امریکا: کرونا ویکسین نہ لگوانے پر اسپتال نے مریض کے ہارٹ ٹرانسپلانٹ سے انکار کردیا

28/01/2022 10:59:00 AM
امریکا: کرونا ویکسین نہ لگوانے پر اسپتال نے مریض کے ہارٹ ٹرانسپلانٹ سے انکار کردیا

امریکا: کرونا ویکسین نہ لگوانے پر اسپتال نے مریض کے ہارٹ ٹرانسپلانٹ سے انکار کردیا #arynewsurdu

امریکا: کرونا ویکسین نہ لگوانے پر اسپتال نے مریض کے ہارٹ ٹرانسپلانٹ سے انکار کردیا arynewsurdu

امریکا کے شہر بوسٹن میں دل کی پیوند کاری کے منتظر ایک مریض کو، کرونا ویکسین نہ لگوانے پر سرجری سے منع کردیا گیا۔

ان کا کہنا ہے کہ اسپتال کا عملہ میرے بیٹے پر ویکسین لگوانے کے لیے دباؤ ڈال رہے ہیں کہ اگر اس نے ویکسی نیشن نہیں کروائی تو وہ اسے ہارٹ ٹرانسپلانٹ کے منتظر مریضوں کی فہرست سے باہر نکال دیں گے۔دوسری جانب بوسٹن کے برگھم اینڈ ویمنز اسپتال کی ترجمان نے مریض کے ہارٹ ٹرانسپلانٹ سے انکار کرنے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ کسی بھی قسم کے آپریشن اور اعضا کے ٹرانسپلانٹ کے لیے کرونا ویکسی نیشن کا مکمل ہونا لازمی ہے۔

ترجمان کا مزید کہنا ہے کہ ہمارے پاس سی ڈی سی (مرکز برائے دافع امراض اور تحفظ) کی تجویز کردہ تمام ویکسین بشمول کووڈ 19 موجود ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہم ٹرانسپلانٹ کے امیدواروں میں آپریشن کو کامیاب بنانے کے ساتھ ساتھ مریض کی جلد از جلد بحالی بھی کرنا چاہتے ہیں، کیوںکہ اتنی بڑی جراحی کے بعد انسان کا مدافعتی نظام کمزور پڑ جاتا ہے۔

مزید پڑھ: ARY News Urdu »

Pukaar with Zohaib Saleem Butt | SAMAA TV | 6 Aug 2022

#SAMAATV➽ Subscribe to Samaa News ➽ https://bit.ly/2Wh8Sp8➽ Watch Samaa News Live ➽ https://bit.ly/3oUSwAPStay up-to-date on the major news making headlines ... مزید پڑھ >>

hhah

سائنو ویک ویکسین لگوانے والوں کے لیے خوشخبری، نئی تحقیقسائنو ویک لگوانے والوں کے لیے خوشخبری، نئی تحقیق ARYNewsUrdu

ہسپتال کا ویکسین نہ لگوانے والے شخص کے دل کی پیوندکاری سے انکار - BBC News اردو

ہسپتال کا ویکسین نہ لگوانے والے شخص کے دل کی پیوندکاری سے انکار - BBC News اردوہسپتال کی جانب سے محتاط انداز میں لکھے گئے بیان سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ مریض کی ہارٹ ٹرانسپلانٹ کے لیے نااہلی کی وجوہات میں کووڈ ویکسین کے علاوہ دیگر عوامل بھی شامل ہیں تاہم مریض کی پرائیوسی کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے مزید تبصرہ کرنے سے انکار کیا ہے۔ They are doctors they have to do their duties not giving orders like ministers We too, in Pakistan don't operate unvaccinateds

کرونا کیسز: راولپنڈی کے مزید 12 تعلیمی ادارے سیلکرونا کیسز رپورٹ ہونے پر راولپنڈی کے مزید 12 تعلیمی ادارے سیل کردیئے گئے، تقریباً ڈیڑھ ماہ کے دوران 49 تعلیمی ادارے سیل کئے جاچکے SamaaTV

پی ایس ایل 7: ملتان سلطانز, کراچی کنگز کے خلاف جیت کے قریبپاکستان سپر لیگ(پی ایس ایل) کے ساتویں ایڈیشن کے افتتاحی میچ میں کراچی کنگز کی جانب سے دیے گئے 125رنز کے تعاقب میں ملتان سلطانز کی بیٹنگ جاری ہے۔سلطانز کے

پی ایس ایل 7: فیشن ایبل لباس کے انتخاب پر عاطف اسلم اہلیہ کے معترف08:49 AM, 28 Jan, 2022, انٹرٹینمینٹ, کراچی: معروف گلوکار عاطف اسلم نے پاکستان سپر لیگ  کے  ساتویں ایڈیشن کے آفیشل ترانے کے لیے فیشن ایبل لباس

پاکستان میں کورونا وبا کے آغاز سے اب تک کے سب سے زیادہ کیسز ریکارڈ08:37 AM, 28 Jan, 2022, پاکستان, اسلام آباد: پاکستان میں کورونا  وائرس نے ایک بار پھر سر اٹھا لیا، وبا کے آغاز سے اب تک کے سب سے زیادہ ریکارڈ کیسز

بین الاقوامی میڈیا رپورٹ کے مطابق مریض کے والد ڈیوڈ فرگوسن کا کہنا ہے کہ ان کا 31 سالہ بیٹا موت کے دہانے پر کھڑا ہارٹ ٹرانسپلانٹ کا منتظر ہے۔ اس نے اسپتال میں کرونا ویکسی نیشن کروانے سے انکار کردیا ہئ کیوںکہ وہ اس کے بنیادی اصولوں کے خلاف ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اسپتال کا عملہ میرے بیٹے پر ویکسین لگوانے کے لیے دباؤ ڈال رہے ہیں کہ اگر اس نے ویکسی نیشن نہیں کروائی تو وہ اسے ہارٹ ٹرانسپلانٹ کے منتظر مریضوں کی فہرست سے باہر نکال دیں گے۔ دوسری جانب بوسٹن کے برگھم اینڈ ویمنز اسپتال کی ترجمان نے مریض کے ہارٹ ٹرانسپلانٹ سے انکار کرنے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ کسی بھی قسم کے آپریشن اور اعضا کے ٹرانسپلانٹ کے لیے کرونا ویکسی نیشن کا مکمل ہونا لازمی ہے۔ ترجمان کا مزید کہنا ہے کہ ہمارے پاس سی ڈی سی (مرکز برائے دافع امراض اور تحفظ) کی تجویز کردہ تمام ویکسین بشمول کووڈ 19 موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم ٹرانسپلانٹ کے امیدواروں میں آپریشن کو کامیاب بنانے کے ساتھ ساتھ مریض کی جلد از جلد بحالی بھی کرنا چاہتے ہیں، کیوںکہ اتنی بڑی جراحی کے بعد انسان کا مدافعتی نظام کمزور پڑ جاتا ہے۔ دوسری جانب نیویارک یونیورسٹی کے طبی ماہر آرتھر کیپلین نے میڈیا کو بتایا کہ کسی بھی ٹرانسپلانٹ میں آپ کا مدافعتی نظام ختم ہوجاتا ہے اور پھر کرونا وائرس آپ کو اپنا نشانہ بنا سکتا ہے، یہی وجہ ہے کہ غیر ویکسین شدہ افراد کو ٹرانسپلانٹ کے لیے منع کیا جارہا ہے۔ .ویب ڈیسک 26 جنوری 2022 ایک نئی تحقیق میں ثابت ہوا ہے کہ سائنوویک ویکسین استعمال کرنے والے افراد میں دیگر کمپنیوں کے بوسٹر ڈوز اومیکرون سے زیادہ تحفظ فراہم کرتے ہیں ۔ برطانیہ اور برازیل کی مشترکہ طبی تحقیق میں انکشاف ہوا ہے کہ سائنوویک بائیوٹیک لمیٹیڈ کی تیار کردہ کووڈ 19 ویکسین کی 2 خوراکیں استعمال کرنے والے افراد اگر بوسٹر ڈوز کے لیے کسی مختلف کمپنی کا انتخاب کریں تو انہیں کورونا کی نئی قسم اومیکرون سے زیادہ تحفظ ملتا ہے۔ اس تحقیق میں سائنو ویک کی 2 خوراکیں استعمال کرنے والے 18 سال سے زائد عمر کے 1240 ان افراد پر جنہیں ویکسینیشن کرائے 6 ماہ سے زائد عرصہ ہوچکا تھا کو مختلف کمپنیوں کی ویکسینز کے بوسٹر ڈوز کے امتزاج کی آزمائش کی گئی۔ تحقیق میں جن افراد کو سائنوویک کی تیسری خوراک بوسٹر ڈوز کے طور پر استعمال کرائی گئی تو 28 دن بعد اینٹی باڈیز کی سطح بلند تو ہوئی مگر دیگر افراد کو فائزر، بائیو این ٹیک، ایسٹرازینیکا یا جانسن اینڈ جانسن ویکسین کا بوسٹر ڈوز لگایا گیا تو انمیں اومیکرون سے زیادہ ٹھوس تحفظ ملا۔ تحقیق میں بتایا گیا کہ سائنو ویک ویکسین کی 2 خوراکوں کے استعمال کے 6 ماہ بعد فائزر ویکسین کے بوسٹر ڈوز سے اینٹی باڈیز کی سطح میں152 گنا اضافہ ہوا جو دیگر کے مقابلے میں سب سے زیادہ تھا جب کہ سائنو ویک ویکسین کی تیسری خوراک کے استعمال سے اینٹی باڈیز کی سطح میں 12 گنا اضافہ ہوا۔ تحقیق کے نتائج کے تجزیے کے بعد محققین کا کہنا ہے کہ اس ڈیٹا سے غریب اور متوسط آمدنی والے ممالک کو رہنمائی مل سکے گی کہ وہ کس زیادہ بہتر اور کم قیمت بوسٹر پروگرامز پر عمل کرسکتے ہیں تحقیقی نتائج میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ سائنو ویک استعمال کرنے والے افراد میں ایسٹرازینیکا، فائزر یا جانسن اینڈ جانسن کے بوسٹر ڈوز سے اومیکرون کو ناکارہ بنانے کی صلاحیت پیدا ہوئی جب کہ سائنو ویک کی تیسری خوراک استعمال کرنے والے ایک تہائی افراد میں یہ صلاحیت پائی گئی۔ تحقیق میں یہ بھی پتہ چلا کہ سائنو ویک ویکسین کی 2خوراکوں کے استعمال کے بعد تمام بوسٹر ڈوز محفوظ ثابت ہوئے صرف 3 افراد کو سنگین مضر اثرات کا سامنا کرنا پڑا لیکن وہ بھی مکمل صحتیاب ہوگئے، تحقیق میں ٹی سیل امیونٹی کی جانچ پڑتال نہیں کی گئی تھی جو بیماری کی سنگین شدت سے تحفظ کا عندیہ دیتی اس تحقیق کے نتائج طبی جریدے دی لائسیٹ میں شائع ہوئے۔.کووڈ: امریکہ میں ایک ہسپتال نے کورونا ویکیسن نہ لگوانے والے شخص کے دل کی پیوندکاری سے انکار کر دیا 35 منٹ قبل ،تصویر کا ذریعہ CBS امریکی شہر بوسٹن کے ایک ہسپتال نے ایک مریض کا ہارٹ ٹرانسپلانٹ کرنے سے صرف اس وجہ سے انکار کر دیا کیونکہ اس نے کووڈ کے خلاف تحفظ کی ویکیسن نہیں لگوائی ہوئی تھی۔ مریض کے والد ڈیوڈ کا کہنا ہے کہ 31 برس کے ڈی جے فرگوسن کو دل کے ٹرانسپلانٹ کی اشد ضرورت ہے مگر بوسٹن کے بیگھم اینڈ وویمن ہسپتال نے انھیں اپنی ہارٹ ٹرانسپلانٹ یعنی دل کی پیوند کاری کے فہرست سے نکال دیا ہے۔ مریض کے والد ڈیوڈ کا کہنا ہے کہ کووڈ ویکسین ان کے بیٹے کے بنیادی اصولوں کے خلاف تھی اور وہ اس پر یقین نہیں رکھتے تھے اس لیے انھوں نے یہ ویکسین نہیں لگوائی تھی جبکہ ہسپتال کا کہنا ہے کہ وہ صرف اپنی پالیسی پر عمل کر رہے ہیں۔ بریگھم اینڈ وویمن ہسپتال نے بی بی سی کو بتایا کہ ’انسانی اعضا کی قلت کے باعث ہم یہ یقینی بنانے کی ہر ممکن کوشش کرتے ہیں کہ جس مریض کی بھی اعضا کی پیوند کاری کی جائے اس کے زندہ رہنے یا بچنے کے زیادہ سے زیادہ امکانات ہوں۔‘ ہسپتال کے ترجمان کا کہنا تھا کہ ’ٹرانسپلانٹ کے خواہشمند مریضوں کے لیے کووڈ 19 ویکسین اور ان کی طرز زندگی کے بہتر رویے کی ضرورت ہے تاکہ کامیاب آپریشن کو ممکن بنایا جا سکے۔ ہسپتال کی جانب سے محتاط انداز میں لکھے گئے بیان سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ مریض کے دل کی پیوندکاری کے لیے نااہلی کی وجوہات میں کووڈ ویکسین کے علاوہ دیگر عوامل بھی شامل ہیں تاہم اس نے مریض کی پرائیوسی کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے مزید تبصرہ کرنے سے انکار کر دیا۔ ہسپتال کا مزید کہنا تھا کہ تقریباً ایک لاکھ ایسے مریض ہیں جو انسانی اعضا کی پیوند کاری کے لیے اعضا کی فراہمی کے منتظر ہیں تاہم ان اعضا کی قلت کے باعث ممکنہ طور پر اگلے پانچ سال تک انھیں انتظار کرنا پڑ سکتا ہے۔ مالی مدد کی ویب سائٹ ’گو فنڈ می‘ کے مطابق فرگوسن گذشتہ برس نومبر میں تھینکس گیونگ ڈے سے ہسپتال میں داخل ہیں اور انھیں دل کی شریانوں میں مسائل کا سامنا ہے جس سے ان کے پھیپھڑوں میں خون اور پانی بھر جاتا ہے۔ فرگوسن کے لیے عطیات جمع کرنے والے آرگنائزر کا کہنا ہے کہ فرگوسن نے کووڈ ویکسین سے متعلق خدشات کا اظہار اس لیے کیا تھا کیونکہ انھیں دل میں سوزش کا خطرہ ہے اور یہ اس ویکسین کا ایک ممکنہ ردعمل یا نقصان ہو سکتا تھا، جس کے متعلق امریکی سینٹر فار ڈیزیز کنٹرول اینڈ پریونشن کا کہنا ہے کہ اس کے امکانات بہت ہی کم اور عارضی ہیں تاہم یہ دل کی صحت اور حالت کو مدنظر رکھتے ہوئے کمزور دل کے مریضوں کے لیے خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔ امریکی سینٹر فار ڈیزیز کنٹرول نے ایسے مریضوں، جنھیں اعضا کی پیوند کاری کی ضرورت ہے اور ان کے قریبی جاننے والوں سے کووڈ ویکیسن اور بوسٹر خوراکیں لگوانے کی حوصلہ افزائی کی ہے۔ ،تصویر کا ذریعہ Science Photo Library نیویارک یونیورسٹی کے گراسمین سکول آف میڈیسن کے شعبہ میڈیکل ایتھکس کے سربراہ ڈاکٹر آرتھر کپلان نے سی بی ایس نیوز کو بتایا کہ اعضا کی پیوند کاری یا ٹرانسپلانٹ کے بعد مریض کا مدافعاتی نظام مکمل طور بند ہوتا یا بہت زیادہ کمزور ہوتا ہے اور ایسے میں عام نزلہ زکام ان کے لیے جان لیوا ثابت ہو سکتا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ’انسانی اعضا کی پہلے ہی بہت قلت ہے اور یہ ہم کسی ایسے شخص کو نہیں لگا سکتے جس کے زندہ رہنے کے امکانات بہت کم ہوں جبکہ اس کے برعکس دوسرے لوگ ویکسین شدہ ہیں اور ان کے زندہ رہنے کے امکانات زیادہ ہیں۔‘ یہ بھی پڑھیے.SAMAA | - Posted: Jan 27, 2022 | Last Updated: 11 hours ago SAMAA | TV Posted: Jan 27, 2022 | Last Updated: 11 hours ago کرونا کیسز رپورٹ ہونے پر راولپنڈی کے مزید 12 تعلیمی ادارے سیل کردیئے گئے، تقریباً ڈیڑھ ماہ کے دوران 49 تعلیمی ادارے سیل کئے جاچکے ہیں۔ محکمہ صحت پنجاب کے مطابق راولپنڈی کے 12 تعلیمی اداروں میں 99 طلبہ، اساتذہ اور اسٹاف میں کرونا وائرس کی تصدیق ہوگئی، جس کے بعد یہ تمام تعلیمی ادارے سیل کردیئے گئے۔ محکمہ صحت کا کہنا ہے کہ سیل کئے گئے تعلیمی اداروں میں 9 اسکولز، 2 کالجز اور ایک یونیورسٹی بھی شامل ہے، زرعی یونیورسٹی میں 11 طلبہ میں کرونا وائرس کی تصدیق ہوئی ہے۔ رپورٹ کے مطابق کرونا کیسز کے باعث راولپنڈی میں 22 دسمبر سے 27 جنوری تک 49 سے زائد تعلیمی ادارے سیل کئے جاچکے ہیں۔ واضح رہے کہ این سی او سی کی ہدایت پر زیادہ کیسز والے شہروں کے تعلیمی اداروں میں کرونا ٹیسٹ کئے جارہے ہیں جبکہ طلبہ کی ویکسینیشن کا عمل بھی جاری ہے۔ تازہ ترین.