہوا، جس میں عبداللہ ہارون بھی شریک رہے۔ درد مند اور مسلمانوں کے خیر خواہ سَر عبداللہ ہارون نے شہر میں متعدد مدراس، کالج، مساجد اور یتیم خانے بنوائے۔ وہ مسلم لیگ کا فخر تھے اور تحریکِ آزادی میں تا دمِ‌ آخر سرگرم کردار ادا کیا۔ کراچی میں عبداللہ ہارون کالج ان کی یادگار ہے جب کہ شہر کے اہم تجارتی مرکز صدر کی ایک سڑک انہی سے موسوم ہے۔ .Apr 26, 2022 | 22:25:PM فاطمہ سبری مالا عمرے کی ادائیگی کے وقت اسلام قبول کرنےکا اعلان کر رہی ہیں Stay tunned with 24 News HD Android App Share (24نیوز)بھارتی ریاست تامل ناڈو کی ہندو موٹیویشنل اسپیکر سبری مالا جیا کانتھن نے قرآن پاک کا مطالعہ کرنے کے بعد اسلام قبول کرلیا اور مذہب اسلام میں داخل ہونے کے بعد عمرے کی سعادت بھی حاصل کرلی۔بھارتی میڈیا کے مطابق سبری مالا جیا کانتھن نے اسلام قبول کرنے کے بعد اپنا نام فاطمہ سبری مالا رکھا ہے۔اپنی متعدد تقریروں میں ہندو مذہب اور رسم و رواج کی پرچار کرنے والی موٹیویشنل اسپیکر نے کچھ عرصہ قبل ہی قرآن پاک کی تلاوت اور ترجمہ پڑھنا شروع کیا تھا۔قرآن پاک کا مطالعہ مکمل کرنے اور اسے سمجھنے کے بعد خاتون نے اسلام قبول کیا اور انہوں نے مذہب اسلام کو عظیم مذہب اور مقدس کتاب کو نجات کی کتاب بھی قرار دیا۔ انہوں نے سوشل میڈیا پر ایک اور تفصیلی ویڈیو بھی جاری کی جس میں انہوں نے بتایا کہ ”میں نے خود سے سوال کیا کہ میں مسلمانوں سے اتنی دشمنی کیوں کرتی ہوں اور اس طرح میں نے غیر جانبدار ذہن کے ساتھ قرآن پاک کا مطالعہ شروع کیا“۔ویڈیو میں انہوں نے کہا کہ مجھے اس طرح حقیقت کی سمجھ آئی اور اب میں اسلام سے بہت زیادہ پیار کرتی ہوں۔فاطمہ سبری مالا نے کہا کہ مسلمان ہونا ایک بہت بڑا اعزاز ہے اور مسلمانوں سے مطالبہ کیا کہ وہ سب کو قرآن کا تعارف کروائیں۔ ‘آپ کے ہاتھ میں ایک حیرت انگیز کتاب ہے۔ یہ گھر میں کیوں چھپی ہوی ہے؟ دنیا کو اسے پڑھنا چاہئے دائرہ اسلام میں داخل ہونے کے بعد اپنا نام فاطمہ سبری مالا رکھنے والی موٹیویشنل اسپیکر کی عمرے کی سعادت حاصل کرنے کی ویڈیو بھی انٹرنیٹ پر خوب وائرل ہو رہی ہے، جس میں وہ مقدس مقامات کی زیارت کے دوران اپنی مادری زبان میں اسلام قبول کرنے کا اعتراف بھی کرتی دکھائی دیں۔فاطمہ سبری مالا ہندو خاندان میں پیدا ہوئیں اور ان کے شوہر اور بیٹا بھی ہندو مذہب کے پیروکار ہیں۔فاطمہ سبری مالا بھارت بھر میں یکساں تعلیم نصاب قائم کرنے اور لڑکیوں کی تعلیم کے حوالے سے مہم چلانے کے لئے مشہور ہیں، انہوں نے لڑکیوں کے تحفظ پر ایک کتاب بھی لکھی ہے، جسے انہوں نے تامل ناڈو کے اسکولوں میں پڑھنے والی بچیوں میں مفت تقسیم بھی کیا۔ یہ بھی پڑھیں۔.سامنے آنے والے شواہد کے مطابق حملہ آور خاتون نے تقریباً 9 منٹ تک وین کا انتظار کیا اور خاتون نے جامعہ میں داخل ہونے کے لیے مسکن گیٹ کا راستہ استعمال کیا۔ پولیس تفتیشی حکام کا کہنا ہے کہ نمبر پلیٹ کے ذریعے رکشے کی تلاش جاری ہے۔ کراچی پولیس چیف کو بھیجی گئی رپورٹ کے مطابق حملہ آور خاتون انسٹی ٹیوٹ کے گیٹ پر پہلے سے اپنے ہدف کا انتظار کر رہی تھی، چینی اساتذہ کی وین جیسے ہی گیٹ پر پہنچی، خاتون نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔ گزشتہ روز ہونے والے دھماکے میں تین چینی شہری اور پاکستانی وین ڈرائیور جان سے گئے، حملے میں تین سے چار کلو گرام دھماکہ خیز مواد اور اسٹیل کے بال بیرنگ استعمال کیے گئے۔ مزید خبریں :.انور منصور نے کہا کہ دوسری پارٹیوں کو 3 تین ماہ کی تاریخ دی جا رہی ہے، ہمارے کیس کی روزانہ کی بنیاد پر سماعت ہو رہی ہے۔جس پر چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ تینوں کیسز ایک ساتھ چل رہے ہیں، کسی پارٹی کے کیس میں کوئی تاخیر نہیں ہو رہی۔ پی ٹی آئی کے وکیل نے کہا کہ آپ جو مرضی آرڈر دیں لیکن میں آج دلائل نہیں دونگا، جب تک باقی کیسز اس لیول پر نہیں آئیں گے کیس نہیں چل سکتا، ہمارے دستاویزات درخواستگزار کو دیئے گئے جبکہ ہمیں دوسری پارٹیوں کے دستاویزات نہیں دیئے جا رہے۔ تحریک انصاف کے وکیل انور منصور خان نے کہا کہ جب تک باقی کیس اس جگہ نہیں آتے پی ٹی آئی غیر ملکی فنڈنگ کیس نہیں چل سکتا۔ چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ انور منصور صاحب، آپ کی مرضی کی تاریخ ہمیشہ دی تھی، اسلام آباد ہائیکورٹ کے آرڈر کے پابند ہیں، انہوں نے کمیشن کو سماعت سے نہیں روکا، ہمارے سامنے تین طرح کے کیسز ہیں۔ سکندر سلطان راجہ نے کہا کہ 101 سیاسی جماعتوں کی اسکروٹنی کی، 17 کے اکاؤنٹس میں تضاد تھے، اسلام آباد ہائیکورٹ میں الیکشن کمیشن اپنا تفصیلی مؤقف دے گا جبکہ الیکشن کمیشن اپنی سماعت جاری رکھے گا۔ چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ پی ٹی آئی کا کیس 8 سال پرانا ہے، آپ کی قیادت نے کہا ہے کیس جلدی نمٹائیں، ہائیکورٹ کے آرڈر سے پہلے بھی ہم کیس نمٹانے کی طرف جا رہے تھے، کمیشن اپنا پروسیجر خود بناتا ہے، آپ سمجھتے ہیں کمیشن تاریخیں بھی دوسری عدالت سے لے؟ پی ٹی آئی کے وکیل نے کہا کہ آپ کیس کو عید کے بعد رکھ لیں، مجھےآپ کے سامنے ثابت کرنا ہے کہ فنڈ دینے والے پاکستانی تھے، ثابت کرنا ہے کہ ساری کمپنیاں سنگل ملکیت کی کمپنیاں ہیں، میرے دلائل تو اب شروع ہوئے ہیں، مجھے ملین ڈالرز کا حساب دینا ہے۔ چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ آپ کے دلائل اگر متعلقہ ہیں تو بے شک 6 ماہ دلائل دیں، جس پر انور منصور خان نے کہا کہ دو ہفتے کے بعد میں اپنے دلائل مکمل کر لوں گا۔ سکندر سلطان راجہ نے پی ٹی آئی کے وکیل سے کہا کہ آپ اپنی مرضی کی تاریخ بتائیں، جس پر انور منصور خان نے کہا کہ عید کے بعد کی تاریخ دے دیں، میں ایک ہفتے میں دلائل مکمل کر لوں گا۔ اکبر ایس بابر کے وکیل نے کیس میں التوا پر اعتراض اٹھایا، جس پر چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ آپ نے پہلے بھی 8 سال کیس سنا ہے، کوئی فرق نہیں پڑتا کہ ہفتہ دو تاخیر کر لیں۔ چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ میرٹ پر فیصلہ ہو گا،کمیشن کسی قسم کا پریشر لینے کو تیار نہیں ہے، کسی جماعت کے ساتھ زیادتی نہیں ہو گی، ہم نے نہیں دیکھنا کہ باہر پانچ بندے آئے ہیں یا 5 لاکھ۔ الیکشن کمیشن نے پی ٹی آئی غیر ملکی فنڈنگ کیس کی سماعت 10 مئی تک ملتوی کر دی۔ یہ بھی پڑھیں:.