آنیوالے دنوں میں مہنگائی مزید بڑھے گی: مفتاح اسماعیل نے خبردار کر دیا

24/06/2022 8:43:00 PM

اب 7004 کی بجائے ٹیکسوں کا ہدف 7470 روپے ہوگا: وزیر خزانہ کا قومی اسمبلی میں خطاب

اب 7004 کی بجائے ٹیکسوں کا ہدف 7470 روپے ہوگا: وزیر خزانہ کا قومی اسمبلی میں خطاب

لاہور:(دنیا نیوز) وفاقی وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ کوئی شبہ نہیں آنیوالے دنوں میں مہنگائی مزید بڑھے گی، ایگری کلچر انکم پر ٹیکس ہونا چاہیے، پٹرول، ڈیزل پر ایک روپیہ ٹیکس نہیں لے رہے، 120 ارب روپے پٹرول پر نقصان ہو رہا تھا۔

دنیا نیوز کے پروگرام دنیا کامران خان کیساتھ میں گفتگو کرتے ہوئے مفتاح اسماعیل نے کہا کہ چند مخصوص کمپنیوں نے پچھلے سالوں میں بہت پیسے کمائے، کار، سگریٹ انڈسٹریز نے بہت پیسہ کمایا ہے، جیولرز کو ٹیکس نیٹ میں لائیں گے، ہم اپنے ٹیکس نیٹ کو بڑھائیں گے، بجٹ خسارے کو کم کرنا ہے، ہم نے امیر طبقے پر ٹیکس لگایا ہے۔ وزیر خزانہ نے مزید کہا کہ ریٹیلرز کو فکس ٹیکس پر لائیں گے، کیپسٹی کے حساب سے فکس ٹیکس لگائیں گے، دکاندار کو فارم بھرتے ہوئے بھی مشکلات کا سامنا ہوتا ہے، فکس ٹیکس سے دکانداروں کو آسانی ہوگی، اگر حقیقی خودمختاری چاہتے ہیں تو ہر جگہ جھولی پھیلانے کے بجائے اپنے لوگوں سے ٹیکس لینا چاہیے، پاکستان کے لاکھوں لوگ ٹیکس نیٹ میں نہیں، شہباز شریف کے بیٹوں اور میری فیکٹری کا بھی ٹیکس بڑھا ہے، مشکل وقت ہے ہم نے امیر طبقے پر ٹیکس لگایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگلے دو، تین ماہ میں مہنگائی میں مزید اضافہ ہوگا، ہم نے انکم پر ٹیکس لگایا ہے، ہم کوشش کر رہے ہیں ملک کو ڈیفالٹ ہونے سے بچا لیں، چار سے پانچ ماہ تک حالات بہتر ہوجائیں گے، وزیراعظم شہباز شریف اور میرے اپنے کاروبار پرٹیکس لگا ہے، فیکٹریز کو گیس کی فراہمی 24 گھنٹے یقینی بنائیں گے، ہماری ترجیح ایکسپورٹ بڑھانا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ آج چین نے 3۔2 ارب ڈالر دیئے ہیں، جولائی کے آخر تک کرنسی پر پریشر ختم ہوجائے گا، آج اسٹاک مارکیٹ گری ہے، یہ وقتی ہے، اسی ماہ کے اندر اسٹاک مارکیٹ اوپر جائے گی، سپر ٹیکس لگانے کے علاوہ چارہ نہیں تھا، آئی ایم ایف معاہدے کے بعد چیزیں بہتر ہوجائیں گی، مشکل فیصلوں سے ملک کو ڈیفالٹ سے بچایا ہے، ایک سال کے لیے صاحب ثروت لوگوں کو قربانی دینا ہوگی۔ اب 7004 کی بجائے ٹیکسوں کا ہدف 7470 روپے ہوگا: وزیر خزانہ کا قومی اسمبلی میں خطاب وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ حکومت نے مشکل فیصلوں کے ذریعے ملک کو ڈیفالٹ ہونے سے بچایا ہے، اس سال پرائمری خسارہ 1600 ارب روپے آیا ہے اگلے سال اسے 153 ارب روپے فاضل کیا جائے گا، مجموعی بجٹ خسارہ بھی کم کیا جائے گا، 15 کروڑ سے زیادہ آمدنی والی کمپنیوں پر ایک فیصد، 20 کروڑ روپے سے زیادہ آمدنی والی کمپنیوں کو دو فیصد، 25 کروڑ روپے سے زیادہ آمدنی والی کمپنیوں پر 3 فیصد اور 30 کروڑ سے زیادہ آمدنی والی کمپنیوں پر 10 فیصد سپر ٹیکس عائد ہوگا، ٹیکسوں کے اہداف میں اضافہ کردیا گیا ہے، اب 7004 کی بجائے ٹیکسوں کا ہدف 7470 روپے ہوگا، نان ٹیکس ریونیو کو 2 ہزار ارب روپے سے کم کرکے 1935 ارب کردیا گیا ہے، صوبوں کو اب 4373 ارب روپے دیں گے، ان تمام اخراجات کے بعد 4547 ارب روپے کا خسارہ ہوگا، 300 مربع فٹ جیولرز کی دکان پر 40 ہزار روپے کا فکس ٹیکس لگایا گیا ہے جبکہ بڑی دکانوں پر 17 فیصد کی بجائے 3 فیصد جنرل سیلز ٹیکس عائد ہوگا، عام شہری سونا بیچنے پر جو 4 فیصد ودہولڈنگ ٹیکس دیتے تھے،اسے کم کرکے ایک فیصد کردیا گیا ہے۔ نئے مالی سال 23 ۔ 2022 کے وفاقی بجٹ پر عام بحث سمیٹتے ہوئے وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے قومی اسمبلی اور سینٹ کے ممبران کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ انہوں نے جو مفید مشورے دیئے ہیں اس میں سے بیشتر کو بجٹ میں شامل کیا گیا ہے، قائد حزب اختلاف راجہ ریاض کا بھی شکر گزار ہوں کہ انہوں نے زراعت اور نوجوانوں کے لئے جو تجاویز دی ہیں انہیں بجٹ میں شامل کیا گیا ہے۔ کپاس اور گندم سمیت زرعی خودکفالت کے لئے کاٹن سیڈ اور بنولا پر ٹیکس ہٹا دیا گیا ہے، کھلی پر بھی ٹیکس ختم کیا گیا ہے، اس سے زیادہ کسان دوست بجٹ گزشتہ 15 ، 20 برسوں میں نہیں آیا، اس کے نتیجے میں زرعی خودکفالت میں بھی مدد ملے گی، ہم خوردنی تیل میں خودکفالت کے لئے اقدامات کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ زراعت پر جو پیسہ خرچ کیا جارہا ہے یہ سبسڈی نہیں بلکہ سرمایہ کاری کی نیت سے ہو رہا ہے۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ مالی سال 2022ء پاکستان کی تاریخ میں معاشی طور پر برا سال سمجھا جائے گا اس میں تمام اہداف سے روگردانی کی گئی، 5310ارب روپے کا خسارہ ہوا، نئے جی ڈی پی کے حساب سے خسارے کی شرح 9.23 جون ، 2022 فوٹو:فائل لاہور کے علاقے بستی سیدن شاہ میں کنزہ نامی خواجہ سرا پر تیزاب پھینکنے کے واقعے میں ملوث دونوں ملزموں کو گرفتار کرلیا گیا۔ صوبائی وزیر عطا تارڑ کا کہنا ہے کہ ساڑھے 4 سال میں سیف سٹی کیمروں کی بروقت مرمت نہیں کرائی گئی، واقعے میں ملوث ملزمان کے خلاف دہشت گردی کی عدالت میں ٹرائل کیے جا ئیں گے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ خواجہ سرا کنزہ کو اسپتال منتقل کر دیا گیا ہے اور ملزم کو جلد گرفتار کرلیں گے عطاتارڑ کے مطابق پنجاب حکومت کی جانب سے خواجہ سرا کو ایک لاکھ روپے امداد دی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ایسے واقعات کی روک تھام کیلئے ٹھوس اقدامات کیے جا رہے ہیں۔ وزیر اعلی حمزہ شہباز اس معاملے کی براہ راست نگرانی کررہے ہیں۔ ملزمان کو قرار واقعی سزا دی جائے گی اور اس حوالے سے حکومت پنجاب ایک مربوط حکمت عملی کے تحت صوبہ بھر میں ان جرائم پر قابو پانے کیلئے جلد اہم اعلان کرے گی۔ مزید خبریں :.کراچی ائیرپورٹ پر ایک ہی روز میں 5 پروازوں سے پرندے ٹکرا گئے پرندوں کے طیاروں سے ٹکرانے کے واقعات رپورٹ ہونے پر سول ایوی ایشن اتھارٹی اوردیگر ادارے حرکت میں آگئے ہیں جس کے پیش نظر انتظامیہ نے پرندوں کو بھگانے کے لیے پٹاخے چھوڑنے شروع کردیے جب کہ ساتھ ہی ا سپرے کرنے کے علاوہ برڈشوٹرز بھی تعینات کردیے گئے ہیں۔ وزیر ہوابازی خواجہ سعد رفیق نے طیاروں سے پرندے ٹکرانے کے واقعات کا نوٹس لیتے ہوئے لاہورائیرپورٹ پر ضلعی انتظامیہ اور متعلقہ اداروں کی میٹنگ بلائی اورپرندوں کی فوری روک تھام کرنے ہدایات جاری کیں۔ ائیرلائنز کی شکایت پر سول ایوی ایشن اتھارٹی نے صرف نوٹم جاری کر نے پر اکتفا کیا جس میں کہا گیا ہےکہ ائیر لائنز طیاروں کو پرندوں سے محفوظ رکھنے کے لیے انتظامات کریں۔ سی اےاے کے مطابق ائیرپورٹ کےقریب شادی ہالز، گوشت کی دکانیں اور کچرہ کنڈیاں پرندوں کی افزائش کا باعث بن رہی ہیں تاہم توجہ دلانے کےباوجود ضلعی انتظامیہ کچھ نہیں کررہی ہے۔ مزید خبریں :.قرارداد ڈیموکریٹک رکن کانگریس الہان عمر کی جانب سے پیش کی گئی (فوٹو فائل) واشنگٹن: بھارت میں بڑھتے اسلامو فوبیا کے واقعات، انسانی حقوق اور مذہبی آزادی کی خلاف ورزیوں پر امریکی کانگریس میں ایک مذمتی قرارداد جمع کرائی گئی ہے۔ ڈیموکریٹک رکن کانگریس الہان عمر کی جانب سے پیش کی گئی قرارداد میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ بھارت کو مذہبی آزادی پر خصوصی تشویش والے ملک کا درجہ دیا جائے۔ قرارداد میں مزید کہا گیا ہے کہ بھارت میں مسلمانوں، عیسائیوں، سکھوں، دلتوں، ٓدیواسیوں اور دیگر مذہبی و ثقافتی اقلیتوں کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ امریکی کانگریس میں اسلامو فوبیا پر سماعت 30 جون کو ہوگی، جس میں بھارتی حکمراں جماعت بی جے پی کے رہنماؤں کی جانب سے گستاخانہ بیانات کا معاملہ بھی زیر بحث آنے کا امکان ہے۔ واضح رہے کہ الہان عمر نے گزشتہ ماہ آزاد جموں و کشمیر میں کنٹرول لائن کا دورہ کیا تھا۔ قبل ازیں رواں ماہ کے آغاز پر امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن اور ان کے سفیر برائے بین الاقوامی مذہبی آزادی نے بھارت میں مذہبی آزادی کی خلاف ورزیوں کی مذمت کی تھی۔ اس سے پہلے اپریل کے آخر میں یو ایس سی آئی آر ایف کی ایک رپورٹ میں بھارت کو انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر بلیک لسٹ کرنے کی سفارش بھی کی گئی تھی۔.

08 فیصد اور پرانی جی ڈی پی کے تناسب سے 8.8 فیصد خسارہ ہوا، اس کا مطلب یہ ہے کہ ہمارے اخراجات زیادہ اور وسائل کم تھے اس لئے خرچہ پورا کرنے کے لئے قرضے لینے پڑتے ہیں۔ یہ کیسی خودمختاری اور کیسی آزادی ہے کہ اب ملک پر 20,20 ہزار ارب روپے کاقرضہ چڑھا ہو۔ عمران خان ملک کو خودمختاری اور آزادی کی طرف نہیں بلکہ غلامی کی طرف لے کر جارہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان نے ملک کو دیوالیہ ہونے کی نہج پر پہنچایا، ہم نے مشکل حالات میں حکومت سنبھالی اور ملک کو بچایا، میں خوشخبری دینا چاہتا ہوں کہ انشاء اللہ 23 کروڑ عوام کا ملک ڈیفالٹ نہیں بلکہ ترقی کی طرف سفر کرے گا۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ پٹرولیم مصنوعات پر سبسڈ ی کا خاتمہ آسان فیصلہ نہیں تھا، میں ارکان پارلیمنٹ ، سیاسی قیادت، میڈیا، تجزیہ نگاروں اور بالخصوص وزیر اعظم پاکستان اور پاکستانی عوام کا شکریہ ادا کرتا ہوں جنہوں نے اس معاملے پر حکومت کا ساتھ دیا، 40 ارب روپے میں ایک ماہ تک وفاقی حکومت چلتی ہے جبکہ صرف پٹرول پر سبسڈی کی مد میں سبسڈی کا حجم 120 ارب روپے تھا۔ اس حوالے سے میں مسلم لیگ (ن) اور اتحادی جماعتوں کا بھی شکرگزار ہوں، ان جماعتوں نے اپنی سیاسی ساکھ کی پرواہ کئے بغیر پاکستان کا سوچا۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ گزشتہ سال حسابات جاریہ کا خسارہ نہیں تھا، جاری مالی سال کے پہلے نو ماہ میں 14 ارب ڈالر کا خسارہ تھا اور 30 جون کو اس کا حجم تقریباً 17 ارب ڈالر ہوگا۔ جب ہم حکومت میں آئے تو زرمبادلہ کے ذخائر 10.3 ارب ڈالر تھے جبکہ حسابات جاریہ کا خسارہ زیادہ تھا۔ ان حالات میں آئی ایم ایف پروگرام کو بحال کرنا ضروری تھا، آئی ایم ایف کے ساتھ مذاکرات ہو رہے ہیں اور آئی ایم ایف نے بھی تسلیم کیا ہے کہ ہم نے پیشرفت کی ہے۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ نئے مالی سال کے بجٹ میں جو ٹیکس لگائے گئے ہیں وہ بالواسطہ نہیں ہیں، عام آدمی کی کھپت پر کوئی ٹیکس نہیں لگایا گیا بلکہ اس کی بجائے امیر اورصاحب ثروت افراد پر ٹیکس لگایا گیا ہے تاکہ بجٹ کا خسارہ کم کیا جاسکے۔ ہم نے وزیراعظم کے بیٹوں کی کمپنیوں پر زیادہ ٹیکس لگایا ہے، میری اپنی کمپنیوں کو 20 کروڑ روپے سے زیادہ اضافی ٹیکس دینا پڑے گا۔ ریٹیل میں 90 لاکھ سے زیادہ دکانیں ہیں، ان میں 25 سے لے کر 35 لاکھ کو ٹیکس نیٹ میں لائیں گے اور ان سے 3 ہزار سے 10 ہزار روپے تک فکس ٹیکس وصول ہوگا۔ اس سے ان دکانداروں کو بھی آسانی ہوگی۔ ملک میں جیولرز کی 30 ہزار سے زائد دکانیں ہیں جن میں سے صرف 28 رجسٹرڈ ہیں۔ 300 مربع فٹ جیولرز کی دکان پر 40 ہزار روپے کا فکس ٹیکس لگایا گیا ہے جبکہ بڑی دکانوں، جو ٹیر ۔ون میں شامل ہیں، پر 17 فیصد جی ایس ٹی کی بجائے 3 فیصد جنرل سیلز ٹیکس وصول ہوگا۔ اسی طرح وہ عام شہری سونا بیچنے پر جو 4 فیصد ودہولڈنگ ٹیکس دیتے تھے، اسے کم کرکے ایک فیصد کردیا گیا ہے۔ گھر، ریسٹوران اور کار ڈیلرز کے لئے خصوصی سکیم لا رہے ہیں، کار ڈیلرز کی تجاویز پر اس شعبے کے لئے ٹیکس عائد کریں گے۔ ٹیکس آمدن پر ہوگا اخراجات پر نہیں۔ مفتاح اسماعیل نے کہا کہ حکومت نے کوشش کی ہے کہ عام آدمی کو ریلیف دیا جائے اور ان پر بوجھ کم سے کم کیا جائے، بی آئی ایس پی کے 80 لاکھ رجسٹرڈ لوگوں کو جون میں اضافی دو ہزار روپے ماہانہ سبسڈی دی گئی ہے، اس کے علاوہ جن کی 40 ہزار روپے سے آمدنی کم ہے انہیں دو ہزار روپے ماہانہ دیئے جائیں گے۔ اس سکیم کے تحت اب تک 40 لاکھ لوگوں نے اپنی رجسٹریشن کرائی ہے۔ یوٹیلٹی سٹورز کارپوریشن پر آٹا، گھی، چینی اور دیگر اشیاء سارا سال سستا دیا جائے گا۔ اس بات کو یقینی بنایا جائے گا کہ سبسڈی ہدف کے مطابق ملے۔ موجودہ حکومت نے ملک کو ڈیفالٹ ہونے سے بچایا، ملکی تاریخ کے چار بجٹ خسارے عمران خان کے دور میں آئے، یہ وہی جماعت تھی جو ہمیں طعنے دیتے تھے، نواز شریف تینوں ادوار میں دس سال تک وزیراعظم رہے، انہوں نے جتنا قرضہ لیا اتنا عمران خان نے ساڑھے تین برسوں میں لیا ہے۔ اسی طرح انہوں نے پیپلز پارٹی کے تمام ادوار سے زیادہ قرضہ لیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کو ڈیفالٹ ہونے سے بچانا ہے تو ہمیں ٹیکس دینا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اس سال پرائمری خسارہ 1600 ارب روپے آیا ہے اگلے سال اسے 153 ارب روپے فاضل کیا جائے گا۔ اسی طرح مجموعی بجٹ خسارہ بھی کم کیا جائے گا۔ 15 کروڑ سے زیادہ آمدنی والی کمپنیوں پر ایک فیصد، 20 کروڑ روپے سے زیادہ آمدنی والی کمپنیوں کو دو فیصد، 25 کروڑ روپے سے زیادہ آمدنی والی کمپنیوں پر 3 فیصد اور 30 کروڑ سے زیادہ آمدنی والی کمپنیوں پر 10 فیصد کا سپر ٹیکس عائد ہوگا جو ایک سال کی مدت کے لئے ہے۔ 13 ایسے شعبے ہیں جن پر یہ ٹیکس عائد کیا گیا ہے ان میں سیمنٹ، شوگر، ٹیکسٹائل، بنکس، آئل اینڈ گیس، ایئرلائنز اور ایل این جی ٹرمینل شامل ہیں۔ اس سال ہمیں اس کی ضرورت ہے تاکہ ملک کو استحکام کی پٹڑی پر ڈالا جاسکے۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ رواں سال صرف بجلی کے شعبے میں 1600 ارب روپے کا نقصان ہوا ہے۔ 1100 ارب روپے براہ راست سبسڈی میں دیئے گئے جبکہ 500 ارب روپے کا گردشی قرضہ بڑھا۔ سب کو ملک بچانے کے لئے اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ عمران خان پہلے ڈیڑھ لاکھ روپے تک ٹیکس دیتا تھا لیکن توشہ خانے کی اشیاء بیچنے کے بعد ان کی آمدنی بڑھی ہے اور اب وہ 98 لاکھ روپے ٹیکس دے رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ انفارمیشن ٹیکنالوجی کے شعبہ اور برآمدات کا فروغ ہماری ترجیح ہے، اس ضمن میں آئی ٹی پر ودہولڈنگ ٹیکس اور سٹیٹمنٹ کی شرط ختم کردی گئی ہے، اسی طرح وینچر کیپٹل پر ٹیکس ہٹا دیا گیا ہے، آئل مارکیٹنگ کمپنیوں کا ٹیکس دوبارہ اعشاریہ پانچ فیصد کردیا گیا ہے۔ وہ اوورسیز پاکستانی جن کے پاس نائیکوپ ہے لیکن وہ پاکستان کے شہری نہیں ہیں، انہیں فعال ٹیکس گزاروں میں شمار کیا جائے گا۔ کیپٹل گین کی شق بحال کردی ہے۔ پلاٹوں کی آمدن پر جو ٹیکس عائد ہے ان میں سے شہداء کے خاندانوں اور زخمیوں کو استثنیٰ دیا گیا ہے۔ سیالکوٹ میں لیدر اور سرجیکل صنعت پر ودہولڈنگ ٹیکس پانچ فیصد کیا گیا ہے۔ سکن اور سرجیکل پرچیز پر ٹیکس میں سہولت دی گئی ہے۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ سینٹ کی کافی سفارشات ملی ہیں جن میں سے بیشتر کو مان لیا گیا ہے۔ فارما کی صنعت سے متعلق تجاویز آئی ہیں ان کو بھی مانیں گے اور انہیں بجٹ میں شامل کریں گے۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ وہ 30 سال قبل جب پی ایچ ڈی کرکے پاکستان آئے ، 15، 20 برسوں سے میں سیاست میں ہوں، میں نے کبھی بھی ملکی معیشت کو اتنی مشکل میں نہیں دیکھا، 2008ء میں حسابات جاریہ کے کھاتوں کا خسارہ 8.1 فیصد تھا جس پر پیپلز پارٹی کی حکومت آئی ایم ایف کے پاس چلی گئی تھی۔ 2013ء میں ہمیں فارن ایکسچینج کا مسئلہ تھا تو ہم آئی ایم ایف کے پاس چلے گئے مگر اب نئے ریکارڈ قائم ہوئے ہیں۔ سابق حکومت نے جاری مالی سال کے لئے پانچ سو ارب روپے کی سبسڈی مقرر کی تھی لیکن اسے 1500 ارب روپے تک بڑھادیا گیا۔ ایک پیسے کی سستی ایل این جی نہیں خریدی گئی، اسی طرح پٹرول کے طویل المیعاد سودے بھی نہیں ہوئے۔ سابق حکومت نے نااہلی کی وجہ سے جو مسائل چھوڑے ہیں موجودہ حکومت اسے حل کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ پٹرول اور ڈیزل کی قیمت میں اضافہ کیا گیا مگر اس کے باوجود پاکستان کی سیاسی قیادت اور پاکستانی عوام نے ہمارا ساتھ دیا۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ ٹیکسوں کے اہداف میں اضافہ کردیا گیا ہے، اب 7004 کی بجائے ٹیکسوں کا ہدف 7470 روپے کردیا گیا ہے۔ نان ٹیکس ریونیو کو 2 ہزار ارب روپے سے کم کرکے 1935 ارب کردیا گیا ہے۔ صوبوں کو اب 4373 ارب روپے دیں گے۔ ان تمام اخراجات کے بعد 4547 ارب روپے کا خسارہ ہوگا جبکہ وفاقی حکومت کا مجموعی خسارہ 3797 ارب روپے ہوگا۔ وزیر خزانہ نے بجٹ سیشن کے دوران پارلیمنٹ ہائوس میں ڈیوٹی سرانجام دینے والے اداروں جن میں پارلیمنٹ کے ملازمین، اے پی پی، ریڈیو پاکستان، پاکستان ٹیلی ویژن، سی ڈی اے اور دیگر اداروں کے ملازمین شامل ہیں، کے لئے دو بنیادی تنخواہوں کے برابر اعزازیہ کا اعلان کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس ضمن میں وزارت خزانہ متعلقہ اداروں کے ساتھ تعاون کرے گی اور اس کے لئے فنڈز فراہم ہوں گے۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ سابق فاٹا اور پاٹا میں 2023ء تک ٹیکس سے استثنیٰ دیا گیا تھا، ان علاقوں میں انکم ٹیکس کے استثنیٰ کے لئے ایک بل اس ایوان میں پیش کیا جائے گا۔ وزیر خزانہ نے بجٹ پیش کرنے میں وزیراعظم ، ارکان پارلیمنٹ، وزارت خزانہ کے حکام اور دیگر متعلقہ اداروں کا شکریہ ادا کیا متعلقہ خبریں.

مزید پڑھ:
Dunya News »
Loading news...
Failed to load news.

اتنے ٹیکس لگا کر بھی 10% زیادہ افسوس میرے خیال میں تو اس سال 100% زیادہ ٹیکس اکٹھا ہونا چاہیے تھا مگر افسوس نالائق لوگ آ گئے ہیں حکومت میں او بے غیرت کتا۔۔۔جھوٹا۔۔حرامی۔۔۔۔ Miftah ap mic per aa kar chup raha karein chamche wese hi tali baja dein ge waja ye he ke bolte hue ap chakkra jate hen hosh ur jate hein kiya bolna he bhool jate hein kabhi apne bap shebaz ko dekhte hein ke wobbad me apki class kese lein ge to chup raha karo

جھوٹا بجٹ پیش کرنے پر تمہیں پھانسی دینی چاہیے در فٹے منہ 🖐️ تم پر آور تم کو لانے والوں پر 🖐️ کتے دے بچیو اک گل تے رک جاؤ روز نواں بجٹ نلی والی سرکار

لاہور میں دوستی ختم کرنے پر خواجہ سرا پر تیزاب پھینکنے والا ملزم ساتھی سمیت گرفتارپنجاب حکومت کی جانب سے خواجہ سرا کو ایک لاکھ روپے امداد دی ہے،صوبائی وزیر عطاتارڑ

لاہور: ائیرپورٹ پر جہاز سے پرندے ٹکرانے کے واقعات پر ادارے حرکت میں آگئےانتظامیہ نے پرندوں کو بھگانے کے لیے پٹاخے چھوڑنے شروع کردیے جب کہ ساتھ ہی ا سپرے کرنے کے علاوہ برڈشوٹرز بھی تعینات کیے گئے ہیں جو گیدے جمہوری نظام سے ٹکرا رہی ہیں اس پر ملکی نظام کب حرکت میں آۓ گا؟ لاہور ائیرپورٹ پر یا بنی گالہ ۔ ایک جہاز وہاں بھی ہے

بھارت میں مذہبی آزادی کی خلاف ورزیوں پر امریکی کانگریس میں مذمتی قرارداد - ایکسپریس اردوقرار داد میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ بھارت کو مذہبی آزادی پر خصوصی تشویش والے ملک کا درجہ دیا جائے مزید پڑھیں: ExpressNews

بالی وڈ اداکارہ برقع میں ڈانس کرنے پر تنقید کی زد میں آگئیںاداکارہ نے تنقید کرنے والے صارفین کو انسٹااسٹوری کے ذریعے جواب دیا مزید پڑھیں :GeoNews Burqay ki tauheen hai yeh. Allah isko jald azaab mein mubtla krnay wala hai انشاءاللہ. Phir ye nanga sark pr zindagi guzaray gi , maout mangay gi,tab b nahi aye gi, Justin Biber ny hijaab ka mazaq urya tha concert mein, Allah ny osky face ko parallaiezd krdya hai.

ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں بہتری دیکھنے میں آئی/ فائل فوٹو گوگل سورس(ویب ڈیسک) انٹربینک میں ڈالر کی قدر میں کمی دیکھی جارہی ہے۔  بدھ کے روز کاروبار کے دوران ڈالر  کی قدر میں اتار چڑھاؤ رہا اور مجموعی طور پر ڈالر

دعا زہرا کے انٹرویوز پر پابندی کیلیے والدین کی سپریم کورٹ میں درخواست - ایکسپریس اردودعا زہرہ کے انٹرویوز پر پابندی کیلیے والدین کی سپریم کورٹ میں درخواست مزید پڑھیں: ExpressNews DuaZehra بے چارے والدین۔۔۔۔بیٹی مافیا کے پتھے چڑھ گئی افسوس 😢😢😢