حکومت کوجومشکل فیصلے کرناتھے وہ ہوچکےآئندہ بھی کرنے ہوئے تو کریں گے:مفتاح اسماعیل

28/06/2022 10:15:00 PM

حکومت کوجومشکل فیصلے کرناتھے وہ ہوچکے،آئندہ بھی کرنے ہوئے تو کریں گے:مفتاح اسماعیل

حکومت کوجومشکل فیصلے کرناتھے وہ ہوچکے،آئندہ بھی کرنے ہوئے تو کریں گے:مفتاح اسماعیل

اسلام آ باد (آئی این پی ) وزیرخزانہ مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ حکومت کو آئندہ بھی کوئی مشکل فیصلے کرنے ہوئے تو کریں گے تاہم ابھی ہم نے جو مشکل فیصلے

اسلام آباد میں کو ٹرن ا راؤنڈ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیرخزانہ نے بتایا کہ جلد قوم کواچھی خبر دوں گا اور پاکستان کوجلدخود انحصاری کی طرف لے جائیں گے۔ انھوں نے کہا کہ اگر پاکستان کو خود کفیل بننا ہے تو اس میں پاکستانیوں خصوصا امیروں کو حصہ ڈالنا ہوگا۔ 10 سال میں اکنامک گروتھ کی جانب چلے جائیں توہدف حاصل کرنا مشکل نہیں ہوگا۔ انھوں نے بتایا کہ آئی ایم ایف نے ساتویں اورآٹھویں قسط کو ملادیاہے،اگر آپ کو دوسرے ممالک سے قرض لینا ہے تو خود داری کی بات نہ کریں۔

ڈپٹی کنوینئر ایم کیو ایم کنور نوید جمیل کی طبیعت خراب ،ہسپتال منتقلمفتاح اسماعیل نے یہ بھی بتادیا کہ ملک میں 4 بڑے بڑے خسارے کے بعد پانچویں کے لیے تیار نہیں تھے کیوں کہ ماہانہ 120 ارب روپے خسارے کا سامنا تھا۔ ٹیکس معاملات سے متعلق مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ غریب ترین پاکستانیوں کو وزیراعظم نے مشکل حالات میں یاد رکھا تاہم اب امیروں پرٹیکس لگاہے تووزیراعظم اوران کے بیٹے بھی ٹیکس دینگے،پورےملک کے دکانداروں کو بھی ٹیکس نیٹ میں لارہے ہیں۔

مزید پڑھ:
Daily Pakistan »

Do Tok Baat With Kiran Naz | SAMAA TV | 27th November 2022

#dotokbaat #kirannaz #samaatv➽ Subscribe to Samaa News ➽ https://bit.ly/2Wh8Sp8➽ Watch Samaa News Live ➽ https://bit.ly/3oUSwAPStay up-to-date on the major n... مزید پڑھ >>

لگتا ھے حکومت عوام کو مزید تکلیف کی منصوبہ بندی کر رھی ھے

جو مشکل فیصلے کرنے تھے کرلیے، آئندہ بھی کرنا پڑے تو کریں گے، مفتاح اسماعیلاسلام آباد:وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا کہنا ہے کہ پاکستان دیوالیہ پن سےنکل گیا، اب بہتری کی جانب جائے گا، ۔ اور ملک کو تباہیوں کے دہانے پر چھوڑ دیا۔!! بات اب مکمل ہوئی Manhoos buri news ly k aa gya 🖐

مخلوط حکومت میں سارے فیصلے مل کر ہوتے ہیں: شہباز شریف/ فائل فوٹو گوگل سورس(24 نیوز) وزیراعظم نے کہا ہے کہ آئی ایم ایف سے دو ارب ڈالر جلد مل جائیں گے، بہت جلد آئی ایم ایف سے معاہدہ ہونے والا ہے، پوری دنیا اس وقت معاشی بحران کا

حکومت ذمہ داریاں ادا کرنے میں ناکام ہمیں تلخ فیصلے لینے پر مجبور نہ کریں: اے این پی09:45 PM, 27 Jun, 2022, اہم خبریں, پاکستان, اسلام آباد: حکومت کے اتحادیوں نے حکومت سے راہیں جدا کرنا شروع کردی ہیں۔ ایم کیو ایم ، بی اے پی اور اسلم بھوتانی کے

'عدالتی فیصلے نے پی ٹی آئی کو سرخرو کردیا'‘عدالتی فیصلے نے پی ٹی آئی کو سرخرو کردیا’ arynewsurdu پی ٹی آئی اور کنوارے کاچوہدری صبح سرخرو ہوتا اور رات کو سر خم Shukar Allah ka 🌺دعا کریں وہ اپنے فیصلے پر قائم رہیں

اصل مشکل فیصلےہم کافی دنوں سے یہ سنتے آرہے ہیں کہ یہ حکومت بڑے سخت اور مشکل فیصلے کر رہی ہے اور ان مشکل اور سخت فیصلوں کے... zuhair_abbasi your take on 'The Real Difficult Decisions' ? Can we name it 'The fall of the fallen' or you have a better name for it?

Newsone Urdu - قومی اسمبلی کا اجلاس۔۔۔ مخلوط حکومت کے ساتھی اپنی حکومت پر برس پڑے۔۔۔ آخر کیوں؟؟؟ | Facebook | By Newsone Urdu | قومی اسمبلی کا اجلاس۔۔۔ مخلوط حکومت کے ساتھی اپنی حکومت پر برس پڑے۔۔۔ آخر کیوں؟؟؟ جانیئے اہم سوالوں کے جوابات وفاقی وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب سے،...قومی اسمبلی کا اجلاس۔۔۔ مخلوط حکومت کے ساتھی اپنی حکومت پر برس پڑے۔۔۔ آخر کیوں؟؟؟ جانیئے اہم سوالوں کے جوابات وفاقی وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب سے، پروگرام جی فار غریدہ میں۔ NewsOne GFG GForGharidah GharidahFarooqi MaryamAurangzaib NationalAssembly

لینے تھے وہ لے چکے ہیں اور وزیراعظم نے اس حوالے سے سپورٹ کیا۔ اسلام آباد میں کو ٹرن ا راؤنڈ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیرخزانہ نے بتایا کہ جلد قوم کواچھی خبر دوں گا اور پاکستان کوجلدخود انحصاری کی طرف لے جائیں گے۔ انھوں نے کہا کہ اگر پاکستان کو خود کفیل بننا ہے تو اس میں پاکستانیوں خصوصا امیروں کو حصہ ڈالنا ہوگا۔ 10 سال میں اکنامک گروتھ کی جانب چلے جائیں توہدف حاصل کرنا مشکل نہیں ہوگا۔ انھوں نے بتایا کہ آئی ایم ایف نے ساتویں اورآٹھویں قسط کو ملادیاہے،اگر آپ کو دوسرے ممالک سے قرض لینا ہے تو خود داری کی بات نہ کریں۔ ڈپٹی کنوینئر ایم کیو ایم کنور نوید جمیل کی طبیعت خراب ،ہسپتال منتقل مفتاح اسماعیل نے یہ بھی بتادیا کہ ملک میں 4 بڑے بڑے خسارے کے بعد پانچویں کے لیے تیار نہیں تھے کیوں کہ ماہانہ 120 ارب روپے خسارے کا سامنا تھا۔ ٹیکس معاملات سے متعلق مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ غریب ترین پاکستانیوں کو وزیراعظم نے مشکل حالات میں یاد رکھا تاہم اب امیروں پرٹیکس لگاہے تووزیراعظم اوران کے بیٹے بھی ٹیکس دینگے،پورےملک کے دکانداروں کو بھی ٹیکس نیٹ میں لارہے ہیں۔ وزیرخزانہ نے یہ بھی کہا کہ ملک میں بلڈرز،کارڈیلرز اور فرنیچروالوں کو بھی ٹیکس نیٹ میں لاں گا تاہم زراعت کے بیج اورسولر پینل پرسے ٹیکس ہٹادیا ہے۔ مفتاح اسماعیل نے بتایا کہ اگر پٹرول پرسبسڈی جاری رہتی تو ملک دیوالیہ ہوجاتا تاہم فخر اس بات پر ہے کہ قوم نے حکومت کی مشکل کو سمجھا۔ .ویب ڈیسک 28 جون 2022 اسلام آباد:وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا کہنا ہے کہ پاکستان دیوالیہ پن سےنکل گیا، اب بہتری کی جانب جائے گا، جومشکل فیصلےکرنےتھے کرلیے، آئندہ بھی کرناپڑے تو کریں گے۔ تفصیلات کے مطابق وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے ٹرن اراؤنڈ پاکستان کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہماری منزل خود کفالت اپنے پیروں پرکھڑاہوناہے، اگربیرون ملک سےپیسےہی مانگنے ہیں توخودداری کی بات نہ کریں۔ مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ وزیراعظم کومبارک باددیتاہوں آج خودکفالت کی طرف پہلاقدم بڑھالیاہے، ہم جلدہی سیلف الائنس کرلیں گے ، پاکستان اکنامک گروتھ کی طرف چلاجائےتویہ ہدف حاصل کرنا مشکل نہیں۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ مستحکم گروتھ میں 10سال میں کوئی بھی ملک پیروں پر کھڑا ہوسکتاہے، مشکل میں بھی وزیراعظم نے سستا پٹرول،ڈیزل کےنام سےاسکیم نکال لی، ہم نے60لاکھ خاندانوں کودعوت دی کہ 786پر رجسٹرڈ کرائیں، 40لاکھ خاندانوں نے خود کو رجسٹر کرا لیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ جب ہم آئے تو پاکستان کو4 ریکارڈ خسارے کا سامنا تھا، اس سال بھی ہماراخسارہ 5ہزارارب روپےہے، ہم نے قوم کو مزید 20 ہزار ارب روپے کا مقروض کردیا ہے، 71 سالوں میں جتنا قرضہ لیا گیا اسکا 80 فیصد صرف 4 سال میں لیا گیا۔ مفتاح اسماعیل نے بتایا کہ 4 سال میں بڑے خسارے تھے،پاکستان پانچویں سال اس کامتحمل نہیں ہوسکتاتھا، 2018 میں پاکستان کا جی ڈی پی11.شکار ہے، خود انحصاری ہی قوم کی سیاسی اور معاشی آزادی کی ضمانت ہے، گزشتہ حکومت نے ترقیاتی کاموں کو التوا کا شکار رکھا۔ یہ بھی پڑھیں: آئی ایم ایف کی جانب سے قرض پروگرام کی بحالی کا معاملہ، بڑی خبر آگئی  ٹرن اراؤنڈ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم شہباز شریف کا کہنا تھا کہ مخلوط حکومت میں سارے فیصلے مل کر ہوتے ہیں، مشاورت اہم عمل ہے ذمہ داری سے نبھائیں گے، ہمیں دن رات معطون کیا جاتا مگر اس حمام میں سب ننگے ہیں، رونے دھونے سے کبھی بات بنی ہے نہ بنے گی، ہم بڑی آسانی سے پچھلی حکومتوں پر ملبہ ڈال دیتے ہیں، ہم 14 ماہ میں معاشی استحکام لائیں مگر اس کے لیے سیاسی استحکام ضروری ہے۔ شہباز شریف کا کہنا تھا کہ اگر نواز شریف نے قطر سے گیس نہ لی ہوتی تو بہت مشکلات ہوتیں، عالمی بحران کی وجہ سے ایل این جی نہیں مل رہی، جولائی میں لوڈشیڈنگ بڑھے گی، پاکستان دیوالیہ ہونے سے بچ گیا ہے، تاریخ میں پہلی مرتبہ صاحب ثروت افراد پر ٹیکس لگایا ہے۔  وزیراعظم نے کہا کہ گزشتہ حکومت نے پاکستان کو دیوالیہ پن تک پہنچا دیا تھا، عوام مہنگائی کا سامنا کر رہے ہیں۔ Share.سورس: File اسلام آباد: حکومت کے اتحادیوں نے حکومت سے راہیں جدا کرنا شروع کردی ہیں۔ ایم کیو ایم ، بی اے پی اور اسلم بھوتانی کے بعد اے این پی نے بھی شہباز حکومت کے خلاف شکایات کے انبار لگا دیے ہیں۔  اے این پی کے رہنما امیر حیدر ہوتی کا کہنا ہے کہ حکومت ذمہ داریاں ادا کرنے میں ناکام رہی تو اے این پی کو تلخ فیصلے لینا ہوں گے۔ ہم نے سلیکٹڈ حکمرانوں سے عوام کی جان چھڑانے کیلئے موجودہ حکومت کا ساتھ دیا۔نئی حکومت کو ذمہ داری لینا ہوگی اور درست معاشی پالیسیوں کے ذریعے عوام کو ریلیف پہنچانے کیلئے ہنگامی اقدامات کرنا ہوگا۔  عمران خان نفرتوں کے سوداگر ہے ، پاکستانیوں کو تقسیم کردیا: خواجہ آصف انہوں نے کہا کہ اے این پی کسی بھی ایسی حکومت کی حمایت نہیں کرے گی جو اپنے عوام کی خدمت نہ کرسکے۔ عوامی خدمت کیلئے ہمیں کسی وزارت اور عہدے کی ضرورت نہیں لیکن عوام کو یہ بھی یاد رکھنا ہوگا کہ پچھلے 4 سال میں تحریک انصاف نے 20 ہزارارب کا بیرونی قرضہ لیا۔ امیر حیدر ہوتی کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی کی نااہلی کی وجہ سے بجلی کی مد میں ڈھائی ہزار ارب خسارے کا سامنا ہے۔ پچھلی ناکام حکومت کی وجہ سے گیس کی مد میں خزانے کو 1400 ارب خسارے کا سامنا ہے۔ مرکزی اور صوبائی حکومت کو مزید عوام سے قربانی کی توقع رکھنا ترک کرنی ہوگی۔ معیشت کیلئے خوشخبری ، پاکستان کا قرض معطل انہوں نے کہا کہ حکومت واقعی عوامی مشکلات حل کرنے میں سنجیدہ ہے تو قربانی کا آغاز پارلیمان سے کیا جائے۔ حکومت فیصلہ کرلے کہ کوئی بھی وزیر یا رکن اسمبلی تنخواہ اور مراعات نہیں لے گا، اے این پی ساتھ دے گی۔ مرکزی اور صوبائی حکومت تیل، چینی، آٹے اور دیگر اشیاء خوردونوش میں عوام کوسبسڈی فراہم کرے۔ Tagged.