آندھرا پردیش میں ریت کی قلت پر سیاست

انڈیا کی ریاست آندھرا پردیش میں ریت کی قلت سے تعمیراتی کام متاثر

17.11.2019

انڈیا کی ریاست آندھرا پردیش میں ریت کی قلت سے تعمیراتی کام متاثر

آندھرا پردیش میں گذشتہ پانچ ماہ کے دوران ریت کی کمی سے ہزاروں افراد بے روزگار ہو گئے ہیں جبکہ حکومت اور حزب اختلاف اس قلت کی ذمہ داری ایک دوسرے پر عائد کر رہے ہیں۔

متعدد دریاؤں کے باعث آندھرا پردیش میں ریت کی بڑی مقدار موجود ہے۔ انڈیا کی وسیع تعمیراتی صنعت کے لیے اس ریت کو کانوں یا دریاؤں سے نکالا جاتا ہے۔ بین الاقوامی اکاؤنٹنگ کمپنی کے پی ایم جی کے مطابق سنہ 2025 تک انڈیا کے ریئل سٹیٹ اور تعمیراتی شعبے 650 ارب ڈالر کی مالیت تک بڑھ جائیں گے۔

اس سے وہ تمام افراد متاثر ہو رہے ہیں جو روزگار کے لیے ریاست کی تعمیراتی صنعت پر انحصار کرتے ہیں۔ سرکاری اندازوں کے مطابق یہ تعداد تقریباً 50 لاکھ ہے۔

یومیہ اجرت پر کام کرنے والے ایک مزدور بھولکشمی کہتے ہیں ’چار مہینوں سے کوئی ریت نہیں ہے اور نہ ہی کوئی کام ہے۔ کیا آپ کو معلوم ہے کہ یہ کتنا مشکل ہے؟ ہم کرایہ ادا نہیں کر سکتے اور سڑک پر آنے والے ہیں۔‘

دوسری وجہ یہ ہے کہ بینکوں اور ایسے منصوبے بنانے والی دیگر کمپنیوں کی بیلنس شیٹس پر بوجھ آ گیا ہے۔ اس سے تعمیرات رک گئی ہیں۔

ریت کی قلت سے اس کی قیمت میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ حکومت نے فی ٹن ریت کی قیمت 375 روپے (پانچ ڈالر) رکھی ہے لیکن صنعت کے اندرونی معاملات سے واقف ایک شخص نے بتایا ہے کہ بلیک مارکیٹ میں اس کی قیمت 55 ڈالر فی ٹن تک پہنچ گئی ہے۔

جگن موہن ریڈی اور ان کی حکومت یہ تسلیم کر چکے ہیں کہ ریاست میں ریت کی قلت ہے لیکن وہ ساتھ میں یہ بھی کہتے ہیں کہ اس کی وجہ مون سون کی شدید بارشیں ہیں جن سے ریاست کے دریاؤں میں پانی کی سطح بڑھ گئی ہے۔ اس لیے گذشتہ کچھ مہینوں کے دوران ریت نکالنا مشکل ہو گیا ہے۔

لیکن جگن موہن ریڈی کی حکومت نے ریت نکالنے کا ایک مرکزی قانون بنایا ہے جسے ایک حکومتی ادارے کی مدد سے چلایا جائے گا۔ اس کے مطابق ریاست میں کچھ مراکز قائم کیے گئے ہیں جہاں ریت فروخت کی جائے گی۔

گذشتہ حکومت، جس کی سربراہی چندرا بابو نائڈو اور تیلگو دیشم پارٹی نے کی، اپنی ’مفت ریت‘ پالیسی کی بنا پر تنقید کی زد میں رہی تھی اور کرپشن اور ریت کی غیر قانونی کان کنی کے الزامات نے جنم لیا تھا۔

ٹریبیونل میں یہ بھی بتایا گیا کہ ریت بلیک مارکیٹ میں زیادہ قیمت پر کیسے فروخت ہو رہی ہے۔ حالانکہ یہ ایک قدرتی ویسلہ ہے جسے حکومت نے لوگوں کے لیے مفت فراہم کر رکھا ہے۔

مزید پڑھ: BBC News اردو

میڈیکل بورڈ کی آصف زرداری کو ہسپتال میں رکھنے کی تجویز - Pakistan - Dawn News

میڈیکل بورڈ کی آصف زرداری کو ہسپتال میں رکھنے کی تجویز - Pakistan - Dawn News

سندھ ہائی کورٹ: سینیئر پی پی رہنما کی دو بیویوں، بچوں کی ضمانت میں توسیعسندھ ہائی کورٹ نے آمدن سے زائد اثاثوں کے کیس میں پی پی رہنما خورشید شاہ کی 2 بیویوں، بیٹے، داماد کی عبوری ضمانت میں 16 جنوری تک توسیع کر دی۔

نوجوان ملکی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں، وزیراعظم | Abb Takk News

سعودی عرب میں بھی تبدیلی کی فضا چل پڑی، ایک ریال کے نوٹ کی واپسی شروعریاض (ویب ڈیسک) سعودی مالیاتی اتھارٹی ساما نے سکوں کو رائج کرنے کے لیے ایک ریال مالیت کے

پاکستان نے فلسطین میں اسرائیلی فوج کی بمباری کی مذمت کر دیپاکستان نے مقبوضہ فلسطین میں نہتے شہریوں پر اسرائیلی افواج کی جانب سے بم باری کی مذمت کر دی ہے۔

تبصرہ لکھیں

Thank you for your comment.
Please try again later.

تازہ ترین خبریں

خبریں

17 نومبر 2019, اتوار خبریں

پچھلا خبر

YouTube

اگلا خبر

مریم اورنگزیب: ’نواز شریف کی روانگی کی تیاریاں شروع‘